۸۔ فرق باطلہ

(۱) فرق باطلہ کا ظہور

۱۲۱۔ عن أمیر المؤمنین علی بن ابی طالب کرم اللہ تعالیٰ وجہہ الکریم قال: سمعت رسو ل اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم یقول : یَاتِی فِی آخِرِ الزَّمَانِ قَوْمٌ حُدَثَائُ الْاَسْنَا نِ ، سُفَہَائُ الْاَحْلاَمِ ،یَقُولُونَ مِنْ خَیْرِ قَوْلِ الْبَرِیَّۃِ یَمْرُقُونَ مِنَ الْاِسْلَامِ کَمَا یَمْرُقُ السَّہْمُ مِنَ الرَّمِیَّۃِ لاَ یُجَاوِزُ اِیْمَانُہُمْ حَنَاجِرَ ہُمْ، فَأیْنَمَا لَقِیْتُمُوہُمْ فَاقْتُلُوہُمْ ،فَاِنَّ فِی قَتْلِہِمْ اَجْرًا لِمَنْ قَتَلَہُمْ یَوْمَ الْقِیَامَۃِ ۔

امیر المؤمنین حضرت علی ابن ابی طالب رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم کو فرماتے سنا : آخر زمانے میں کچھ لوگ حدیث السن ، سفیہ العقل لوگ آئیں گے کہ اپنے زعم میں قرآن و حدیث سے سند پکڑیں گے ، اسلام سے ایسے نکل جائیں گے جیسے تیر نشانہ سے نکل جاتا ہے ، ایمان انکے گلوں سے نیچے نہیں اتریگا ۔تو وہ جہاں ملیں قتل کرو کہ قیامت تک جو بھی انکو قتل کریگا اجر پائے گا ۔ فتاوی رضویہ ۳/۲۸۸

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۲۱۔ الجامع الصحیح للبخاری ، المناقب ، ۱/۵۱۰ ٭ السن الکبری للبیہقی، ۸/۱۸۷