۲۲۴۔ عن عبد اللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما قال:ما خلت الأرض من بعد نوح من سبعۃ ید فع اللہ بہم عن أھل الأرض۔

حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے ۔آپ نے ارشادفرمایا :نوح علیہ الصلوٰۃوالسلام کے بعد زمین کبھی سات بندگان خدا سے خالی نہ ہوئی جنکے سبب اللہ تعالیٰ اہل زمین سے عذاب دفع فرماتا ہے ۔

]۲[ امام احمد رضا محدث بریلوی قدس سرہ فرماتے ہیں

جب صحیح حدیثوں سے ثابت کہ ہر قرن و طبقہ میں روئے زمین پر لا اقل سات مسلمان بندگان مقبول ضرور رہے ہیں اور خود صحیح بخاری شریف کی حدیث سے ثابت ہے کہ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم جن سے پیدا ہوئے وہ لوگ ہر زمانہ میں ہر قرن میں خیار قرن سے تھے ۔ اور آیت قرآنیہ ناطق ، کہ کوئی کافر اگرچہ کیسا ہی شریف القوم ، بالا نسب ہو کسی مسلمان غلام سے بھی خیر وبہتر نہیںہو سکتا ۔ تو واجب ہوا کہ مصطفی صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کے آباء و امہات ہر قرن و طبقہ میں انہیں بندگان صالح ومقبول سے ہوں ۔ ورنہ معاذ اللہ صحیح بخاری شریف میں فرمان مصطفی صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم قرآن عظیم میں ارشاد حق جل وعلا کے مخالف ہوگا۔

اقول: والمعنی ان الکافر لایستاھل شرعا ان یطلق علیہ انہ من خیار القرن لاسیما ھناک مسلمون صالحون وان لم یرد الخیر یۃ الا بحسب النسب فافھم ۔

یہ دلیل امام جلیل خاتم الحفاظ جلال الملت والدین سیوطی قدس سرہ نے افادہ فرمائی ۔ فاللہ یجزیہ الجزاء الجمیل ۔ فتاوی رضویہ ۱۱/۱۵۵

میں کہتا کہوں کہ مراد یہ ہے کہ کافر اس بات کا اھل ہی نہیں کہ اسے بہترین خلائق کہا جائے بالخصوص اس صورت میں کہ وہاں صالح مسلمان بھی موجود ہوں ۔ اگرچہ افضلیت سے صرف نسبی افضلیت ہی کیوں نہ مراد ہو۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۲۴۔ اس حدیث کا حوالہ نہیں ملا ۔ البتہ کچھ فرق سے حلیۃالاولیاء ۶/ ۲۰ ٭ میں حضرت کعب احبارکا قول مروی ہے۔ ۱۲م