أَعـوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْـطانِ الرَّجيـم

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

وَحَمَلۡنٰهُ عَلٰى ذَاتِ اَلۡوَاحٍ وَّدُسُرٍۙ ۞

ترجمہ:

اور ہم نے نوح کو تختوں اور میخوں والی کشتی پر سوار کردیا

القمر 13: میں فرمایا : اور ہم نے نوح کو تختوں اور میخوں والی کشتی پر سوار کردیا۔

اس آیت میں ” دسر “ کا لفظ ہے ” الدسر “ کا معنی ہے : کسی چیز کا دفع کرنا، اور دھکار دینا۔ حضرت ابن عباس نے فرمایا : اس سے مراد کشتی کا اگلا حصہ ہے جس سے طوفان کی موجیں ٹکراتی تھیں، جوہری نے ” صحاح “ میں کہا ہے کہ ” دسر “ کا واحد ” دسار “ ہے اور اس سے مراد وہ رسے ہیں جن سے کشتی کے تختے باندھے جاتے ہیں اور یہ بھی کہا جاتا ہے کہ ” دسر “ کا معنی میخیں ہے۔

القرآن – سورۃ نمبر 54 القمر آیت نمبر 13