(۲۱) بے علم فتویٰ باعث گمراہی ہے

۲۷۸۔ عن عبد اللہ بن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما قال: قال رسو ل اللہ صلی اللہ تعا لیٰ علیہ وسلّم: اِنَّ اللّٰہَ لاَ یَقْبِضُ الْعِلْمَ اِنْتِزَاعًا یَنْتَزِعُہٗ مِنَ النَّاسِ وَلٰکِنْ یَّقْبِضُ الْعِلْمَ بِقَبْضِ الْعَلَمَائِ، فَاِذَا لَمْ یَبْقِی عَالِمًا اِتَّخَذَ النَّا سُ رُؤُ سًا جُہَّالًا فَسُئِلُوا فَافْتَوْا بِغَیْرِ عِلْمٍ فَضَلُّوا وَ أضَلُّوْا ۔

حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعا لیٰ علیہ وسلّم نے ارشاد فرمایا : اللہ تعالیٰ علم دین لوگوں کے دلوںسے محو کرکے نہیں اٹھا ئیگا بلکہ علما ء ہی اٹھا لئے جائیںگے، جب علماء باقی نہ رہیں گے تولوگ جاہلوں کو سردار بنا لیںگے ۔لھٰذٰ ان سے مسائل دریافت کیئے جا ئیں گے تو وہ بغیر علم فتویٰ دیںگے ۔ خود بھی گمراہ ہو نگے اور دوسروں کو بھی گمراہ کریںگے ۔ فتاویٰ رضویہ ۴/۵۰۲

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۷۸۔ السنن لا بن ماجۃ ، مقدمۃ ، ۱/۶ ٭ الجامع الصحیح للبخاری ،العلم ، ۱/ ۲۰

الصحیح لمسلم ، العلم ، ۲/ ۳۴۰ ٭ الجامع للترمذی ، العلم ، ۲/ ۹۰

المسندلاحمد بن حنبل، ۲/۱۶۲ ٭ الجامع الصغیر للسیوطی، ۱/۱۱۴