۱۰۵۔ عن عبد اللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ قال : أہدی الی النبی صلی اللہ تعالی علیہ وسلم بغلۃ أہدا ہالہ کسری فرکبہابحبل من شعر ثم أردفنی خلفہ ثم ساربی ملیا ثم التفت فقال : یَا غُلَامُ! قلت : لبیک یا رسول اللہ ! قال : اِحْفَظِ اللّٰہَ یَحْفَظْکَ،اِحْفَظِ اللّٰہَ تَجِدْہٗ أمَامَکَ، تَعَرَّفْ اِلیَ اللّٰہِ فِی الرُّخَائِ یُعَرِّفْکَ فِی الشِّدَّۃِ، وَ اِذَا سَألْتَ فَاسْئَلِ اللّٰہَ، وَ اِذَا اِسْتَعَنْتَ فَاسْتَعِنْ بِاللّٰہِ، قَدْ مَضیَ الْقَلَمُ بِمَا ہُوَ کَائِنٌ فَلَوجَہَدَ النَّاسُ اَنْ یَّنْفَعُوْکَ بِمَا لَمْ یَقْضِہٗ اللّٰہُ لَکَ لَمْ یَقْدِرُوْا عَلَیْہِ ،وَ لَوْ جَہَدَ النَّاسُ اَنْ یَّضُرُّوْکَ بِمَا لَمْ یَکْتُبْہٗ اللّٰہُ عَلَیْکَ لَمْ یَقْدِرُوْا عَلَیْہِ، فَاِنِ اسْتَطَعْتَ اَنْ تَعْمَلَ بِالصَّبْرِ مَعَ الْیَقِیْنِ فَافْعَلْ، فَاِنْ لَمْ تَسْتَطِعْ فَاصْبِرْ فَاِنَّ فِی الصَّبْرِ عَلیٰ مَا تَکْرَہُہٗ خَیْرًا کَثِیْرًا ، وَاعْلَمْ اَنَّ مَعَ الصَّبْرِ النّصْرَ، وَاعْلَمْ اَنَّ مَعَ الْکَرْبِ الْفَرْجَ ، وَاعْلَمْ اَنَّ مَعَ الْعُسْرِ الْیُسْرَ ۔ فتاوی رضویہ حصۃ اول ۹/۹۴

حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم کی خدمت میں وہ خچر پیش کیا گیا جو حضور کو کسری نے ہدیہ میں بھیجا تھا ۔ حضور اس پر سوار ہوئے ہاتھ میں بالوں کی رسی تھی پھر مجھے پیچھے سوا ر کر لیا اور مجھے تھوڑی دور لیکر چلے ۔ پھر میری طرف متوجہ ہو کر ارشاد فرمایا : اے بچے! میں نے عرض کیا :یا رسول اللہ! میں حاضر ہوں فرمایا : اللہ تعالیٰ کو یاد کر اللہ تعالیٰ تیری حفاظت فرمائے گا ۔ اللہ تعالیٰ کو یاد کرتا رہ کہ تو اسکی رحمت اپنے سامنے پائے گا ۔ اللہ تعالیٰ کو کشادگی میں یاد رکھ اللہ تعالی ٰتجھ کو تیری پریشانی میں یا درکھے گا ۔ اور جب کوئی چیز مانگے تو اللہ تعالیٰ سے مانگ، جب کسی سے مدد چاہے تو اللہ تعالٰی سے مدد چاہ ،جو کچھ ہونے والا تھا قلم لکھ کر گز ر چکا ۔اگر لوگ سب ملکر بھی تجھے نفع پہونچا نا چاہیں ایسی چیز سے جو تیری تقدیر میں نہیں تو نہیں پہونچا سکتے ۔ اور اگر نقصان پہونچا نا چاہیں ایسی چیز کا جو تیری تقدیر میں نہیں تو نہیں پہونچا سکتے ۔اگر تم سے ہو سکے تو یقین کے ساتھ صبر و رضا پر قائم رہنا ورنہ کم از کم صبر کا دامن ہاتھ سے نہ جانے دینا کہ نا پسندید ہ چیزوں پر صبر میں عظیم ثواب ہے۔ جان لو صبر کے ساتھ مدد شامل حال رہتی ہے اور پریشانی کے ساتھ کشادگی اور دشواری کے ساتھ آسا نی لگی ہوئی ہے ۔۱۲م

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۰۵۔ المستدر ک للحاکم ، معرفۃ الصحابۃ ، ۳/۶۲۳