حدیث نمبر 507

روایت ہے حضرت عبدالعزیز ابن جریج سے فرماتے ہیں ہم نے حضرت عائشہ سے پوچھا کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم کن سورتوں سے وتر پڑھتے تھے فرمایا پہلی رکعت میں”سَبِّحِ اسْمَ رَبِّکَ الْاَعْلَی”دوسری میں “قُلْ یٰۤاَیُّہَا الْکٰفِرُوۡنَ”اور تیسری میں”قُلْ ہُوَ اللہُ اَحَدٌ”اور فلق والناس سے ۱؎(ترمذی،ابوداؤد)

شرح

۱؎ یعنی تیسری رکعت میں یہ تینوں سورتیں پڑھتے تھے۔خیال رہے کہ یہ حدیث امام اعظم نے اپنی مسند میں یوں نقل کی ہے “عَنْ حَمَّادٍ عَنْ اِبْرَاھِیْمَ عَنْ اَسْوَدِ عَنْ عَائِشَۃَ صِدِّیْقَۃَ”۔اس میں صرف قُلْ ھُوَ اﷲُ کا ذکر ہے اور حاکم نے بشرط مسلم،بخاری حضرت عائشہ سے یہ حدیث نقل کی جس کے آخر میں ہے کہ آپ تین رکعت کے بعد ہی سلام پھیرتے تھے۔نسائی نے حضرت عائشہ سے روایت کی جس کے آخر میں ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم وتر کی دو رکعتوں پر سلام نہیں پھیرتے تھے۔امام طحاوی نے حضرت ابو العالیہ سے روایت کی کہ اصحاب رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم وتر مغرب کے فرضوں کی طرح پڑھتے تھے او ر اما م حسن نے فرمایا کہ اہل اسلام کا اس پر اجماع ہے کہ وتر تین رکعت ہیں ایک سلام سے۔غرضکہ یہ احادیث اما م اعظم وغیرہم کے قوی دلائل ہیں کہ وتر تین رکعت ہیں اور ایک سلام سے۔اس کی پوری تحقیق اسی مقام پر مرقاۃ میں دیکھو یا ہماری کتاب جاء الحق حصہ دوم میں۔

حدیث نمبر 508

اور نسائی نے عبدالرحمان بن ابزی سے روایت کی اور احمد نے ابی ابن کعب سےاور دارمی نے ابن عباس سے ا ور انہوں نے فلق و ناس کا ذکر نہ کیا ۱؎

شرح

۱؎ یہی امام ابوحنیفہ کا مذہب ہے کہ وتر کی تیسری رکعت میں صرف”قُلْ ہُوَ اللہُ اَحَدٌ”پڑھے۔خیال رہے کہ یہ حدیث تین رکعت کے متعلق ایسی واضح اور صاف ہے جس میں کسی تاویل کی گنجائش نہیں۔