اجرام فلکی کی تقسیم کاری میں ہمارا اور جدید سائنس کا فرق ہے

ہمارانظریہ

1
ہم زمین کو ساکن اور گول (sphere)مانتے ہیں
سیارہ نہیں مانتے۔

2
ہم موسموں کی تبدیلی سورج کی دائرة البروج میں
سالانہ حرکت کو قرار دیتے ہیں۔

3
ہم چاند سورج، ستاروں اور سیاروں کو اپنے اپنے
فلکوں میں مانتے ہیں، بی فلک بھی متحرک ہیں اوران |
کے اندر یہ اجرام فلکی بھی متحرک ہیں۔ ہمارے
نزدیک چاند سے لے کر آخری ستارے تک تمام
فلکوں کو فلک الافلاک گھیرے ہوئے ہے اور فلک 
الافلاک زمین کے گرد چوبیس گھنٹے میں اپنا چکر پورا
کرتا ہے جس کی وجہ سے اجرام فلکی کا طلوع و غروب
ہوتا ہے۔ فلکوں سے اوپرساکن آسمان ہیں۔

جدید سائنس کا نظریہ

1
جدید سائنس زمین کو سیاره مانتی ہے اور اپنے محور کے
گرداور سورج کے گرد متحرک مانتی ہے۔

2
جدید سائنس موسموں کی تبدیلی کی وجہ زمین کی سورج
کے گردسالانہ حرکت کو بتاتی ہے۔

3
جدید سائنس فلکوں اور آسمانوں کے وجود کی قائل 
نہیں ، زمین کو سیارہ ہوتی ہے اور اس نظام شمسی کے
تمام سیاروں کو سورج کے گرد متحرک مانتی ہے، اس
کے نزدیک زمین اپنے محور کے گرد گھومتی ہے جس کی
وجہ سے اجرام فلکی کا طلوع و غروب مشاہدہ ہوتا
ہے۔ نئی سائنسی تحقیق کے مطابق یہ نظام شمسی اور
ستارے بھی متحرک ہے۔