۱۸۹۔عن أمیر المؤمنین علی کرم اللہ تعالیٰ وجہہ الکریم قال: کان رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم فی جنازۃ فقال: اَیُّکُمْ یَنْطَلِقُ اِلیَ الْمَدِیْنَۃِ فَلاَ یَدَعُ لَہا وَثَنًا اِلّا کَسَرَہٗ وَلاَ قَبْرًا اِلّاسَوَّاہٗ وَلاَ صُوْرَۃً اِلّا طَمَسَہَا، وَمَنْ عَادَ اِلیٰ صَنْعَۃِ شَیٔ ٍمِنْ ھٰذَا فَقَدْ کَفَرَ بِمَا اُنْزِلَ عَلیٰ مُحَمَّدٍ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالیٰ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ۔

امیر المؤمنین حضرت علی کرم اللہ تعالیٰ وجہہ الکریم سے روایت ہے کہ رسول اللہ ایک جنازہ میں تشریف فرماتھے کہ ارشاد فرمایا: تم میں کون ایسا ہے جو مدینے جاکرہر بت کو توڑ دے اور ہر قبر کو برابر کر دے اور سب تصویریں مٹادے۔ پھر فرمایا : جو یہ ساری چیزیں بنائیگا وہ کفر و انکار کریگا اس چیزکے ساتھ جو محمد صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم پر نازل ہوئی ۔ العیاذباللہ تعالیٰ۔ فتاوی رضویہ حصہ اول ۹/۱۴۵

]۴[ امام احمد رضا محدث بریلوی قدس سرہ فرماتے ہیں

مسلمان بنظر ایمان دیکھے کہ صحیح وصریح حدیثوں میں ا س پر کیسی سخت وعیدیں فرمائی گئیں اور یہ تمام احادیث عام شامل محیط کامل ہیں جن میں اصلا کسی تصویر کسی طریقے کی تخصیص نہیں تو معظمین دین کی تصویروں کو ان احکام خدا و رسول سے خارج گمان کرنا محض باطل وہم عاطل ہے ، بلکہ شرع مطہر میں زیادہ شدت عذاب تصاویر کی تعظیم ہی پر ہے ۔ اور خود ابتدائے بت پرستی انہیں تصویر ات معظمین سے ہوئی ۔ قرآن عظیم میں جو پانچ بتوں کاذکر سورئہ نوح علیہ الصلوٰۃ والسلام میں فرمایا : ود،سواع،یغوث، یعوق، نسر ، یہ پانچ بندگان ِ صالحین تھے کہ لوگوں نے ان کے انتقال کے بعد باغوائے ابلیس لعین ان کی تصویر یں بنا کر انکی مجلس میں قائم کیں پھر بعد کی آنے والی نسلوں نے انہیں معبود سمجھ لیا۔ فتاوی رضویہ حصہ اول ۹/۱۴۵

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۸۹۔ المسند لا حمد بن حنبل ، ۱/ ۸۷ ۔ ٭