زاویہ نظر

مفتی اعظم پاکستان مفتی منیب الرحمن

حضرت عمر کی تاریخ شہادت

آج کل بعض حضرات نے یہ بحث چھیڑ رکھی ہے کہ حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کا یومِ شہادت یکم محرم الحرام نہیں تھا، اول تو یہ ایک لایعنی بحث ہے ، کیونکہ یہ کہیں بھی لازم نہیں ہے کہ یومِ شہادت اُسی دن منایا جائے ،جس دن شہادت واقع ہوئی ہے، پوری امت امام عالی مقام حسین اور جمیع شہدائے کربلا اور امامِ عالی مقام کے اہلبیتِ اطہار اور اعوان وانصار کا یومِ شہادت دس محرم الحرام کو مناتی ہے ، لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ اُس سے پہلے یا بعد میں نہیں منایا جاسکتا، امام عالی مقام کی مجالسِ شہادت تو چہلم تک جاری وساری رہتی ہیں، میلاد النبی ﷺکی مجالس سارا سال جاری رہتی ہیں ۔ نیز ایسے تاریخی شواہد بکثرت دستیاب ہیں کہ اَبُولُؤْلُؤَہ فیروز مجوسی نے آپ کو زہر آلود دودھاری خنجر سے ذوالحجہ کے آخری ایام میں فجر کی نماز پڑھاتے ہوئے زخمی کیا اور اُسی کے نتیجے میں آپ کی شہادت یکم محرم الحرام کو واقع ہوئی اور آپ کی تدفین عمل میں آئی۔

امام ابوجعفر طبری مُتَوَفّٰی 310ھ، اپنی سند کے ساتھ روایت کرتے ہیں:

’’حضرت عمررضی اللہ عنہ کو 26ذوالحجہ 23ہجری کو زخمی کیا گیا اور یکم محرم الحرام 24ہجری کو آپ کی تدفین ہوئی،(المنتخب من ذیل المذیل، ص:11)،امام اَبُونُعَیْم مُتَوَفّٰی 430ھ لکھتے ہیں:’’حضرت سعد بن ابی وقاص بیان کرتے ہیں:حضرت عمر کو26 ذوالحجہ23ہجری کو (قاتلانہ حملے میں)زخمی کیا گیا گیا اوریکم محرم الحرام24ہجری کی صبح آپ کی تدفین ہوئی ، پس آپ کی خلافت دس سال پانچ ماہ اوراکیس دن رہی۔

علامہ ابن اثیرجزری مُتَوَفّٰی 630ھ نے ’’اُسُدُ الْغَابَہ،ج:4،ص:156‘‘میں ،علامہ یحییٰ بن شرف نووی مُتَوَفّٰی 676ھ نے ’’تَہْذِیْبُ الْاَسْمَاءِ وَاللُّغَات،ج:2،ص:13میں، علامہ ذہبی مُتَوَفّٰی 748ھ نے ’’سِیَرُ اَعْلَامِ النُّبَلَاء ، ج:2، ص:417-418‘‘میں ،حاجی خلیفہ مُتَوَفّٰی 1067ھ نے ’’سُلَّمُ الْوُصُوْل اِلٰی طَبَقَاتِ الْفُحُوْل،ج:2، ص:413‘‘ میں، علامہ علی القاری مُتَوَفّٰی 1014ھ نے ’’مِرْقَاۃُ الْمَفَاتِیْح، ج:9، ص: 3727‘‘میں اور شیخ عبدالحق محدث دہلوی مُتَوَفّٰی 1642ء نے ’’لَمْعَاتُ التَّنْقِیْحِ، ج: 10، ص:130‘‘میں اسی طرح لکھا ہے۔

علامہ ابن کثیرمُتَوَفّٰی 747ھ لکھتے ہیں:

’’جب حضرت عمر فاروق ؄بدھ26ذوالحجہ کو محراب میںصبح کی نماز پڑھارہے تھے تو اَبُولُؤلُؤ َہ فِیْرُوزُنے (زہر آلود) دودھاری خنجر سے آپ پر حملہ کیا، اس نے تین وار کیے اور ایک روایت کے مطابق چھ وار کیے، اُن میں سے ایک وارآپ کے زیرِ ناف لگاتوآپ گر پڑے،اس دوران آپ نے حضرت عبدالرحمن بن عوف کو نماز میں اپنا نائب بنایا ، پھر وہ پلٹ کر نکلا ، راستے میں جو آیا،اُن پر وار کرتا گیا حتیٰ کہ اُس نے تیرہ اشخاص پر ضرب لگائی، اُن میں سے چھ شہید ہوگئے،فیروز اصلاً ایرانی تھا،پھر حضرت عبداللہ بن عوف نے اُس پر کمبل ڈالا تو اس ملعون نے خودکُشی کرلی، حضرت عمر کو اٹھاکر ان کے گھر لے گئے ، اُن کے زخم سے خون بہہ رہا تھا، یہ طلوعِ آفتاب سے پہلے کا واقعہ ہے ، پھر آپ کبھی بے ہوش ہوجاتے اور کبھی ہوش میں آجاتے، جب ہوش میں آتے تو آپ کو نماز یاد دلائی جاتی ،وہ کہتے: ہاں ! جو نماز چھوڑ دے اس کا اسلام میں کوئی حصہ نہیں ہے، پھر اپنے وقت پر نماز پڑھتے، انہوں نے پوچھا: انہیں کس نے قتل کیا ہے، لوگوں نے بتایا: مغیرہ بن شعبہ کے غلام اَبُولُؤلُؤ َہ نے ، توانہوں نے اللہ کا شکر ادا کیا کہ میری موت کسی مسلمان کے ہاتھ سے نہیں ہوئی، پھر کہا: اللہ اُس کا برا کرے ، ہم نے تو اسے اچھی بات کا حکم دیا تھا، مغیرہ بن شعبہ نے اُس کے ذمے دو درہم یومیہ لگائے تھے ،پھر انہوں نے حضرت عمر ؄سے پوچھا: کیا میں اُس کے محصول میں اضافہ کردوں ،کیونکہ وہ کارپینٹرہے، نقش ونگار کرتا ہے ، لوہار ہے، تو انہوں نے اس کامحصول سو درہم ماہانہ کردیااور اُس سے کہا: مجھے پتا چلا ہے کہ تم بہت اچھا کام کرتے ہو، تم ہوائی چکی بناتے ہو، اَبُولُؤلُو َہ نے کہا: میں ضرور آپ کے لیے ایک ایسی چکی بنائوں گاکہ لوگ مشرق ومغرب میں اُس کا ذکر کریں گے ،یہ منگل کی شام کا واقعہ ہے اور بدھ 26ذوالحجہ کی صبح اس نے آپ کو خنجر گھونپ دیا،پھر حضرت عمر نے اپنا جانشین منتخب کرنے کے لیے ایسے چھ اصحاب پر مشتمل کمیٹی بنائی کہ رسول اللہ ﷺ اپنی وفات تک اُن سے راضی تھے اور وہ تھے: ’’حضرات عثمان، علی ، طلحہ ،زبیر ، عبدالرحمن بن عوف اور سعد بن ابی وقاص رضی اللہ عنہم، (البدایہ والنہایہ،ج:7،ص:138)‘‘۔

علامہ شبلی نعمانی لکھتے ہیں:

’’حضرت عمر کاتین دن بعد انتقال ہوااور محرم کی پہلی تاریخ ہفتہ کے دن مدفون ہوئے ،نماز جنازہ صہیب نے پڑھائی ،حضرات عبدالرحمن بن عوف، علی، عثمان ، طلحہ اور سعد بن ابی وقاص نے قبر میں اتارا اوروہ آفتابِ عالَم خاک میں چھپ گیا، (الفاروق، ص:173)‘‘۔ ایک مصنف نے لکھا:’’قاتل کا خنجر سینۂ عمر میں نہیں، قلبِ کائنات میں پیوست ہوگیا‘‘۔ حضرت عمر ؄کو ہمیشہ شہادت کی آرزو رہتی تھی ،حدیث پاک میں ہے: ’’ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے یہ دعا کی: اے اللہ! مجھے اپنے راستے میں شہادت اوردیارِ رسول میں موت عطا فرما، (بخاری:1890)‘‘۔

علامہ علی القاری لکھتے ہیں:

’’امام نووی نے کہا : دینی فتنے کے خوف سے موت کی تمنا کرنا مکروہ نہیں ہے ، بلکہ مستحب ہے ، امام شافعی اور حضرت عمر بن عبدالعزیز سے روایت ہے : اللہ کی راہ میں شہادت کی تمنا کرنا مستحب ہے ، کیونکہ صحیح روایت کے ساتھ حضرت عمر سے ثابت ہے‘‘ ۔ ۔ آگے چل کر لکھتے ہیں:نبی ﷺ نے فرمایا:جو شہادت کی سچی تمنا کرے گا، اُسے شہادت کا درجہ عطا کردیا جائے گا، خواہ اُسے شہادت نہ ملی ہو،(مسلم:1908)‘‘اور کسی مقدس مقام میں بھی موت کی تمنا کرنا مستحب ہے ، چنانچہ حضرت عمر نے دعا کی: اے اللہ! مجھے اپنی راہ میں شہادت عطا فرما اوراپنے رسولِ کریم کے شہر میں مجھے موت عطا فرما، ان کی صاحبزادی اُمُّ المومنین حضرت حفصہ نے کہا: دونوں باتیں کیسے جمع ہوسکتی ہیں، حضرت عمر نے فرمایا: اللہ چاہے گا تو عطا فرمادے گا، (طبقات ابن سعد، ج:3، ص:252، مرقاۃ المفاتیح، ج:4،ص: 60)‘‘،علامہ غلام رسول سعیدی لکھتے ہیں:

’’لاہور میں نمازِ جمعہ کے بعد ایک بزرگ نمازی نے مجھ سے یہ سوال کیا کہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے اللہ تعالیٰ سے اپنی شہادت کے حصول کی دعا کی، جبکہ شہادت کا معنی ہے: مسلمان کو کوئی کافر قتل کردے اور مقتول مغلوب ہوتا ہے اور قاتل غالب ہوتا ہے، سویہ تو مسلمان کے مغلوب ہونے اور کافر کے غالب ہونے کی دعا ہے،میں نے اس کے جواب میں کہا: ایک چیز قبیح لِذَاتِہٖ ہوتی ہے اورحَسَن لِغَیْرِہٖ ہوتی ہے جیسے جہاد کرنا ، یہ فی نفسہٖ قبیح لِذَاتِہٖ ہے ،کیونکہ اس سے شہر برباد ہوتے ہیں اور لوگ مارے جاتے ہیں، لیکن چونکہ یہ اِعْلَاءِ کَلِمَۃُ اللّٰہ کا ذریعہ ہے، اس وجہ سے یہ حَسَن لِغَیرہٖ ہے، اسی طرح شہادت کا معاملہ ہے۔ مسلمان کا، کافر کے ہاتھوں مغلوب ہونا قبیح لِذَاتِہٖ ہے ،لیکن چونکہ یہ اِعْلَاءِ کَلِمَۃُ اللّٰہ کا ذریعہ بنتا ہے ،اس لیے حَسَن لِغَیْرِہٖ ہے، (نعمۃ الباری، ج:4، ص: 355)‘‘ ۔ قبیح لِذَاتِہٖ اُسے کہتے ہیں کہ کسی چیز میں ذاتی نقص ہو، لیکن اگر وہ کسی دوسری اعلیٰ چیز کے حصول کا ذریعہ بن رہی ہو تو وہ حَسَن لِغَیْرِہٖ کہلاتی ہے کہ اُس مطلوبِ غیر نے اُس کے قُبْح کو حُسن میں تبدیل کردیا، جیسے شدید سردیوں کی راتوں میں جبکہ درجۂ حرارت منفی ہوتاہے، علی الصباح اٹھ کر وضو کرنا تکلیف دہ امر ہے،سو اس معنی میں یہ قبیح ہے ، لیکن چونکہ وضو صحتِ نماز کے لیے شرطِ لازم ہے ، اس لیے نماز نے مخصوص حالات میں اُس کے عیب کو کمال میں تبدیل کردیا، چنانچہ حدیث پاک میں فرمایا:

(۱)’’جو تاریکیوں میں چل کر مسجدوں میں جاتے ہیں، (اے رسولِ مکرم!) انہیں قیامت کے دن کامل نور کی بشارت دیجیے، ( ترمذی: 223)‘‘۔ (۲)’’رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: میں تمہیں وہ چیز نہ بتادوں کہ جس کے سبب اللہ تعالیٰ خطائوں کو مٹا دیتا ہے اور درجات کو بلند فرمادیتا ہے، صحابہ نے عرض کی: یارسول اللہ! ضرور بتائیے ! آپ ﷺ نے فرمایا: ناگواری کے باوجود کامل وضو کرنا اور زیادہ فاصلہ طے کر کے مسجدوں میں جانا اور ایک نماز کے بعد دوسری نماز کا انتظار کرنا ،پس یہ جہاد کے لیے سرحدوں پر پہرہ دینے کی مانند ہے، (مسلم: 251)‘‘۔ حضرت عمر نے عدل کے بارے میں رہنما اصول وضع کیے،انہوں نے حضرت ابوموسیٰ اشعری کو قضا کے لیے مندرجہ ذیل ہدایات جاری فرمائیں:

(۱)قضا لازمی فریضہ ہے ،(۲) قاضی کو مقدمے کے فریقین کے ساتھ مساوی سلوک کرنا چاہیے ،(۳) بارِ ثبوت مُدّعی کے ذمے ہے ، (۴) اگر مُدّعی کے پاس گواہ نہ ہوں اور مُدّعیٰ علیہ دعوے کو قبول کرنے سے انکاری ہوتو اُسے قسم دی جائے گی ، (۵) فریقین کے مابین صلح کرائی جاسکتی ہے ، لیکن ایسی صلح ہرگز روا نہیں جو حرام کوحلال کردے یا حلال کو حرام کردے ،(۶) اگر قاضی کوئی فیصلہ کرچکا ہے ، لیکن بعد میں اُس پر آشکار ہوا کہ فیصلہ درست نہیں تھا تو وہ اپنے فیصلے سے رجوع کرسکتا ہے، (۷) غیر معینہ مدت کے لیے مقدمات کو لٹکانا درست نہیں ہے ، اگر مُدّعی ثبوت پیش کرنے کے لیے مہلت چاہتا ہے ، تو اُس کے لیے میعاد مقرر کی جائے ، اگر مقررہ میعاد پروہ عدالت کے معیار پر ثبوت پیش کردیتا ہے تو اُسے اس کا حق دلادیا جائے ، ورنہ اُس کا دعویٰ خارج کردیا جائے، (۸) ہر مسلمان شہادت دینے کے قابل ہے ، سوائے اُن کے کہ جن کو جھوٹی تہمت پر کوڑے لگے ہوں یا جن کے بارے میں جھوٹی گواہی دینا ثابت ہو ، جیسے ہماری عدالتوں میں جھوٹے گواہ ہروقت دستیاب ہوتے ہیں۔

اگر ہم ان اصولوں کی روشنی میں دیکھیں تو ہمارا نظامِ عدل اکثر صورتوں میں خلافِ اسلام ہے ، خاص طور پر نیب کے بعض قوانین ضدِّ اسلام ہیں ، لیکن اس ادارے کو ہر دور کے حکمران نے اپنے مخالفین کو دبانے یا سیاسی منظر سے ہٹانے کے لیے استعمال کیا ہے ۔ اسی طرح ’’پلی بارگین‘‘ کا اصول سراسر خلافِ اسلام ہے ،نیز ثبوتِ جرم سے پہلے قید میں ڈالنا اور بارِ ثبوت مُدّعیٰ علیہ پر ڈالنا بھی خلافِ اسلام ہے۔ ہماری اعلیٰ عدالتیں ان قوانین اور نیب کے طرزِ عمل پر ریمارکس اور آبزرویشنز دیتی ہیں اور اپنے بعض فیصلوں میں سخت الفاظ میں تبصرے بھی کرتی ہیں ، لیکن حکومتِ وقت کو اس کے ازالے یا اصلاح کے لیے کوئی قطعی حکم جاری نہیں کرتیں یا اصلاح تک ان قوانین کو معطل نہیں کرتیں، سو غلط ہے مگر چل رہا ہے۔

(روزنامہ دنیا، 24اگست2020ء)