۱۲۳ ۔ عن أبی سعید الخدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ عن النبی صلی اللہ تعالی علیہ وسلم قال : یَخْرُجُ نَاسٌ مِنْ قِبَلِ الْمَشْرِقِ وَ یَقْرَؤنَ الْقُرْآنَ، لَا یُجَاوِزُ تَرَاقِیْہِمْ ، یَمْرُقْوْنَ مِنَ الدِّیْنِ کَمَا یَمْرُقْ السَّہْمُ مِنَ الرَّمِیَّۃِ ، ثُمَّ لاَ یَعُوْدُ وْنَ فِیْہِ حَتّی یَعُوْدَ السَّہْمُ اِلیٰ فُوْقِہٖ ، قِیْلَ : مَا سِیْمَا ہُمْ؟ قَالَ: سِیْمَاہُمُ التّحْلِیْقُ اَوْ قَالَ : التَّسْبِیْدُ۔

حضرت ابو سعید خدری رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: مشرق سے کچھ لوگ نمودار ہونگے ،قرآن کثرت سے پڑھیں گے لیکن انکے حلق سے نیچے نہیں اتریگا،دین سے ایسے نکل جائیں گے جیسے تیر نشانہ کو پار کر کے نکل جاتا ہے ،پھر دین میں لوٹ کر واپس نہیں آئیں گے جب تک تیر لوٹ کر اپنے چلے پر نہ آجائے ۔عرض کیا گیا: انکی علامت کیا ہوگی؟ فرمایا: سر منڈانا ، یا سر منڈائے رکھنا ۔ ۱۲م

]۲[ امام احمد رضا محدث بریلوی قدس سرہ فرماتے ہیں

بعض احادیث میں یہ بھی آیا کہ حضور اقدس صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے ان کا پتہ بتایا۔ مشمری الازار ،گھٹنی ازار والے ۔ بے شمار درودیں حضور عالم ما کان و ما یکون پر صلی اللہ تعالی علیہ وسلم۔ بالجملہ یہ حضرات خوارج نہروان کے رشید پس ماندے ، بلکہ غلو و بیباکی میں ان سے بھی آگے ۔ فتاوی رضویہ ۳/۲۸۸

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۲۳۔ الجامع الصحیح للبخاری ، کتاب الرد علی الجہیمۃ ، ۲/۱۱۲۸