أَعـوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْـطانِ الرَّجيـم

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

فَكَيۡفَ كَانَ عَذَابِىۡ وَنُذُرِ ۞

ترجمہ:

تو کیسا تھا میرا عذاب اور کیسا تھا میرا ڈرانا

القمر :16 میں فرمایا : تو کیسا تھا میرا عذاب اور کیسا تھا میرا ڈرانا۔

اس آیت میں اللہ تعالیٰ نے اپنے عذاب پر تنبیہ کی ہے، اس پر یہ سوال ہوتا ہے کہ قرآن مجید کے مخاطبین نے تو وہ عذاب نہیں دیکھا پھر ان سے یہ کہنا کس طرح درست ہوگا کہ کیسا تھا میرا عذاب ؟ اس کا جواب یہ ہے کہ اس طوفان کا آنا پوری دنیا میں مشہور ہوچکا تھا اور اس شہرت کی بناء پر یہ فرمانا درست ہے کہ کیسا تھا میرا عذاب ؟

اور فرمایا : کیسا تھا میرا ڈرانا، اس سے مراد ہے کہ رسولوں نے اللہ کے عذاب سے جو ڈرایا تھا اس کا انجام کیسا ہوا اور جن لوگوں نے رسولوں کی تکذیب کی تھی ان پر عذاب آیا یا نہیں ؟

القرآن – سورۃ نمبر 54 القمر آیت نمبر 16