اسکا خیال رکھیں کہ بچے تعلیم کن نظریات کے حامل انسان سے حاصل کررہے ہیں ؟

ہمارا ایک چھوٹا بچہ جسکی عمر تقریباً 5 یا 6 برس ہوگی، ٹیوشن پڑھنے کیلئے ایک خاتون کے پاس جاتا ہے، بچوں کی یہ عادت ہوتی ہے کہ جہاں سے کوئی نئی یا عجیب بات سنتے ہیں انکو گھر آکر لازمی بیان کرتے ہیں۔

ایک دن میں لیٹا ہوا تھا کہ چھوٹے بچے نے اپنی امی سے کہا کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!

ہماری ٹیچر نے کہا ہے کہ

یہ پہاڑیاں نہیں بنانی چاہیئے (میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم کی شب جو بنائی جاتی ہیں) کیونکہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کا جب وصال ہوا تو لوگ خوشیاں منا رھے تھے۔(بچے کا کلام ختم ہوا)

اب خدا بہتر جانتا ہیں کہ اس ٹیچر نے کس طریقے سے بات کی اسکا مقصد کیا تھا یا اسکا سیاق و سباق کیا ہے۔

لیکن بہرحال

اس پرفتن دور میں ہمیں اپنی نئی نسل کے نظریات کی انکی جان سے زیادہ حفاظت کرنا اشد ضروری ھے۔ کیونکہ بچے ایک نرم شاخ کی مانند ہوتے ہیں، جسطرف چاہیں انکو موڑا جا سکتا ھے۔

لہذا روافض و خوارج نظریات کے حامل افراد کے پاس اپنے بچوں کو تعلیم حاصل کرنے کیلئے ہرگز مت بھیجیں۔

ایسی تعلیم سے انسان جاہل ہے اچھا ہے۔

مجھے بچے کی بتائی ہوئی بات سے رفض و خوارج دونوں کے نظریات کی بدبو آرہی ہے۔۔۔۔۔۔۔

احمدرضا رضوی