تحریر : پروفیسر عون محمد سعیدی مصطفوی بہاولپور

*(نئے سال کی خوشی منانا کیسا)*

 

بعض بزعم خویش دانش ور نئے عیسوی سال کی آمد پر اس طرح کی پوسٹس لگانا شروع کر دیتے ہیں کہ ہمارا سال محرم سے شروع ہوتا ہے، عیسوی سال سے ہمارا کچھ لینا دینا نہیں، ہمیں کوئی اس سال کی مبارک نہ دے، وغیرہ وغیرہ.

 

ان دانش وروں کو معلوم ہونا چاہیے کہ ہجری سال ہو یا عیسوی دونوں ہی ہمارے سال ہیں، کیونکہ دونوں ہی ہمارے رب کریم کے بنائے ہوئے ہیں، نہ ہمیں ہجری سال سے کوئی عداوت ہے اور نہ عیسوی سال سے. قرآن حکیم میں ہے.. ھو الذی جعل الشمس ضیاء والقمر نورا.. الشمس والقمر بحسبان… والشمس و ضحہا والقمر اذا تلہا..

ہجری سال (محرم تا ذی الحج) کا تعلق چاند سے ہے،اس لیےاسے قمری سال کہتے ہیں – یہ 355 دن کا ہوتا ہے.

جبکہ عیسوی سال (جنوری تا دسمبر) کا تعلق سورج سے ہے، اس لیےاسے شمسی سال کہتے ہیں. یہ 365 دن کا ہوتا ہے.

اگرچہ قمری سال کی ایک خاص اہمیت ہے، لیکن شمسی سال کی اہمیت بھی کچھ کم نہیں.

بہت سے اسلامی احکام کا تعلق قمری سال سے ہے، جیسے رمضان کے روزے، عیدین، ذی الحج میں حج.

اور بہت سےاسلامی احکام کاتعلق شمسی سال کے اوقات سے ہے، جیسے روزانہ پانچ نمازوں کے اوقات اور روزےکا آغاز و اختتام وغیرہ . لہٰذا شمسی سال کو کافروں کاسال کہنا بہت بڑی غلطی ہے، شمسی قمری دونوں سال مسلمانوں کےہیں. البتہ قمری سال کی اہمیت زیادہ ہے، مسلمانوں کواپنے روز مرہ معاملات قمری سال کےمطابق چلانےچاہییں،یہی شروع سے مسلمانوں کاطریقہ چلا آ رہا ہے.

 

معلوم ہوا کہ نئے سال ( ہجری ہو یا عیسوی) کی آمد پر مبارک دینے، دعا دینے اور حدود شریعت میں رہتے ہوئے خوشی منانے میں کوئی حرج نہیں.

مگر اس کو یہودیوں عیسائیوں کی طرح دھما چوکڑی، آتش بازی ، طوفان بدتمیزی، شراب نوشی، غلط کاری اور عریانی فحاشی پھیلاتے ہوئے منانا سخت ترین حرام ہے.

ہر مسلمان کے لیے اس سے خود بھی بچنا ضروری ہے اور دوسروں کو بھی بچانا ضروری ہے.

ہمیں نئے سال کی آمد پر دعائیہ تقریبات کا انعقاد کرنا چاہیے. عشاء کی باجماعت نماز کے ساتھ پچھلے سال کا اختتام اور فجر کی نماز کے ساتھ نئے سال کا آغاز بے شمار برکات کا سبب ہے.

 

ایک معاصر فتوے کے الفاظ کچھ یوں ہیں : نئے عیسوی سال کی آمد پر شریعت کے دائرے میں رہ کر خوشی منانا جائز ہے کہ اللہ عز و جل نے نئے سال کا آغاز دیکھنا نصیب فرمایا. ہر سانس ہر گھڑی اللہ عز و جل کی عطا کردہ نعمت ہے.