أَعـوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْـطانِ الرَّجيـم

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

فَبِاَىِّ اٰلَاۤءِ رَبِّكُمَا تُكَذِّبٰنِ ۞

ترجمہ:

سو تم اپنے رب کی کون کون سی نعمتوں کو جھٹلائو گے

اس کے بعد (الرحمان 32) فرمایا، یعنی تم نے جو برے اعمال کئے ہیں وہ بھلائے نہیں جائیں گے اور نہ تمہارے اعمال کے ثواب کو روکا جائے گا اور تم نے جس پر ظلم کیا ہے اس کو انصاف دلایا جائے گا پھر تم اللہ تعالیٰ کی ان نعمتوں کا کیسے انکار کرسکتے ہو کہ تم کو اللہ نے یہ نعمتیں نہیں دی ہیں ؟ سنو یہ تمام نعمتیں اللہ کی طرف سے ہیں سو تم ان کا شکر ادا کرو، سو تم اس کا کیسے انکار کرو گے جو تمہارے اعمال کی جزا دیتا ہے اور تمہاری نیکیوں کے اجر میں کوئی کمی نہیں کرتا اور تمہارے دشمنوں کے خلاف تمہاری مدد کرتا ہے، پس یہ تمام نعمتیں اللہ کی طرف سے ہیں تم اس کو واحد مانو اس کا شریک نہ مانو اور اس کا شکر ادا کرو۔

القرآن – سورۃ نمبر 55 الرحمن آیت نمبر 32