{قضاء نماز کا بیان}

بِلا شرعی عُذرنماز قضا کردینا بہت سخت گناہ ہے اس پر فرض ہے کہ اس کی قضا پڑھے اورسچّے دل سے توبہ کرے۔

مسئلہ : سوتے میں یا بھولے سے نماز قضا ہوگئی تو اس کی قضا پڑھنی فرض ہے البتہ قضا کاگناہ اس پر نہیں ہوگا لیکن جاگنے کے ساتھ ہی اوریا دآنے پرا گر مکروہ وقت نہ ہو تواُسی وقت پڑھ لے بلاوجہ دیر کرنا مکروہ ہے ۔(عالمگیری)

مسئلہ : قضا نمازوں اوروقتی نماز میں ترتیب ضروری ہے جب کہ قضا نمازیں چھ سے کم ہوں یعنی اس صورت میںپہلے قضا نمازیں پڑھ لے پھر وقتی پڑھے جیسے آج کسی کی فجر وظہر وعصر و مغرب قضا ہوگئیں تووہ عشاء کی نماز نہیں پڑھ سکتا جب تک کہ ترتیب واران چاروں کی قضا نہ پڑھ لے ۔

مسئلہ : ایک شخص پر کئی نمازیں ہیں مثلاً ایک شخص پندرہ برس میں بالغ ہوا کیونکہ پندرہ برس کی عمر میںمرد وعورت بالغ ہوجاتے ہیںاگر بالغ ہونے کی نشانیاں نہ بھی پائی جائیں توبھی بالغ ہی مانا جائے گا اب وہ پچیس سال کی عمر تک نمازی نہیں بنا اب اُس پر دس سال کی قضا ئے عمری ہے اب اس کو ان دس سال کی نمازیں قضا کرنی ہوں گی ورنہ آخرت میں عذاب ہوگا اب وہ ہر نماز کی فرض رکعتیں قضا کرے گا اورساتھ میں تین وتر بھی قضا کرے گا۔ یعنی دن بھر کی بیس رکعتیں قضا کرے گا اِسی طرح وہ جب سے بالغ ہوا اس وقت سے لے کر جب تک نمازی نہ بنا اس وقت کی نمازوں کا کاغذ اور قلم سے تخمینہ لگائے اورپھر قضاء کرے ۔

قضائے عمری کی نیت اسی طرح کرے مثلاً فجر کی نماز قضا کررہا ہے تویوں کہے کہ دورکعت فجر کی جو میری زندگی میں پہلے قضا ہوئی ادا کررہا ہوں منہ میرا کعبہ شریف کے ۔

ہر نماز کی اِسی طرح نیت کرے ظہر کی ہے تو ظہر جو میری زندگی میں پہلے قضا ہوئی ، عصر کی ہے تو یا مغرب ، عشاء یا وتر ہیں توسب میں اِسی طرح نیت کرے ۔

مسئلہ : قضائے عمری میں ترتیب واجب نہیں اگر کسی پر سال دوسال کی نمازیں قضا ہوئیں یاکم سے کم چھ نماز وں سے زائد اس کے ذمے ہیں تواس پر ترتیب واجب نہیں۔

قضائے عمری کا آسان طریقہ یہ ہے کہ آپ ہر فرض نماز کی سنت ِ غیر موکدہ اورنفل چھوڑ دیں اوراس کی جگہ ایک وقت کی نماز قضا کریں یوں حساب کتاب بھی رہے گا۔اور سنت غیر مؤکدہ کو چھوڑے بغیر ہر نماز کے ساتھ قضا نماز پڑھتارہے تواوربہتر ہے ۔

اگر آپ دس دن کی ایک دن قضا کرنا چاہتے ہیں توبھی اجازت ہے ہر شخص پر کچھ نہ کچھ قضا نمازیں ہیں ہم سب کوچاہیے کہ اسے پڑھ لیں جب سب نمازیں پڑھ لیں گے تو آپ صاحبِ ترتیب ہوجائیں گے ۔ صاحبِ ترتیب کا مطلب یہ ہے کہ جس پر فرض نماز کوئی بھی نہ ہو۔

مسئلہ : بعض لوگ شبِ قدر یا آخر رمضان میںجو نماز یں قضائے عمری کے نام سے پڑھتے ہیں اوریہ سمجھتے ہیں کہ عمر بھر کی قضانمازوں کے لئے یہ کافی ہے یہ بالکل غلط اورباطل خیال ہے ۔(قانونِ شریعت)