۹۳۔ عن اُم المؤمنین عائشۃ الصدیقۃ رضی اللہ تعالیٰ عنہا قالت :اِن رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم خَرَجَ اِلیٰ بَدْرٍ فَتَبِعَہٗ رَجُلٌ مِنْ الْمُشْرِکِیْنَ فَلَحِقَہٗ عِنْدَ الْجَمْرَۃِ فَقَالَ: اِنِّی اَرَدْتُ اَنْ اَتْبَعَکَ وَ اُصِیْبَ مَعَکَ ، قَالَ : تُومِنُ بِاللّٰہِ وَ رَسُوْلِہٖ ؟ قَالَ:لَا،قَالَ: اِرْجِعْ ،فَلَنْ نَسْتَعِیْنَ بِمُشْرِکٍ، قَالَ:ثُمَّ لَحِقَہٗ عِنْدَ الشَّجَرَۃِ ، فَفَرِحَ بِذٰلِکَ اَصْحَابُ رَسُوْلِ اللّٰہِ صَلی اللّٰہ تَعَالی عَلَیْہِ وَسَلَّمَ وَ کَانَ لَہٗ قُوَّۃٌ وَ جَلدٌ۔ فَقالَ : جِئْتُ لِاَ تْبَعَکَ وَ اُصِیْبَ مَعَکَ ، قَالَ : تُوْمِنُ بَاللّٰہِ وَرَسُوْلِہٖ؟ قَالَ: لَا ، قَالَ : اِرْجِعْ ، فَلَنْ اَسْتَعِیْنَ بِمُشْرِکٍ ،قَالَ: ثُمَّ لَحِقَہٗ حِیْنَ ظَہَرَ عَلیٰ الْبَیْدَائِ، فَقالَ لَہٗ: مِثلَ ذٰلِک ، قَالَ: تُؤ مِنُ بَاللّٰہِ وَرَسُولہٖ ؟ قَالَ: نَعَمْ، قَالَ : فَخرج ۔

ام المؤمنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روایت ہے کہ جب حضور انور صلی اللہ تعالی علیہ وسلم بدر کو تشریف لے چلے ، سنگستان و برہ(کہ مدینہ طیبہ سے چار میل ہے )ایک شخص جسکی جرأت و بہادری مشہور تھی حاضر ہوا ۔ صحابہ کرام اسے دیکھ کر خوش ہوئے ۔اس نے عرض کی: میں اس لئے حاضر ہوا ہوںکہ حضور کے ہمراہ رکاب رہوں اور قریش سے جو مال ہاتھ لگے اس میں سے میں بھی پائوں۔حضور اقدس صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے فرمایا :کیا تو اللہ و رسول پر ایمان رکھتا ہے؟ کہا:نہ ،فرمایا :پلٹ جا ، ہم ہرگز کسی مشرک سے مدد نہ چاہیں گے ۔پھر حضور تشریف لے چلے۔جب ذوالحلیفہ پہونچے (کہ مدینہ طیبہ سے چھہ میل ہے ) وہ پھر حاضر ہوا ،صحابہ کرام خوش ہوئے کہ واپس آیا ، وہی پہلی بات عرض کی : حضور نے وہی جواب ارشادفرمایا :کہ کیا تو اللہ و رسول پر ایمان رکھتا ہے ؟کہا : نہ، فرمایا :واپس جا،ہم ہرگز کسی مشرک سے مدد نہ لیںگے ۔ پھر حضور تشریف لے چلے ۔جب وادی میں پہونچے وہ پھر آیا ۔صحابہ کرام خوش ہوئے ۔اس نے وہی عرض کی :حضور نے فرمایا: کیاتو اللہ و رسول پرایمان لاتا ہے؟عرض کیا :ہاں، فرمایا:ہاں اب چلو۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۹۳۔ السنن لابن ماجہ ، الجہاد ، ۲/۲۰۸ ٭ المسند لاحمد بن حنبل، ۷/۲۱۴

نصب الرایۃ ، للزیلعی ، ۳/۴۲۴ ٭ اتحاف السادۃ ، للزیلعی، ۷/۱۰۰