أَعـوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْـطانِ الرَّجيـم

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

فَاَنۡجَيۡنٰهُ وَمَنۡ مَّعَهٗ فِى الۡـفُلۡكِ الۡمَشۡحُوۡنِ‌ۚ ۞

ترجمہ:

پس ہم نے ان کو نجات دے دی اور ان لوگوں کو بھی بھری ہوئی کشتی میں ان کے ساتھ تھے ،

اس کے بعد اللہ تعالیٰ نے فرمایا : پس ہم نے ان کو نجات دے دی اور ان لوگوں کو جو بھری ہوئی کشتی میں ان کے ساتھ تھے، بعدازاں باقی لوگوں کو ہم نے غرق کردیا۔

اس آیت میں الفلک المشحون کا لفظ ہے، الفلک کا معنی ہے کشتی اور المشحون کا معنی ہے بھری ہوئی۔ وہ کشتی انسانوں اور جانوروں سے بھری ہوئی تھی، اس کشتی میں ہرق سم کے حیوان تھے اور کھانے پینے اور برتنے کی وہ تمام چیزیں تھیں جن کا تعلق ضروریات زندگی سے ہے۔

القرآن – سورۃ نمبر 26 الشعراء آیت نمبر 119