أَعـوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْـطانِ الرَّجيـم

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

قَالَ رَبِّىۡۤ اَعۡلَمُ بِمَا تَعۡمَلُوۡنَ ۞

ترجمہ:

شعیب نے کہا میرا رب خوب جانتا ہے جو کچھ تم کرتے ہو

اصحاب الایکہ کا اپنے انکار پر اصرار اور ان پر عذاب کا نزول 

شعیب نے کہا ! میرا رب خوب جانتا ہے جو کچھ تم کرتے ہو۔ (الشعرائ : ١٨٨) یعنی تم جو کفر کرتے ہو اور انواع و اقسام کے گناہ کرتے ہو ان کو میرا رب خوب جانتا ہے اور اس کفر کی وجہ سے تم عذاب کے مستحق ہو اور وہ عذاب اپنے مقرر وقت پر ضرور آئے گا۔

روایت ہے کہ جب اصحاب الایکہ اپنے انکار اور تکبر میں حد سے گزر گئے تو اللہ سبحانہ نے ان پر سات مسلسل سخت گرمی کے دن بھیج دیئے ‘ حتیٰ کہ ان کے کنویں میں پانی جوش سے ابلنے لگا اور ان کے لئے سخت گرمی کے باعث سانس لینا دشوار ہوگیا اور ان سب نے جنگلوں کا رخ کیا اور درختوں کے نیچے لیٹ گئے۔ یکایک ایک سیاہ رنگ کا ابر ظاہر ہوا اور اس کے نیچے ٹھنڈی ہوا چلنے لگی۔ وہ سب ایک دوسرے کو آوازیں دے کر اس ابر کے نیچے جمع ہوگئے اور جب تمام لوگ اس بادل کے نیچے اکٹھے ہوگئے تو اچانک اس ابر سے آگ برسنے لگی اور اس نے ان سب لوگوں کو جلا کر خاکستر کردیا۔

القرآن – سورۃ نمبر 26 الشعراء آیت نمبر 188