۱۱۵۔ عن أنس بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ قال : قا ل رسو ل اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم : ثَلٰثٌ مِّنْ أصْلِ الْاِیْمَانِ ، اَلْکَفُّ عَمَّنْ قَالَ لاَ اِلٰہَ اِلّا اللّٰہُ ،وَ لاَ یُکْفِرُبِذَنْبِ ، وَ لَا یُخْرِجُہٗ مِنَ الْاِسْلَامِ بِعَمَلٍ ، وَ الْجِہَادُ مَا ضٍ مُنْذُ بَعَثَنِی اللّٰہُ تَعَالیٰ اِلیٰ اَنْ یُّقَاتِلَ آخِرُ اُمَّتِی الدَّجَالَ، لاَ یُبْطِلُہٗ جَوْرُ جَائِرٍ وَ لاَ عَدْلُ عَادِلٍ ، وَا لْاِیْمَانُ بِالْاَقْدَارِ۔ فتاوی رضویہ ۵/۵۹۶

حضرت انس بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: تین چیزیں اصل ایمان میں داخل ہیں ۔ لا الہ الا اللہ کہنے والوں سے زبان کو روکنا،اسے کسی گناہ کے سبب کافر نہ کہنا ،اور کسی عمل پر اسلام سے خارج نہ کہنا ، اور حکم جہاد میری بعثت سے جار ی ہے یہاں تک کہ میرا آخری امتی دجال سے قتال کرے،کوئی ظالم یا عادل بادشاہ اسکو منسوخ نہیں کر سکتا ،اور تقدیر پر ایمان لانا ۔ ۱۲م

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۱۵۔ السنن لابی داؤد ، الجہاد، ۱/۳۴۳ ٭ السنن الکبری للبیہقی، ۹/۱۵۹

السنن لسعید بن منصور ، ۲۳۶۷ ٭ نصب الرایۃ للزیلعی ، ۳/۳۷۷

کنز العمال للمتقی، ، ۴۳۲۶، ۱۵/۸۱۱ ٭ مشکوۃ المصابیح ، ۵۹ ، ۱/