*عوامی سطح پر ایک بہت ہی مشہور وسوسہ*

کہ دعوت اسلامی کے پاس بہت پیسہ ہے۔۔۔۔ دعوت اسلامی کو دنیا بھر سے چندہ ملتا ہے، اس لیے دعوت اسلامی کو دینے کے بجائے کسی اور شخصیت یا ادارے کو چندہ دے دیں۔۔۔۔

دعوت اسلامی کے پاس بہت پیسہ ہے، دعوت اسلامی کو جگہ جگہ سے چندہ ملتا ہے، یہ بات درست ہے، سو فیصد درست ہے، دعوت اسلامی کے پاس بہت پیسہ ہے، جب ہی تو دعوت اسلامی اتنا بڑا نظام چلا رہی ہے، سالانہ اربوں روپیہ خرچ کررہی ہے

اور چندہ دعوت اسلامی کو دیں۔۔ یا کسی بھی ادارے کو دیں۔۔ میرٹ پر دیں۔۔ ضروریات پر دیں۔۔۔ پرفارمنس پر دیں۔۔۔ آؤٹ پٹ پر دیں

دعوت اسلامی صرف پاکستان میں سالانہ پندرہ ارب روپے خرچ کرتی ہے

ہر مہینے سوا ارب روپے یعنی
*125 کروڑ روپے* مہینہ کا حساب ہے

روزانہ کا *4کروڑ 16 لاکھ* بنتا ہے
*17لاکھ 33ھزارروپے* فی گھنٹہ کے حساب سے دعوت اسلامی کا خرچ ہے جو جوبیس گھنٹہ چلتا ہے

اب دعوت اسلامی کا نظام اسی صورت چل سکتا ہے جب دعوت اسلامی کو ہر گھنٹے *17 لاکھ33ھزار* کی آمدنی مسلسل حاصل ہوتی رہے۔۔۔ چوبیس گھنٹے یہ آمدنی جاری رہے۔۔ اور بلا تعطل جاری رہے، سارا سال سردی گرمی آندھی طوفان یہ آمدنی جاری رہے

دعوت اسلامی کے لیے یہ بات بہت آسان ہے کہ اگر یہ اعلان کردیا جائے کہ دعوت اسلامی آئندہ کوئی نئی مسجد تعمیر نہیں کرے گی
کوئی نیا جامعة یا کوئی نیا مدرسة تعمیر نہیں کرے گی
دعوت اسلامی اپنے آپ کو 50 ہزار اجیروں پر لاک کردے۔۔۔ اور یہ اعلان کردے کہ آئندہ کوئی نیا پیش امام، موذن، خادم، قاری، مدرس، استاد اپنے مدارس میں بھرتی نہیں کرے گی

تو پھر دعوت اسلامی اپنے چندے میں تھوڑا اضافہ کرے اور سکون سے بیٹھ جائے، ایسی صورت میں دعوت اسلامی ٹھنڈ میں اور سکون میں آجائے گی

*لیکن دعوت اسلامی ایسا نہیں کرتی۔۔۔*

دعوت اسلامی امت مسلمہ کو قرآن پڑھانے کے لیے مسلسل نئے مدرسین بھرتی کررہی ہے (پھر بھی ضرورت پوری نہیں ہوتی)

دعوت اسلامی نئے جامعات، نئے مدارس، نئی مساجد کی تعمیرات کو جاری رکھے ہوئے ہیں

کرونا آیا، دنیا بھر میں بڑی بڑی ایئرلائن دیوالیہ ہوگئیں۔۔۔
بڑے بڑے فائیو اسٹار ہوٹل بند ہوگئے
بڑے بڑے اداروں نے اپنے ملازمین کو نوکریوں سے نکالا

لیکن کرونا پینڈیمک کے دوران بھی دعوت اسلامی کی گروتھ جاری رہی۔۔۔ دعوت اسلامی نے اپنے اجیروں کی تنخواہیں نہیں روکی۔۔۔ دعوت اسلامی نے کرونا پینڈیمک کے دوران اپنے پیڈ ایمپلائیز کو بونس دیا۔۔۔ کرونا کے دوران بھی نئے مدارس اور جامعات کی تعمیرات جاری رہیں

حالیہ دنوں میں پاکستان میں مہنگائی کا نیا طوفان آیا، *امیر اہلسنت علامہ الیاس قادری* نے دعوت اسلامی کے اجیروں کی تنخواہ میں اضافے کا اعلان کردیا

دعوت اسلامی کو بہت چندہ ملتا ہے جب ہی تو اتنا بڑا نظام چل رہا ہے اور یہ نظام مسلسل پھیلتا چلا جارہا ہے، اس لیے ہمارے عطیات کو بھی پھیلنا چاہیئے

*تحریر کی دم:*

ایک پوائنٹ یہ بھی ہے کہ اگر دعوت اسلامی کو سال کے پندرہ ارب کی ضرورت ہے اور دعوت اسلامی کو ضرورت سے زیادہ (مثال کے طور پر) بیس ارب کا چندہ جمع ہوجائے۔۔۔ تو جناب یہ چندہ بھی تو دین کے کاموں میں ہی استعمال ہوگا، اگر چندہ زیادہ جمع ہوگیا تو زیادہ سے زیادہ یہی ہوگا کہ کچھ مدارس نئے تعمیر ہوجائیں گے، کچھ مساجد نئی تعمیر ہوجائیں گی

اس لیے چندہ دیتے وقت یہ وسوسے مت پالیں کہ دعوت اسلامی کو بہت زیادہ ملتا ہے۔۔۔ بلکہ یہ دیکھیں کہ دعوت اسلامی کو دینی کاموں کا نظام چلانے کے لیے اور اس نظام کو پھیلانے کے لیے کتنی بڑی رقم کی حاجت ہے

دعوت اسلامی کو چندہ ملتا ہے تو اس چندے سے روزانہ پچاس ہزار گھروں میں چولہا جلتا ہے۔۔۔ (دعوت اسلامی کے پچاس ہزار آئمہ، مدرسین کو تنخواہ ادا کرتی ہے)
اگر ایک گھر میں چھ افراد کی اوسط کا حساب لگایا جائے تو دعوت اسلامی روزانہ تین لاکھ مسلمانوں کو روٹی کھلاتی ہے۔۔۔ (اور سارا سال کھلاتی ہے)

آپ کے لیے کتنی بڑی خوش نصیبی ہے کہ آپ کا پیسہ قرآن پڑھنے پڑھانے والے لوگوں کی تنخواہوں میں استعمال ہوتا ہے

اس لیے دعوت اسلامی کے *ٹیلی تھون* میں دل کھول کر یونٹس جمع کرائیں۔۔۔ اور ہر بار جمع کرائیں
*(اطلاع عام کاشف مدنی)*
شکریہ جزاک اللہ الخیرا
*dawateislami*