أَعـوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْـطانِ الرَّجيـم

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

بَلۡ تَاۡتِيۡهِمۡ بَغۡتَةً فَتَبۡهَتُهُمۡ فَلَا يَسۡتَطِيۡعُوۡنَ رَدَّهَا وَلَا هُمۡ يُنۡظَرُوۡنَ ۞

ترجمہ:

بلکہ وہ قیامت ان کے پاس اچانک ہی آجائے گی اور ان کو حیران کر دے گی اور وہ اس کو مسترد کرنے کی طاقت نہیں رکھیں گے اور نہ انہیں مہلت دی جائے گی

پھر اللہ تعالیٰ نے اس عذاب کی شدت کو بیان کرتے ہوئے فرمایا کہ اس عذاب کی آمد کا وقت معلوم نہیں ہے بلکہ ان پر وہ عذاب اچانک ہی آجائے گا، وہ اس عذاب کے منتظر ہوں گے اور نہ وہ عذاب ان کے وہم و گمان میں ہوگا۔ وہ اس عذاب کے نزول کے قوت حیرت زدہ ہوں گے، اس عذاب کو دور کرنے کا کوئی حیلہ ان کی دسترس میں ہوگا اور نہ کوئی ان کی مدد کے لئے پہنچے گا نہ ان کو توبہ کرنے یا معذرت کرنے کی مہلت دی جائے گی۔

القرآن – سورۃ نمبر 21 الأنبياء آیت نمبر 40