زمین ساکن ہے یا متحرک؟

✍شان اسلم

یکم جون 2020ء بروز پیر بوقت رات 12:02

💎قارئین کرام! سب سے پہلےیہ سمجھ لیجئیے کہ اس مسئلہ کا تعلق کفر و اسلام سے ہرگز نہیں ۔

💎سائنسدانوں میں یہ مسئلہ اختلافی ہے اگرچہ سائنس سے تعلق رکھنے والوں کی اکثریت زمین کے متحرک ہونے کی قائل ہے لیکن اس کے مقابل ناصرف مسلمان بلکہ غیر مسلم سائنسدانوں کی آراء بھی پائی جاتی ہیں جو زمین کو ساکن ثابت کرتے ہیں۔

💎امام احمد رضا خان بریلوی رحمة اللہ علیه کا یہ خاصہ ہے کہ آپ وہ واحد مذہبی و سائنسی شخصیت ہیں جنہوں نے زمین کے ساکن ہونے کا استدلال نہ صرف قرآن بلکہ فزکس و ریاضیات اور دیگر سائنسی اصولوں کی بنیاد پر زمین کیا

🍁(اےکاش!کوئی سیدی امام احمد رضا کی تحقیق کو جدید دور کے مطابق آسان اردو و انگلش میں عوام کے سامنے پیش کر دے تاکہ عوام بھی ان کی تحقیق سے مستفید ہو سکے)🍁

💎اہل سنت ہی کہ ہاں دوسرا موقف بھی پایا جاتا ہے جسے محقق اہل سنت علامہ غلام رسول سعیدی رحمة اللہ عليه نے جدید و معروف سائنسی نقطہ نظر کی تائید پر اپنی تفسیر تبیان القرآن میں پیش فرمایا ہے۔

💎نتیجہ کلام یہ ہے کہ زمین کے ساکن و متحرک ہونے کا استدلال اسلام و سائنس دونوں میں اختلافی ہے۔لہذا اس میں عوام کو پریشان نہیں ہونا چاہئیے کہ وہ کونسا موقف اپنائے کیونکہ یہ کوئی ایسا مسئلہ نہیں جس پر آپ کی مسلمانی کا انحصار ہو بلکہ فقیر کہتا ہے کہ عام عوام کے زمین کو ساکن ماننے یا نہ ماننے کا کوئی اعتبار نہیں کہ ان کا اس مسئلہ سے کونسا براہ راست کوئی تعلق ہے یا کونسی ان کی کوئی سائنسی تحقیق پھنسی پڑی ہے کہ اگر موقف غلط ہوگیا تو ان کی کوئی تجرباتی محنت برباد ہو جائے گی۔