(۳) بدمذہب سے ترش رو ہو کر با ت کرو

۱۲۷۔ عن أنس بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ قال : قال رسو ل اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم : اِذَا رَأیْتُمْ صَاحِبَ بِدْعَۃٍ فَاکْفَھِرُوا فِی وَجْہِہٖ ، فَاِنّ اللّٰہَ یُبْغِضُ کُلَّ مُبْتَدِعٍ، وَ لاَ یَجُوْزُ أحَدٌ مِّنْہُمْ عَلیَ الصِّرَاطِ لٰکِنْ یَتَہافَتُونَ فِی النَّارِ مِثْلَ الْجَرَادِ وَ الذُّبَابِ ۔

حضرت انس بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: جب تم کسی بدمذہب کو دیکھو تو اسکے رو برو اس سے ترش روئی کرو۔ا س لئے کہ اللہ تعالیٰ ہر بدمذہب کو دشمن رکھتا ہے ،ان میں کوئی پل صراط پر گزرنہ پائے گا بلکہ ٹکڑے ہو کر آگ میں گر پڑیں گے جیسے ٹڈی اور مکھیاں گرتی ہیں ۔ فتاوی رضویہ ۶/۱۰۳

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۲۷۔ تنزیہ الشریعۃ لابن عراق ، ۱/۳۱۹ ٭ تذکرۃ الموضوعات للفتنی، ۱۵