(۱۴) معظم دینی کی تصویر سخت حرام و کفر انجام ہے

۱۱۲۔ عن أبی جعفر بن المہلب رضی اللہ تعالی عنہ قال: کان ود رجلا مسلما و کان محببا فی قومہ فلما مات عسکروأحول قبر ہ فی أرض بابل و جزعوا علیہ ، فلما رأی اِبلیس جزعہم علیہ تشبہ فی صورۃ اِنسان ثم قال: أری جزعکم علی ہذا ، فہل لکم أن اُصورکم مثلہ فیکون فی نادیکم فتذکرونہ بہ؟ قالوا: نعم ، فصور لہم مثلہ فوضعوہ فی نادیہم و جعلو یذکرو نہ، فلما رأی ما لہم من ذکرہ قال: ہل لکم أن أجعل لکم فی منزل کل رجل منکم تمثالا مثلہ فیکون فی بیتہ فتذکرونہ ، قالوا: نعم، فصور لکل أہل بیت تمثا لا مثلہ فأقبلوا فجعلوا یذکرونہ بہ،قال:و أدرک أبنآء ہم فجعلوا یرون ما یصنعون بہ وتناسلوا و درس أمر ذکرہم اِیاہ حتی اِتخذوہ آلہا یعبدونہ من دون اللہ ، قال : و کان أول ما عبد غیر اللہ فی الارض و الصنم الذی سموہ بود۔ فتاوی رضویہ حصہ دو م ۹/۴۷

حضرت ابو جعفر بن مہلب رضی اللہ تعالی عنہ سے روایت ہے کہ ود نام کے ایک صاحب ایمان شخص تھے جو اپنی قو م میں نہایت محبوب و معزز رہے ۔ جب انکا انتقال ہوا تو لوگ زمین بابل میں ان کی قبر کے پاس جمع ہوئے اور نہایت جزع فزع کی ۔ ابلیس مردود نے جب یہ دیکھا تو انسانی شکل میں آکر بولا: میں تمہاراجزع فزع دیکھ رہا ہوں، تو کیا میں تمہارے لئے انکی تصویر بنادوں۔کہ وہ تمہاری مجلس میں رہے جس سے تم انکو یاد کرتے رہو ۔ بولے: ہاں، چنانچہ اس نے تصویر بنادی اور لوگوں نے اپنی مجلس میں اسے رکھ لیا اور اسکی یاد گار مناتے رہے ،پھر جب ابلیس نے اسکی یاد کے ساتھ انکا شغف دیکھا تو کہنے لگا:کیامیں تم میں سے ہر ایک کے گھر کے لئے ایسی ہی تصویر بنادوں کہ تم میں سے ہر ایک اپنے گھر میں یاد گار مناتا رہے ؟بولے:ـ ہاں ،لہذا ہر گھر کیلئے اس نے تصویر بنادی تو سب اس پر جھک گئے اور یاد گار مناتے رہے ۔ پھر انکی اولاد میں بھی نسلا بعد نسل یہ سلسہ جاری رہا۔ اور ابلیس انکو یہ سبق پڑھاتا رہا یہاں تک کہ انہوں نے اس تصویر کو اللہ تعالیٰ کے سوا اپنا ایک دوسرا معبود بنالیا ،چنانچہ زمین میں یہ سب سے پہلا بت تھا جسکی عبادت ہوئی اور اس طرح غیر خدا کی عبادت کا رواج پڑا ۔۱۲م

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۱۲۔ التفسیر لعبد بن حمید،