(۴)رافضی بدلقب فرقہ ہے

۱۲۸۔ عن عبد اللہ بن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما قال: قال رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم : سَیَاتِی قَوْ مٌ لَہُمْ نَبَزٌ ، یُقَالُ لُہُمْ الرَّفَضَۃُ، یَطْعَنُونَ السَّلْفِ وَ لاَ یَشْہَدُوْنَ جُمْعَۃً وَ لاَ جَمَاعَۃً ، فَلاَ تُجَالِسُوہُمْ ، وَ لاَ تُؤاکِلُوہُمْ، وَ لاَ تُشَارِبُوہُمْ، وَلاَ تُنَاکِحُوہُمْ ،وَ اِذا مَرِضُوا فَلاَ تَعُودُوْہُمْ ،وَ اِذَا مَا تُوا فَلاَ تَشْھَدُوْہُمْ ، وَ لاَ تُصَلُّوا عَلَیْہِمْ ، وَلاَ تُصَلُّوا مَعَہُمْ ۔

حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا :عنقریب کچھ لوگ آنے والے ہیں انکا ایک بد لقب ہوگا کہ انہیں رافضی کہا جائیگا ۔ سلف صالحین پر طعن کریں گے، اور جمعہ و جماعت میں حاضر نہ ہونگے ۔ انکے پاس نہ بیٹھنا ، نہ انکے ساتھ کھانا کھانا ، نہ انکے ساتھ پانی پینا ، نہ انکے ساتھ شادی بیاہ کرنا ، بیمار پڑیں تو انکو پوچھنے نہ جانا ، مر جائیں تو انکے جناز ہ میں نہ جانا، نہ ان پر نماز پڑھنا ،اور نہ انکے ساتھ نماز پڑھنا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۲۷۔ تنزیہ الشریعۃ لابن عراق ، ۱/۳۱۹ ٭ تذکرۃ الموضوعات للفتنی، ۱۵

۱۲۸۔ کنز العمال للمتقی، ، ۳۴ ۳۱۶ ، ۱۱/ ۳۲۴ ٭ العلل المتناہیۃ لابن الجوزی، ۱/۱۵۸

لسا ن المیزان لابن حجر، ۴/۱۱۱۳ ٭

۔