حضور اشرف الفقہاء  نے نوجوانوں میں صالح انقلاب برپا کیا

نوری مشن کے زیر اہتمام مدینہ مسجد میں محفلِ ایصالِ ثواب کا انعقاد

مالیگاؤں: ہمارے شہر میں ابتدا میں جب حضور اشرف الفقہاء خلیفۂ حضور مفتی اعظم مفتی محمد مجیب اشرف علیہ الرحمۃ کی آمد ہوتی تھی، مساجد و مدارس کی تعداد بہت کم تھی، حضرت کی سرپرستی میں مساجد و مدارس کے قیام کو تقویت ملی۔ آپ نے قوم کو تعمیری فکر دی۔ کام کو پسند فرماتے تھے یہی وجہ ہے کہ آپ کی جس علاقے میں آمد ہوتی وہاں پر کام کرنے والوں کو حوصلہ ملتا۔ خاندیش کے کئی علاقے ایسے ہیں جہاں آپ کی آمد کے بعد مساجد کا قیام عمل میں آیا۔ ایسے عظیم قائد کی رحلت یقیناً بڑے نقصان کا باعث ہے۔ ہمیں ان کے مشن فروغِ دین و سُنیّت کے لیے سرگرمِ عمل رہنا ہے۔ یہی حقیقی خراجِ عقیدت ہے۔ اس طرح کا اظہار خیال غلام مصطفیٰ رضوی نے مدینہ مسجد میں ۷؍ اگست کو قبل از جمعہ فرمایا۔ مزید کہا کہ اِس مدینہ مسجد کو بھی یہ شرف حاصل ہے کہ حضور اشرف الفقہاء متعدد بار تشریف لائے۔ پیارے آقا ﷺ کا موئے مبارک بھی آپ کے ہاتھوں مسجد میں نصب بکس میں بصد احترام رکھا گیا۔ آپ کی رحلت سے ساری دُنیاے اہلسنّت سوگوار ہے۔ آپ نے اپنے مواعظ کے ذریعے اصلاح بھی کی اور محبتِ رسول ﷺ کا نقش دلوں پر جمایا۔ اللہ تعالیٰ نے زبان میں وہ اثر دیا تھا کہ نوجوان طبقہ آپ کے ملفوظات سے متاثر ہوتا اور ان کی زندگیاں اسلامی تعلیمات کی آئینہ دار بن جاتیں۔ آپ نے صالح انقلاب برپا کیا۔ کئی رُخ سے حضور اشرف الفقہاء کی فقہی، علمی، اصلاحی و روحانی خدمات کو اُجاگر کیا۔ عالمی سطح پر مقبولیت کے کئی مشاہدات بیان کیے۔ بعد نمازِ جمعہ قرآن خوانی، شجرہ خوانی اور صلوٰۃ و سلام کا اہتمام ہوا۔ بعدہٗ حافظ فراز احمد برکاتی صاحب نے دُعا فرمائی۔محفلِ ذکرِ اشرف الفقہاء کا انعقاد نوری مشن و منتظمین مدینہ مسجد نے کیا۔ رپورٹ فرید رضوی نے ارسال کی-


٨ اگست ٢٠٢٠ء