أَعـوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْـطانِ الرَّجيـم

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

وَيَسۡتَعۡجِلُوۡنَكَ بِالۡعَذَابِ‌ؕ وَلَوۡلَاۤ اَجَلٌ مُّسَمًّى لَّجَآءَهُمُ الۡعَذَابُؕ وَلَيَاۡتِيَنَّهُمۡ بَغۡتَةً وَّهُمۡ لَا يَشۡعُرُوۡنَ ۞

ترجمہ:

یہ لوگ آپ سے عذاب کو جلد طلب کررہے ہیں اور اگر عذاب کے لئے ایک وقت مقرر نہ ہوتا تو ان پر ضرور عذاب آچکا ہوتا اور ان پر ضرور عذاب اچانک آئے گا اس حال میں کہ ان کو اس کا شعور بھی نہ ہوگا

کفارمکہ کے عذاب میں تاخیر کی وجہ 

اس کے بعد فرمایا یہ لوگ آپ سے عذاب کو جلد طلب کررہے ہیں ‘ قرآن مجید میں یستعجلو نک کا لفظ ہے اس کا مصدر استعجال ہے ‘ اس کا معنی ہے کسی چیز کو وقت سے پہلے طلب کرنا۔ نضر بن الحارث نے کہا تھا یہ عذاب کی وعید کب پوری ہوگی ؟ اللہ تعالیٰ نے اس کے جواب میں فرمایا اگر عذاب کے لئے ایک وقت مقرر نہ ہوتا تو ان پر ضرور عذاب آچکا ہوتا ‘ اور ان پر عذاب آنے میں تاخیر کی وجہ یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے ہمارے نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے وعدہ فرمایا ہے کہ وہ آپ کی قوم پر ایسا عذاب نازل نہیں کرے گا جس سے آپ کی پوری قوم نیست اور نابود ہوجائے بلکہ اللہ تعالیٰ ان میں سے منکروں اور کافروں کے عذاب کو روز قیامت تک مئوخر کر دے گا ‘ اس کا ایک معنی تو یہ ہے کہ قیامت کے دن ان پر اچانک عذاب آئے گا ‘ اور اس کا دوسرا معنی یہ ہے کہ ان کی موت کے فوراً بعد ان پر عذاب آجائے گا ‘ کیونکہ انسان کے مرتے ہی اس پر قیامت آجاتی ہے ‘ حضرت انس (رض) بیان کرتے ہیں کہ جب تم میں سے کوئی شخص مرتا ہے تو اس کی قیامت آجاتی ہے سو تم اللہ کی اس طرح عبادت کرتے رہو گویا کہ تم اس کو دیکھ رہے ہو اور ہر وقت اس سے استغفار کرتے رہو۔ (الفردوس بما ثورالخطاب رقم الحدیث : ١١١٧‘ کنزالعمال رقم الحدیث : ٧٤٨ ٤)

کیونکہ بزرخ میں عذاب ہوتا ہے اور یہ عذاب روح کو اور جسم کے اجزاء اصلیہ کو ہوتا ہے ‘ اور موت اچانک آتی ہے اور ان کافروں کے مرتے ہی ان پر قیامت آجائے گی اور ان پر اچانک وہ عذاب آجائے گا جس سے ان کو ڈر ایا گیا تھا۔ بعض آثار میں ہے جو شخص درست کام کرتا رہتا ہو اور اپنی موت کے لئے تیار رہتا ہو ‘ اس کی موت اچانک نہیں ہوتی خواہ نیند میں اس کی روح قبض کرلی جائے اور جس شخص کے کام درست نہ ہوں اور نہ وہ موت کے لئے تیار ہو تو اس کی موت اچانک آتی ہے خواہ وہ ایک سال سے بستر علالت پر ہو۔ (روح البیان ج ٦ ص ٧ ٦١ )

القرآن – سورۃ نمبر 29 العنكبوت آیت نمبر 53