مسواک کی اہمیت}

حدیث شریف: ابو نعیم حضرت جابر سے روایت ہے کہ سرکارِ اعظم ﷺنے فرمایا کہ دورکعتیں جو مسواک کرکے پڑھی جائیں بے مسواک کی ستّر رکعتوں سے افضل ہے ۔

حدیث شریف: حضرت علی سے مروی ہے کہ سرکارِ اعظم ﷺنے فرمایابندہ جب مسواک کرلیتا ہے پھر نماز کو کھڑا ہوتاہے تو فرشتہ اس کے پیچھے کھڑا ہوکر قرأت سُنتا ہے پھر اس کے قریب ہوتاہے یہاں تک کہ اپنا منہ اس کے منہ پر رکھ دیتاہے ۔

مشائخ کرام فرماتے ہیں کہ جو شخص مسواک کا عادی ہو مرتے وقت اِسے کلمہ نصیب ہوگا اورجو افیون کھاتا ہوگا مرتے وقت اسے کلمہ نصیب نہ ہوگا۔

حضرت امام اعظم ابو حنیفہ علیہ الرحمہ کے نزدیک مسواک وضو کی سنتوں میں سے ہے نماز کی سُنّت نہیں مسواک کرنا افضل اورحضور ﷺکا طریقہ ہے ۔