(۲) مشرک سے میل جول منع ہے

۸۴۔ عن جابر بن عبد اللہ رضی اللہ تعالیٰ عنہما قال : نَھَی النَّبِیُّ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالیَ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ اَنْ یُّصَافَحَ الْمُشْرِکُوْنَ اَوْ یُکَنَّوْ اَوْ یُرَحَّبَ بِہِمْ ۔ فتاوی رضویہ ۶/۱۰

حضرت جابر بن عبد اللہ رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے کہ نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے منع فرمایا کہ کسی مشرک سے ہاتھ ملائیں ،اسے کنیت سے ذکرکریں ،یا اسے آتے وقت مرحبا کہیں ۔

]۱[ امام احمد رضا محدث بریلوی قدس سرہ فرماتے ہیں

یہ ادنی درجہ تکریم کا ہے کہ نام لیکر نہ پکارا فلاں کا باپ کہا ،یا آتے وقت جگہ دینے کو آئیے کہا ۔اللہ اکبر حدیث اس سے بھی منع فرماتی ہے۔ ائمہ دین ذمی کافر کی نسبت وہ احکام تحقیر و تذلیل فرماتے ہیں کہ اسے محرر بنانا حرام،کوئی ایسا کام سپرد کرنا جس سے مسلمانوں میں اسکی بڑائی ہو حرام ،اسکی تعظیم حرام ،مسلمان کھڑا ہو تو اسے بیٹھنے کی اجازت نہیں ،بیماری وغیرہ ناچاری کے باعث سواری پر ہو تو جہاں مسلمانوں کا مجمع آئے فورا ًاتر پڑے حتی کہ اگر ذمی کو تعظیما سلام کرے گا کافر ہوجائیگا کہ کافر کی تعظیم کفر ہے ۔

فتاوی امام ظہیر الدین اشباہ اور در مختار وغیرہا میں ہے ۔

لو قال لمجوسی یا استاذ تبجیلا کفر۔

اگر مجوسی کو اے استاذ تعظیما کہا کافرہوگیا ۔

المحجۃ المؤتمنہ ص ۸۵

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۸۴۔ حلیۃ الاولیاء لابی نعیم ، ۹/ ۲۳۶ ٭ ا لجامع الصغیر للسیوطی، ۲/۵۶۸

فتاوی ظہیریہ ، الاشبا و النظائر، تنویرا لابصار، اور در مختار وغیرہا معتمدات اسفار میں ہے ۔

لو سلم علی الذمی تبجیلا یکفر۔ لان تبجیل الکافر کفر ۔