(۴) کفار و مشرکین کی معیت جائز نہیں

۸۸۔ عن قیس بن أبی حازم رضی اللہ تعالیٰ عنہ قال : قال رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم :اَلاَ اِنِّی بَرِیٌٔ مِّنْ کُلِّ مُسِْلِمٍ مَعَ مُشْرِکٍ ، قَالُوْا : لِمَ یَا رَسُولَ اللّٰہِ ! قَالَ : لَا تَرَایَا نَارہُمَا ۔

حضرت قیس بن ابی حازم رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: میں بیزار ہوں اس مسلمان سے جو مشرکوں کے ساتھ ہو ،مسلمان اور کافر کی آگ آمنے سامنے نہیں ہونی چاہیئے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۸۷۔ المسند لاحمد بن حنبل ، ۳/۹۹ ٭ الدر المنثور للسیوطی، ۲/۶۶

کنز العمال للمتقی، ۴۳۷۵۹، ۱۶/۲۱ ٭ تاریخ بغداد للخطیب ۰ ۱/۲۷۸

التاریخ الکبیرللبخاری، ۱/۴۵۵ ٭ شرح معانی الآثار للطحاوی، ۲۶۳

السنن الکبری للبیہقی، ۱۰/۲۷ ٭

۸۸۔ الجامع للترمذی ، ابو اب السیر ، ۱/۱۹۳ ٭ السنن للنسائی ، القیامۃ ، ۲/۲۱۲

المعجم الکبیر للطبرانی، ۴/۱۳۴ ٭ السنن الکبری للبیہقی ۸/۱۳۱

کنز العمال للمتقی، ۱۱۰۳۱، ۴/۳۸۴ ٭ التفسیر لابن کثیر ، ۴/۴۱

التفسیر للقرطبی، ۸/۶۳ ٭ شرح السنۃ للبغوی، ۱۰/۳۷۳

مجمع الزوائد للہیثمی، ۵/۳۵۳ ٭