السلام علیکم ورحمۃ اللہ

مزاج گرامی !

اہم اطلاع :

بعض ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ کچھ لوگ اپنے آپ کو تنظیم المدارس کا نمائندہ ظاہر کر کے مدارس و جامعات بالخصوص خواتین کے اداروں میں کوائف فارم تقسیم کر رہے ہیں اور ڈیٹا اکٹھا کر رہے ہیں.

یاد رہے کہ تنظیم المدارس نے کسی کو کر گھر گھر جا کر فارم پُر کروانے کا ٹاسک نہیں دیا ہے ۔

واضح کیا جاتا ہے کہ ” اتحاد تنظیمات مدارس پاکستان“ کی طرف سے جاری کردہ اعلامیہ کے ذریعے آگاہ کیا جا چکاہے کہ جب تک شرائط و حدود طے نہیں ہو جاتیں اس وقت تک مدارس کی پانچوں تنظیمات و وفاقہائے مدارس نے ڈیٹا دینے کا عمل شروع نہ کرنے کا اعلان کیا ہے ۔

بایں ھمہ اگر کوئی مدرسہ اپنے کوائف فراہم کرتا ہے تو اس کے نفع و نقصان کا خود ذمے دار ہو گا ۔

نیز وقف املاک بل کو غیرآئینی اور غیر شرعی ہونے کی بنا پر بالاتفاق مسترد کیا جا چکا ہے ۔ نیز دینی مدارس کا اوقاف سے تعلق بھی نہیں.

اھل مدارس کو چاہیے کہ اس مشکل مرحلہ میں باھمی اتحاد و یگانگت کا مظاہرہ کریں ، اور حکمت وبصیرت سے ادفع بالتی ھی احسن کی پالیسی اپنائیں.

اللہ تعالیٰ ہم سب کا حامی و ناصر ہو اور ھمیں دارین میں سرخرو فرمائے ۔

آمین بجاہ سید المرسلین ﷺ

ایڈمن

شعبہ تعلقات عامہ

تنظیم المدارس اہل سنت پاکستان