(۶) گناہ سے دل سیاہ ہوجاتا ہے

۱۴۶۔ عن أبی ہریرۃ رضی اللہ تعالیٰ عنہ قال : قال رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم : اِنَّ الْعَبْدَ اِذَا أخْطَأ خَطِیْئَۃً نَکَتَتْ فِی قَلْبِہٖ نُکْتَۃٌ سَوْدَآئُ، فَاِنْ ہُوَ نَزَعَ وَاسْتَغْفَرَوَ تَابَ صَقَلَ قَلْبُہٗ وَاِنْ عَادَ زِیْدَ فِیْہَا حَتّی تَعْلُوَ عَلیٰ قَلْبِہٖ وَہُوَ’’ ألرّ ا نُ‘‘الَّذِی ذَکَرَ اللّٰہُ تَعَالیٰ ’’کَلَّابَلْ رَانَ عَلیٰ قُلُوبِہِمْ مَاکَانُوا یَکْسِبُوْنَ۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: جب بندہ کوئی گناہ کرتا ہے اسکے دل میں ایک سیاہ دھبہ پڑ جاتا ہے ۔ پس اگر وہ اس سے جدا ہوگیا اورتوبہ استغفار کی تو اسکے دل پر صیقل ہو جاتی ہے۔ اور اگر دوبارہ کیا تو اور سیاہی بڑھتی ہے یہاں تک کہ اس کے دل پر چڑھ جاتی ہے ۔ او ر یہ ہی وہ زنگ ہے جس کا اللہ تعالیٰ نے ذکر فرمایا کہ یوں نہیں بلکہ زنگ چڑھاد ی ہے انکے دلوں پر ان گناہوں کے سبب کہ وہ کرتے تھے ۔ فتاویٰ رضویہ ۱۱/۳۰۸

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۴۶۔ الترغیب و الترہیب للمنذری ، ۲/ ۴۶۹ ٭ اتحاف السادۃ للزبیدی ، ۷/ ۲۲۹

کنزالعمال للمتقی ، ۱۰۱۸۹، ۴/ ۲۱۰ ٭ التفسیر للطبری ، ۳۰ / ۶۲

فتح الباری للعسقلانی ، ۸/ ۶۹۶ ٭ التفسیر للقرطبی ، ۱۹/ ۲۵۹

الجامع الصغیر للسیوطی ، ۱/ ۱۲۷ ٭ السنن لا بن ماجۃ ، ۲/ ۳۲۳

جمع الجوامع للسیوطی ، ۵۶۹۵ ٭ زاد المسیر لا بن الجوزی ، ۹/ ۵۶