۸۳ ۔ عن عبید اللہ بن عبد اللہ بن عمیر رضی اللہ تعالیٰ عنہ قال : قال رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم :أوَّلُ مَاحَدَثَتِ الْأصْنَامُ عَلیٰ عَہْدِ نُوْحٍ وَ کَانَتْ الْأبْنَائُ تَبِرُّالْآبَائُ فَمَاتَ رَجُلٌ مِنْہُمْ فَجَزَعَ عَلَیْہِ ابْنُہٗ فَجَعَلَ لَایَصْبُرْ عَنْہٗ فَاتَّخَذَ مِثَالاً عَلیٰ صُوْرَتِہٖ فَکُلَّمَا اشْتَاقَ اِلَیْہِ نَظَرَہٗ ثُمَّ مَاتَ فَفُعِلَ بِہٖ کَمَا فَعَلَ، ثُمَّ تَتَابَعُوْا عَلیٰ ذَلِکَ الآبَائِ فَقَالَ الْاَبْنَائُ مَا اتَّخَذَ ہٰذِہٖ آبَائُ نَااِلَّا اَنّہَا کَانَتْ اٰلِہَتُمْ فَعَبَدُوْہَا۔اعالی الافادہ ص ۱۳

حضرت عبید اللہ بن عبداللہ بن عمیر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : سب سے پہلے بت حضرت نوح علیہ الصلوۃ والسلام کے زمانہ میں ایجاد ہوئے ۔اس زمانہ میں بیٹے اپنے آباء و اجداد کے ساتھ حسن سلوک سے پیش آتے ۔ایک مرتبہ ایک شخص کا انتقال ہوا ۔بیٹے نے جزع فزع کی اور صبر نہیں کرسکا تو اس نے باپ کی صورت بناکر رکھ لی ۔جب والد کو دیکھنا چاہتا اس تمثال کو دیکھ لیتا ۔پھر جب یہ مرا اسکی اولاد نے بھی ایسا ہی کیا ۔ یونہی سلسلہ چل پڑا اور اس درمیان کافی آباء واجداد مرگئے ۔چنانچہ بعد کی نسل نے کہا : ہمارے آباء و اجداد نے ان کے مجسمے اسی لئے بنائے تھے کہ یہ ان کے معبود تھے تو ان سب نے انکی پوجا شروع کردی۔ ۱۲م

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۸۳۔ یہ حدیث مجھے نہیں ملی