ناصبی فرقے کے باطل عقائد و نظر یات

ناصبی فرقے کے باطل عقائد و نظریات

دیگر فتنوں اورفرقوں کی طرح ناصبی فرقہ بھی منظر عام پر آیا یہ فرقہ بھی گمراہ ہے اس فرقے کی بیماری یہ ہے کہ یہ اپنے جلسوں اور اپنے لٹر یچر کے ذریعہ خبا ثتیں پھیلاتے ہیں اس فرقے کے کچھ بنیادی نظریات ہے یہ لوگ عوام لنّاس میں خاموشی سے داخل ہوجاتے ہیں اس فرقے کی کوئی بڑی تعداد نہیں ہے چند بنیاد پرست اور اپنے نام اور اپنی ناک کو اونچا رکھنے کے لئے جاہل مولوی اس فتنے کو فروغ دیتے رہے ہیں ۔

ان کے گمراہ کن عقائد یہ ہیں

عقیدہ :اہلبیت اطہار سے حسد رکھنا۔

عقیدہ :اہلبیت اطہار کی شان گھٹانے کی ناکام کوشش میں حضرات صحابہ کرام علیہم الرضوان کا نام استعمال کرنا ۔

عقیدہ :حضرت علی رضی اللہ عنہ سے مکمل بغض و عداوت رکھنا جنگِ جمل کو آڑ بنا کر حضرت علی رضی اللہ عنہ

کی ذات پر تبرّا کرنا ۔

عقیدہ :واقعہ کر بلا رونما ہونے کا مکمل انکار کرنا بلکہ یہ کہہ دینا کہ اہلبیت اطہار کا قافلہ جارہا تھا راستے میں ڈاکوؤں نے لوٹ لیا یعنی واقعہ کربلاکو مَن گھڑت کہنا ۔

عقیدہ :حضرت امامِ حسین رضی اللہ عنہ پر الزام لگا نا کہ آپ رضی اللہ عنہ کر سی اورحکومت کے لئے کربلا گئے ۔

عقیدہ :حضرت امامِ حسین رضی اللہ عنہ پر الزام لگا نا کہ آپ رضی اللہ عنہ مدینے سے کربلا گئے کیوں نہ وہ جاتے نہ یہ واقعہ ہوتا ۔

عقیدہ :حضرت امامِ حسین رضی اللہ عنہ پر یزید کو فوقیت دینا۔

عقیدہ :یزید کو حضرت یزید رضی اللہ عنہ اور امیر المومنین کہنا ۔

عقیدہ : یزید کوجنّتی کہنا ۔

عقیدہ :حضرت فاطمہ رضی اللہ عنہا پر طعنہ زنی کرنا ۔

عقیدہ :ـسر کار ﷺکی کچھ ازواج مطہرات پر بیہو دہ الزامات لگانا ۔

یہ عقائد رکھ کر قوم میں ایک انتشار پید ا کرنا ناصبی فرقے کا اہم مقصد ہے جس میں مولوی شاہ بلیغ الدین کا اہم کردار ہے موجودہ دور میں اس بلیغ الدین نے اپنی تقریر وں کے ذریعہ اھلبیت سے مکمل عداوت کا ثبوت دیا حکومت پاکستان نے اس کی کئی تقاریر پر پابندی بھی عائد کی اور اس پر بھی پابندی لگادی ۔

بلیغ الدین کی کیسٹ ہمارے ریکارڈ میں موجود ہے یہ جلسے میں موجود عوام سے امیر المومنین یزید کا نعرہ لگواتا تھا ۔ناصبی فرقہ بھی گمراہ فرقہ ہے اس سے بھی بچناچاہئیے ۔

٭٭٭٭٭

فاضلِ عالمِ رویا ، مولوی طاہر القادری صاحب جھنگوی الکینیڈوی

ہر تیسرا بندہ چوتھی جماعت کے کارنامے گنوانے میں مصروف عمل ہے ، تو سوچا کیوں نہ فاضلِ عالمِ رویا ، مولوی طاہر القادری صاحب جھنگوی الکینیڈوی کا بچپن بھی ملاحظہ فرمالیں ، کہ آپ جب فقط "11 سال”کے تھے ، تو آپ کون کون سی کتب پڑھ کر فارغ ہوچکے تھے ۔😁

ارسلان احمد اصمعی قادری 4-2-2019ء

ڈاکٹرطاہرالقادری کا شرعی مواخذہ

خانقاہِ اشرفیہ حُسینیہ سرکار کلاں درگاہِ کچھوچھہ شریف انڈیا سے تازہ تازہ رد

 شواہد و دلائل کی روشنی میں ڈاکٹرطاہرالقادری کا شرعی مواخذہ طاہر القادری کا شرعی مواخذہ

مفتی رضا الحق اشرفی 

طاہرالقادری کا شرعی مواخذہ

نیچری فرقے کے عقائد و نظریات

نیچری فرقے کے عقائد و نظریات

نیچری وہ فرقہ ہے جس کا عقیدہ یہ ہے کہ جیسی آدمی کی نیچر ہو ویسا دین ہونا چاہئیے مطلب یہ کہ

اللہ تعالی اور اس کے حبیب ﷺکے احکامات و قوانین کا نام دین نہیں ہے بلکہ جو آدمی کی نیچر ہو ویسا دین ہونا چاہئیے اس فرقے کو نیچری کہتے ہیں نیچری فرقے کا بانی سر سیّد احمد خان ہے۔سرسید احمد خان خود نیچری تھااس کے نظر یات باطل تھے ۔

سرسیّد کے اسلام کے خلاف جرائم اور اسکے کفریہ عقائد}

سرسیّد کے خاص اور چہیتے شاگرد اور پہنچے ہوئے پیروکار خالد نیچری کی خاص پسندیدہ شخصیت ضیاء الدین نیچری کی کتاب ’’خود نوشت افکار سر سیّد‘‘ کی چند عبارتیں آپ کے سامنے پیش کی جاتی ہیں ۔

عقیدہ :خدا نہ ہندو ہے نہ عرضی مسلمان ،نہ مقلّد نہ لا مذہب نہ یہودی نہ عیسائی بلکہ وہ تو پکا چھٹا ہوا نیچری ہے ۔(بحوالہ :کتاب :خود نوشت ص63)

عقیدہ :خدانے اَن پڑھ بد ؤوں کے لئے ان ہی کی زبان میں قرآن اُتارا یعنی سرسیّد کے خیال میں قرآن انگریزی جو اس کے نزدیک بہتر واعلیٰ زبان ہے اس میں نازل ہو نا چاہئے لیکن خدا نے اَن پڑھ بدؤں کی زبان عربی میں قرآن نازل کیا ۔(معاذاللہ )(بحوالہ :کتاب :خود نوشت )

عقیدہ :شیطان کے متعلق سرسیّد کا عقیدہ یہ تھاکہ وہ خود ہی انسان میں ایک قوّت ہے جو انسان کو سیدھے راستے پر سے پھیر تی ہے ۔شیطان کے وجود کو انسان کے اندر مانتا ہے انسان سے الگ نہیں مانتا ۔

(بحوالہ :کتاب :خود نوشت ص 75)

عقیدہ :حضرت آدم علیہ السلام کا جنّت میں رہنا ،فرشتوں کا سجدہ کرنا ،حضرت عیسیٰ علیہ السلام اور امام مہدی رضی اللہ عنہ کا ظہور ،دجال کی آمد ،فرشتے کا صور پھونکنا ،روز جزا و سزا ، میدان حشرو نشر ، پل صراط، حضور ﷺکی شفاعت ،اللہ تعالیٰ کا دیدار ان سب عقائد کا انکار کیا ہے جو کہ قرآن و حدیث سے ثا بت ہیں ۔(بحوالہ :کتاب :خود نوشت ص 24تا132)

عقیدہ :خلفائے راشدین رضوان اللہ علیہم اجمعین کے بارے میں یہ کہتا ہے کہ خلافت کا ہر کسی کو استحقاق تھا جس کی چل گئی وہ خلیفہ ہوگیا ۔(بحوالہ :کتاب :خود ونوشت ص 233)

عقیدہ :حج میں قربانی کی کوئی مذہبی اصل قرآن سے نہیں پائی جاتی آگے لکھتا ہے کہ اس کا کچھ بھی نشان مذہب اسلام میں نہیں ہے حج کی قربانیاں درحقیقت مذہبی قربانیاں نہیں ہیں ۔(معاذاللہ )

(بحوالہ :کتاب :خو د نوشت ص 139)

عقیدہ :الطاف حسین حالی حیاتِ جاوید میں لکھتا ہے کہ جب سہانپور کی جامع مسجد کے لئے ان سے چندہ طلب کیا گیا تو انہوں نے (سر سیدنے )چندہ دینے سے انکار کر دیا اور لکھ بھیجا کہ میں خدا کے زندہ گھروں (کالج )کی تعمیر کی فکر میں ہو ں اور آپ لوگوں کو اینٹ مٹی کے گھر کی تعمیر کا خیال ہے ۔ص 101(معاذاللہ )

ٍ اعلحٰضرت امام اہلسنّت مولانا شاہ احمد رضا خا صاحب محدّث بریلی علیہ الرحمہ نے اسکے لٹر یچر وغیرہ کے تجز ئیے کے بعد یہ فتویٰ دیا ہے کہ سرسیّد احمد خان نیچری گمراہ آدمی تھا ۔

دیوبندی فرقے کے مولوی یوسف بنوری نے اپنے بڑے مولوی انور شاہ کشمیری کی کتاب ’’مشکلات القرآن‘‘ کے مقدمے تتمۃالبیان ص 30پر سر سید کے کفر یات کا تذکرہ کرتے ہوئے لکھا کہ سر سید زند یق ،ملحد اورجاہل گمراہ تھا ۔

محترم حضرات !سر سید احمد خان فرقہ وہابیت سے تعلق رکھتا تھا بعد میں اس نے نیچری فرقے کی بنیاد رکھی انگریزوں کا ایجنٹ ،نام نہاد لمبی داڑھی والا مسٹر احمد خان بھی کچھ اس قسم کا آدمی تھا جسکی وجہ سے اسکے ایمان میں بگاڑ پیدا ہوا اور آہستہ آہستہ اس نے اسلامی حقائق و عقائد کا مذاق اڑانا شروع کی اور بے ایمان ،مر تد اور گمراہ ہوگیا ۔

دینِ اسلام میں نیچری سوچوں کے لئے کوئی جگہ نہیں ہے اللہ تعالیٰ اوراسکے رسول ﷺکے مقرّر اور بیان کردہ قوانین پر عمل کرنے کا نام اسلام ہے ۔

سر سید احمد خان ’’سید‘‘نہ تھا بلکہ مسٹر احمد خان تھا اس کو اسلام کا خیر خواہ کہنے والے اس کے باطل عقائد پڑھ کر ہوش کے نا خن لیں اس کو اچھا آدمی کہہ کر یا لکھ کر اپنے ایمان کے دشمن نہ بنیں کیونکہ ہر مکتبہ فکر کا عالم مسٹر احمد خان (سر سید احمد خان )کو نیچری فرقہ کا بانی ،گمراہ اور زند یق لکھتا ہے ۔

ڈاکٹر طاہر القادری کا اعلی حضرت امام احمد رضا سے موازنہ؟

باسمہ تعالی و تقدس

ڈاکٹر طاہر القادری کی تصانیف کی واقعی حقیقت اور علمی حیثیت بتلانے والی سنجیدہ اور مدلل تحریر:

*ڈاکٹر طاہر القادری کا اعلی حضرت امام احمد رضا سے موازنہ؟*

تحریر:۔ *خالد ایوب مصباحی شیرانی* 

khalidinfo22@gmail.com

مسلمانوں کے جاہلانہ جذبات کا افسوس ناک پہلو ہے، وہ کسی کو ماننے یا نہ ماننے یعنی کسی کی خدمات کا اعتراف کرنے اور کسی کی خدمات کا دائرہ پہچاننے کا بھی سلیقہ نہیں رکھتے۔ دودھ میں کھیر کی آمیزش کرنے کا یہ وہ بھیانک مغالطہ ہے جو گاہے گاہے انسان کو فکری دیوالیہ اور ذہنی مریض بنا دیتا ہے۔ اس قسم کے جاہلانہ جذبات کا سب سے زیادہ نقصان یہ ہوتا ہے کہ اس طرح کے افراد چوں کہ محض جذباتی ہوتے ہیں، جن کی نہ اپنی کوئی فکر ہوتی ہے اور نہ ان کے پاس مطلوبہ علم، اس لیے کسی کی خدمات کا اعتراف کرتے ہیں تو اتنا زیادہ کہ اب اس کے آگے کسی دوسرے کی خدمات کو نہ صرف نظر انداز کر جاتے ہیں بلکہ کبھی کبھی اہانت مومن کے بھی مرتکب ہو جاتے ہیں اور یہ بھول جاتے ہیں کہ کسی کی تعظیم کے لیے کسی کی توہین یا کسی کی ستائش کے لیے کسی کی اہانت خلاف انسانیت ہی نہیں، بجائے خود ایک جرم بھی ہے۔ اسی طرح کسی کی خدمات کو نکارتے ہیں تو یوں جیسے اس کی اپنی واقعی خدمات بھی کالعدم ہیں۔ 

ماضی قریب میں مذہبی دنیا پر شخصیت پرستی کا یہ رنگ غالب رہا اور افسوس اس بات کا ہے جو طبقات یا افراد اس کے خلاف کھڑے ہوئے وہ بھی ایک شخصیت سے بھاگ کر دوسری شخصیت کے دامن میں جا چھپے گویا آسمان سے گرے بھی تو کھجور میں اٹکے کیوں کہ ایسے غیر سنجیدہ افراد کا مقدر آخر اٹکنا ہی تھا۔ اس تعداد میں بیشتر لوگ وہ ہوتے ہیں جن کا اپنا کوئی وجود یا کام نہیں ہوتا کیوں کہ جو خود با کار افراد ہوتے ہیں، انھیں اس بے برکتی کے دور میں اتنی فرصت کہاں کہ وہ ترازو لے کر گلی گلی چکر لگاتے پھریں اور اپنی قیمتی زندگی اسی بے کاری کے حوالے کر دیں۔ 

اعلی حضرت امام رضا خاں محدث بریلوی علیہ الرحمہ (1272 ھ/ 1856 ء ۔ 1440 ھ/ 1921ء) چودہویں صدی کے مجدد، عظیم فقیہ ، سچے عاشق رسول ، بارگاہ رسالت پناہ ﷺ میں مقبول شخصیت اور عبقری عالم ربانی تھے۔ آپ نے بیک وقت علم و عمل، فکر و اعتقاد، فقہ و فتوی، دعوت و تبلیغ اور شخصیت سازی کے میدانوں میں نمایاں کار نامے انجام دیے۔آپ کا سب سے نمایاں کار نامہ احقاق حق اور ابطال باطل ہے جسے آپ نے قلمی جہاد کے طور پر انجام دیا۔ آپ کے قلم حق رقم نے تجدیدی شان کے ساتھ امت کے درمیان علمی وراثت تقسیم کی۔ فتنوں کی سرکوبی کی۔وہ گنجلک مسائل جن کی پیچیدگی کے آگے حضرت امام ابن عابدین شامی جیسے لوگ حیران نظر آتے ہیں، آپ نے بڑی آسانی سے حل کر دکھائے۔

آپ کے دار الافتا میں بیک وقت پانچ سو تک استفتا جمع ہوجاتے تھے اورتقریبا دس مفتیوں کے برابر کام ہوتا، لیکن آپ تنہا انجام دیتے۔آپ سے عوام و خواص کے علاوہ ریاست رام پور، خان پور کچہری اور چیف کورٹ بہاول پور کے ججوں نے بھی استفتا کیے اور آپ کے فتووں پر اپنے فیصلوں کی بنیاد رکھی۔ رَوسَر چینی، کاغذ کے نوٹ، منی آرڈر، فوٹو گرافی اورتاڑی سے خمیر شدہ آٹے کے احکام جیسے مشکل مسائل پر آپ نے تن تنہا جس عالی ہمتی کے ساتھ علمی تحقیق کی، یہ آپ ہی کا حصہ تھا۔ کاغذ کے نوٹ کے تعلق سے جب علمائے مکہ مکرمہ پریشان ہوئے تو بات مفتی اعظم مکہ مکرمہ شیخ جمال بن عبد اللہ مکی علیہ الرحمہ تک پہنچی لیکن وہ بھی اس جدید مسئلے کاحل نہ کر سکے اور دیانت داری کے ساتھ لکھا: المسئلۃ حدیثۃ، والعلم امانۃ فی اعناق العلماء” مسئلہ نیا ہے اور علم علما کی گردنوں میں امانت ہے۔ 

1323ھ/ 1905ء میں جب اعلی حضرت علیہ الرحمہ دوسری بار زیارت حرمین شریفین کے لیے تشریف لے گئے تو مکہ مکرمہ کے علمائے کرام مولانا عبد اللہ احمد میردادامام مسجد حرام اور ان کے استاد مولانا حامد احمد محمد جداوی علیہما الرحمہ نے نوٹ سے متعلق بارہ سوالات پر مشتمل استفتا اعلی حضرت قدس سرہ کی خدمت میں پیش کیا، آپ نے شنبہ 21/ محرم کو جواب شروع کیا اور دو شنبہ 23/ محرم کو چاشت کے وقت”کفل الفقیہ الفاھم فی احکام قرطاس الدراھم” کے نام سے مکمل کر دیا۔ درمیان میں بخار کی وجہ سے وقفہ بھی ہوتا رہا۔ (خلاصہ: خطبہ صدارت، از: علامہ محمد مصباحی، بموقع: 25/واں فقہی سیمینار منعقدہ 18۔20/ ربیع النور 1440)

اعلی حضرت امام احمد رضا خاں محدث بریلوی کی فقہی بصیرت اور عظیم فقہی خدمات کی شافی تفصیل کےلیے اس موضوع پر تحریر کردہ کتب سے مراجعت کرنی چاہیے۔جو بھی انصاف پسند آپ کی ان عظیم خدمات کو کھلے دل سے پڑھے گا، وہ آپ کی عبقریت ویسے ہی تسلیم کرنے پر مجبور ہوگا، جیسے اب تک عرب و عجم کی کوئی درجنوں فتوحات کا سلسلہ آپ کے نام رہا ہے۔ 

فقہ اعلی حضرت امام احمد رضا خاں علیہ الرحمہ کا سب سے نمایاں میدان تھا لیکن فقہ ہی آپ کا میدان تھا، ایسا نہیں۔ آپ کے علوم و معارف کا دائرہ حیران کن حد تک وسیع ہے جس کی جھلک خود آپ نے پچپن علوم کی شکل میں پیش کی ہے جبکہ جدید تقاضوں کے اعتبار سے علوم کی جو ذیلی شاخیں پھوٹی ہیں، اس نظر سے دیکھا جائے تو آج کےماڈرن ایج میں آپ کے ان علوم و معارف کی فہرست میں دنیا جہان کے ایک سو بیس علوم سمو آتے ہیں۔ 

کسی شخصیت کا بیک وقت اتنے علوم و فنون کا حاصل کر لینا بجائے خود ایک کرشمہ ہے، ان کا ماہر ہو پانا اور پھر اپنی مہارت کے آثار پیش کر دینا واقعتاً بہت بڑی کرامت ہے لیکن اعلی حضرت امام احمد رضا خاں کی عبقریت یہ ہے کہ آپ نےممکنہ اعتراضات کا قلع قمع کرتے ہوئے ان پچپن علوم میں اپنے یادگار اور حیران کن علمی اور قلمی نقوش بھی چھوڑے ہیں۔ پہلے آپ کے مطابق ان پچپن علوم کی فہرست دیکھیے:

(١) علم القران (٢) حدیث (٣) اصول حدیث (٤) فقہ حنفی (٥) کتب فقہ جملہ مذاہب (٦) اصولِ فقہ (٧) جدل مہذب (٨) علم تفسیر (٩) عقائد و کلام (١٠) نحو (١١) صرف (١٢)معانی (١٣) بیان (١٤) بدیع (١٥) منطق (١٦) مناظرہ (١٧) فلسفہ (١٨) تکسیر (١٩) ہیئت (٢٠) حساب (٢١) ہندسہ (٢٢) قرأت (٢٣) تجوید (٢٤) تصوف (٢٥) سلوک (٢٦) اخلاق (٢٧) اسماء الرجال (٢٨) سیر (٢٩) تاریخ (٣٠) لغت (٣١) ادب معہ جملہ فنون (٣٢) ارثما طیقی (٣٣) جبر و مقابلہ (٣٤) حساب سینی (٣٥) لوگارثمات (٣٦) توقیت (٣٧) مناظرہ مرایا (٣٨) علم الاکر (٣٩) زیجات (٤٠) مثلث کروی (٤١) مثلث سطح (٤٢) ہیئت جدیدہ (٤٣) مربعات (٤٤) جفر (٤٥) زائرچہ (٤٦) نظم عربی (٤٧) نظم فارسی (٤٨) نظم ہندی (٤٩) نثر عربی (٥٠) نثر فارسی (٥١) نثر ہندی (٥٢) خط نسخ (٥٣) نستعلیق (٥٤) تجوید (٥٥) علم الفرائض ۔(اعلی حضرت امام احمد رضا کے تجدیدی کارنامے اور علوم و فنون کی فہرست، بحوالہ: الاجازۃ الرضویہ۔ از: علامہ نسیم احمد صدیقی)

یہ وہ فہرست ہے جو اعلی حضرت علیہ الرحمہ نے حافظ کتب حرم شیخ اسماعیل خلیل مکی کو سند اجازت دیتے وقت ذکر کی ہے۔ اس فہرست میں وہ کئی علوم نظر نہیں آئیں گے جنھیں آج ہمارے بچے پڑھتے ہیں کیوں کہ اعلی حضرت علیہ الرحمہ کی تیار کردہ یہ فہر ست بھی بہت جامع ہے۔ اس میں ذکر کردہ کچھ علوم وہ ہیں جن سے بعد میں کئی شاخیں نکلی ہیں اور جن کی شناخت کے لیے دور جدید کے ماہرین تعلیم نے الگ الگ عنوانات مختص کیے ہیں ۔ اسی وجہ سے دور حاضر کے اعتبار سے اس فہرست کو پھیلایا جائے تو یہ اب تقریبا ایک سو بیس علوم و فنون پر مشتمل ہوتی ہے ۔ان دعووں کے مدلل نقوش دیکھنے کے لیے ماہ نامہ ” پیغام شریعت” دہلی کا ” مصنف اعظم نمبر” دیکھنا چاہیے۔

"المیزان” بمبئی کے ایڈیٹر سید محمد جیلانی بن سید محامد اشرف نے سچ لکھا ہے:

”اگر ہم ان کی علمی و تحقیقی خدمات کو ان کی 66 سالہ زندگی کے حساب سے جوڑیں تو ہر 5 گھنٹے میں امام احمد رضا ایک کتاب ہمیں دیتے نظر آتے ہیں ، ایک متحرک ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کا جو کام تھا ،امام احمد رضانے تن تنہا انجام دے کر اپنی جامع شخصیت کے زندہ نقوش چھوڑے۔ (المیزان، امام احمد رضا نمبر مارچ ١٩٧٦)

علمی مہارتیں، قلمی جہاد اور فکری محاذ آرائیاں اعلی حضرت امام احمد رضا خاں علیہ الرحمہ کا وہ سدا بہار گلشن ہے جس کی تحقیق کر کر کے اب تک کئی درجن لوگ پی ایچ ڈی ہولڈر بن چکے ہیں لیکن آپ علیہ الرحمہ کا کل کار نامہ یہی نہیں، شخصیت سازی بھی آپ کی محیر العقول شخصیت کا نہایت نمایاں پہلو ہے۔

آپ کے تلامذہ اور خلفا کی فہرست پر نظر ڈالنے والا ہر انصاف پسند اس بات کا اعتراف کرے گا کہ آپ گویا شمع معرفت ہیں جس کے پروانوں میں سے ہر پروانے کی اپنی جدا شان ہے اور آپ کے علمی بوستان سے مہکنے والے ہر گل کی جدا رنگت، جدا بو۔ اس اجمال کی تفصیل کی جائے تو بات بڑی لمبی ہو جائے گی، اس لیے اس اشارے کو کافی سمجھا جائے۔ 

سر دست اس تعارف کی ضرورت یوں پیش آئی کہ ادھر کچھ عرصے سے کچھ جذبات سے مغلوب دیوانےہوش و خرد ہی نہیں دیانت و عدالت بالائے طاق رکھ کر اعلی حضرت امام احمد رضا خاں محدث بریلوی علیہ الرحمہ کی نابغہ روزگار شخصیت کا موازنہ ڈاکٹر محمد طاہر القادری سے کر رہے ہیں اور ڈاکٹر صاحب موصوف کی بے جا بجا تصانیف نما کتابوں کی چکاچوند کے پیچھے چھپے حقائق کا گلہ گھونٹ رہے ہیں۔ آئیے! حقائق تک رسائی کے لیے ڈاکٹر صاحب پر بھی ایک نظر ڈال لیتے ہیں: 

ڈاکٹر محمد طاہر القادری بن ڈاکٹر فرید الدین قادری 19/ فروری 1951ء کو پاکستان کے ضلع جھنگ میں پیدا ہوئے۔1955ء سے 1986ء تک علمی مراحل طے کیے۔ آپ کی تعلیمی صلاحیتوں میں درس نظامی کورس، اسلامیات میں ایم اے، اسلامی فلسفہ عقوبات میں پی ایچ ڈی اور قانون کی تعلیم ہے۔ 1974ء سے 1988ء تک آپ مختلف تعلیمی اداروں کی تدریس سے وابستہ رہے اور اسی دوران شعبہ وکالت سے بھی وابستہ رہے۔ 1980ء میں آپ نے "ادارہ منہاج القرآن ” کی بنیاد رکھی اور یہی آپ کی زندگی کا سب سے قیمتی اثاثہ ہے۔ 

اس میں کوئی دو رائے نہیں کہ ادارہ منہاج القرآن اور اس کے بانی ڈاکٹر محمد طاہر القادری نے دعوت دین کے میدان میں قابل قدر خدمات انجام دی ہیں اور اس میں بھی شک نہیں کہ جدید ذرائع ابلاغ کا دینی کاز کے لیے جتنے سلیقے سے اس ادارہ نے استعمال کیا ہے، بہت کم دینی تحریکوں اور اداروں نے کیا یا بہت دیر بعد کیا۔یہ بھی تسلیم کہ ڈاکٹر محمد طاہر القادری کے خطبات اور کتابوں نے نئی نسل کی بڑی دینی ضرورتیں پوری کیں اور یہ بھی بجا کہ ڈاکٹر صاحب کی پوری شناخت ان کے یہی کارنامے ہیں۔ لیکن جس طرح ان واقعی خوبیوں کا اعتراف نہ کرنا، تعصب ہوگا، اسی طرح ڈاکٹر صاحب کو ان کے قد سے کئی گنا بڑا مرتبہ دینا یا ان کے گم راہ نظریات کی بھی تائید و حمایت کرنا اسلامی مزاج کے سراسر خلاف ہے کیوں کہ اسلامی نقطہ نظر سے کوئی بھی شخصیت اسی وقت قابل قبول ہو سکتی ہے جب وہ ایمان و عقیدے کی سلامتی کے تمام معیارات پر کھری اترے، عقیدے کے ساتھ سمجھوتے کر لینے والی یا اپنے عقائد حقہ میں باطل نظریات کی آمیزش کرنے والی ہر بڑی سے بڑی شخصیت کو اسلام بحیثیت اسلام محترم نہیں قرار دے سکتا۔

اسی طرح کسی شخصیت کا اسلامی خدمات انجام دینا، اس کی حقانیت کی دلیل نہیں ہو سکتا کیوں کہ اللہ رب العزت حکیم و قدیر ہے، وہ اپنے دین کی خدمت کسی سے بھی لے سکتا ہے۔ مختار ثقفی کے کار نامے اور اس کا انجام اس کی بڑی دلیل ہے، حال میں بھی اس کی بہت مثالیں ہیں۔ یہ وہ بنیادی غلط فہمی ہے جس کے کئی لوگ شکار ہیں۔ 

اوپر جس شخصیت پرستی کا ذکر ہوا، ڈاکٹر صاحب کے چاہنے والوں کو بھی ان کی محبتوں کا کچھ ایسا فوبیا ہے کہ وہ ان کی چاہت میں علمی دیانتوں کے تمام تقاضے فراموش کر گئے۔ اس وقت حد ہو گئی جب کچھ دیوانوں نے ڈاکٹر صاحب کا اعلی حضرت امام احمد رضا خاں علیہ الرحمہ سے موازنہ شروع کر دیا اور کھلے بندوں یہ کہنے لگے: اعلی حضرت محض ایک مفتی تھے، جبکہ ڈاکٹر صاحب عظیم مصنف ہیں، ان کی تصانیف کی تعداد اتنی اتنی ہے۔ 

اگر دنیا میں انصاف زندہ ہے تو ہمیں یہ لکھنے میں کوئی باک نہیں کہ ڈاکٹر طاہر القادری اپنی تمام تر علمی اور معنوی خوبیوں کے باوجود نہایت شاطر دماغ، استحصال مزاج اور علمی طور پر دیانتوں کا خون کرنے والا شخص ہے۔ یہ محض ایک دعوی نہیں، اس کے پیچھے درج ذیل دلائل کے انبار بھی ہیں۔ 

ڈاکٹر صاحب کے ادارہ منہاج القرآن کا علمی، تحقیقی اور تصنیفی شعبہ ہے ” فرید ملت ریسرچ انسٹی ٹیوٹ” جس کی بنیاد 7/ دسمبر 1987 میں رکھی گئی۔ جیسا کہ نام سے ظاہر ہے یہ شعبہ ڈاکٹر محمد طاہر القادری کے والد سے منسوب ہے۔ اس شعبے کے مقاصد اور ذیلی شعبہ جات کیا کچھ ہیں، ادارہ کے ویکی پیڈیا پیج پر یوں پیش کیے گئے ہیں: 

(1) شعبہ تحقیق و تدوین (2) ریسرچ ریویو کمیٹی (3) مرکزی لائبریری(4) شعبہ ترجمہ (5) شعبہ انفارمیشن ٹیکنالوجی (6) شعبہ کمپوزنگ (7) شعبہ نقل نویسی (8) شعبہ خطاطی (9) شعبہ مسودات و مقالہ جات (10) شعبہ ادبیات (11) دار الافتا (12) شعبہ تحقیقی تربیت

فرید ملت ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے قیام کے وقت اس کے درج ذیل مقاصد متعین کیے گئے:

اسلام کے حقیقی پیغام کی تبلیغ و اشاعت۔تحریک منہاج القرآن کی فکر کی ترویج۔نئی نسل کو بے یقینی، اخلاقی زوال اور غیر مسلم اقوام کی ذہنی غلامی سے نجات دلانے کے لیے اسلامی تعلیمات کی جدید ضروریات کے مطابق اشاعت۔مذہبی اذہان کو علم کے میدان میں ہونے والی جدید تحقیقات سے روشناس کرانا۔راہ حق سے بھٹکے ہوئے مسلمانوں کو اپنا صحیح ملی تشخص باور کرانا۔مسلم امہ کو درپیش مسائل کا مناسب حل تلاش کرنا۔نوجوان نسل کو دین کی طرف راغب کرنا۔تحریک منہاج القرآن سے وابستہ افراد کی علمی و فکری تربیت کا نظام وضع کرنا اور تربیتی نصاب مدون کرنا۔ (( تحریک منہاج القرآن سے وابستہ تمام اہل قلم کو مجتمع کرنا اور ان کی صلاحیتوں کو تحریک کے پلیٹ فارم پر جہاد بالقلم کے لیے بروئے کار لانا))۔ملکی و بین الاقوامی سطح پر تمام اہل قلم تک تحریک کی دعوت بذریعہ قلم پہنچانا اور انہیں مصطفوی مشن کے اس پلیٹ فارم پر جمع کرنا۔تحریک کی دعوت بذریعہ قلم پھیلانے کے لیے اس کے اساسی و فکری موضوعات پر مضامین اور تحقیقی مقالات تیار کرنا اور انہیں ذرائع ابلاغ تک پہنچانا۔تحریک کی دعوت بذریعہ قلم پھیلانے کے لیے علمی اور فکری موضوعات پر کتب تصنیف کرنا اور تحقیقی ضروریات پورا کرنا۔((قائد تحریک کے مختلف دینی، سماجی، اقتصادی، سیاسی و سائنسی، اور اخلاقی و روحانی موضوعات پر فکر انگیز ایمان افروز خطابات کو کتابی صورت میں مرتب کروانا))۔ ریسرچ اسکالرز سے اہم موضوعات پر تحقیقی مواد تیار کروانا اور اسے شائع کروانا۔جدید اسلوب تحقیق اور عصری تقاضوں کے مطابق اسلامی ورثہ کو نسل نو کی طرف منتقل کرنا۔(ویکی پیڈیا پیج:فرید ملت ریسرچ انسٹی ٹیوٹ)

ہم اس میں کوئی شک نہیں کرتے کہ ان مقاصد میں سے ہر مقصد میں خلوص رہا ہوگا لیکن اس عبارت کا پہلا جملہ ہی بتا رہا ہے، یہ مقاصد متعین تھے، پورے نہیں ہوئے، بارہ شعبہ جات نے مل کر اوپر ڈبل قوسین کے درمیان ذکر کردہ دو مقاصد کی تکمیل پر زور رکھا اور تحریک سے جڑے تمام سادہ لوح اور جذباتی لوگوں کی صلاحیتوں کو نچوڑ کر قائد تحریک ڈاکٹر طاہر القادری کے مختلف دینی، سماجی، اقتصادی، سیاسی و سائنسی، اور اخلاقی و روحانی موضوعات پر دیے گئے خطابات کو کتابی صورت میں مرتب کرنے پر محنت کی اور آج ڈاکٹر صاحب کی کئی سو کتابیں اسی استحصال کا نتیجہ ہیں۔ 

قارئین! یقین کریں! ڈاکٹر صاحب کی تصانیف کا بنیادی راز یہی ہے۔ ان کی تصانیف نما ضخامتوں کے پیچھے بارہ تنخواہ یافتہ شعبہ جات کام کر رہے ہیں اور سچ یہ ہے کہ ان مطبوعہ کتابوں کے ٹائٹل پر ” شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہر القادری” کا سنہرا نام ضرور رہتا ہے لیکن در اصل آں جناب کا اپنی ایسی تصانیف میں کوئی خاطر خواہ کردار نہیں ہوتا۔ یقین نہ ہو تو ڈاکٹر صاحب کی طرف سے فراہم کردہ معلومات کے مطابق دیکھیے کہ ڈاکٹر صاحب کی تصانیف کے پیچھے کن بے چارے اور مظلوم کرائے داروں کی محنتیں کام کر رہی ہیں۔ 

ویکی پیڈیا کے مطابق فرید ملت ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے الگ الگ شعبہ جات میں صرف اہم ذمہ داروں کے طور پر اب تک جو لوگ کام کر چکے ہیں، ان کی اجمالی فہرست یہ ہے: (1)لیکچرر محمد صدیق قمر، (2) علامہ ظہور الہٰی،(3) علامہ محمد امین مدنی (4) پروفیسر مستنیر علوی (5) ڈاکٹر علی اکبر ازہری (6) رانا جاوید مجید قادری، (7)پروفیسر محمد اشرف چودھری، (8) پروفیسر محمد رفیق نقشبندی، (9) ڈاکٹر نعیم انور نعمانی، (10) ریاض حسین چودھری، (11) ناصر اقبال ایڈووکیٹ، (12) شیخ عبدالعزیز دباغ، (13)قمر الزمان شیخ، (14) ڈاکٹر طاہر حمید تنولی، (15) ڈاکٹر کرامت اللہ، (16)محمد فاروق رانا، (17)پروفیسر نصر اللہ معینی، (18)ضیاء اللہ نیر، (19)پروفیسر محمد الیاس قادری، (20) ڈاکٹرمحمد نواز ازہری، (21) ڈاکٹرمحمد ارشد نقشبندی، (22) علامہ محمد الیاس اعظمی، (23) علامہ محمد رمضان قادری، (24) محمد علی قادری، (25) محمد تاج الدین کالامی،(26) محمد افضل قادری، (27) عبدالجبار قمر،(28) علامہ سہیل احمد صدیقی، (29) ابو اویس محمد اکرم قادری، (30) محمد حنیف، (31) حافظ فرحان ثنائی، (32) حافظ ظہیر احمداسنادی، (33) اجمل علی مجددی (34) حسنین عباس (35) ڈاکٹر محمد ظہور اللہ ازہری، (36) سید قمر الاسلام ضیغم، (37) ڈاکٹر فیض اﷲ بغدادی، (38) حافظ محمد ضیاء الحق رازی (39) حافظ مزمل حسین بغدادی، (40) پروفیسر محمد نواز ظفر، (41) مفتی عبدالقیوم خان ہزاروی، (42) ممتاز الحسن باروی، (43) شبیر احمد جامی، (44)ڈاکٹر رحیق احمد عباسی، (45)پروفیسر افتخار احمد شیخ، (46) پروفیسر محمد رفیق، (47) عاصم نوید، (48) یونس علی بٹر (49)جاوید اقبال طاہری، (50) امانت علی چودھری، (51) ڈاکٹر زاہد اقبال، (52) تحسین خالد، (53) فاروق ارشاد، (54) محمد یامین، (55)عبد الخالق بلتستانی، (56) حامد سمیع، (57) محمد نواز قادری، (58) کاشف علی سعید، (59) سلیم حسن، (60) غلام نبی قادری، (61) حافظ محمد طاہر علوی، (62) مقصود احمد ڈوگر، (63) محمد افتخار، (64) ظہیر احمد سیال، (65)علامہ حافظ حکیم محمد یونس مجددی، (66)محترم محمد اخلاق چشتی، (67)محمد یوسف نظامی، (68) سلام شاد، (69) شاہد محمود، (70) علامہ حافظ سراج سعیدی، (71) فریدہ سجاد، (72) مصباح کبیر، (37) نازیہ عبدالستار، (74) رافعہ علی، (75) آسیہ سیف قادری، (76) کوثر رشید، (77) جامعہ اسلامیہ منہاج القرآن کی منتہی کلاسوں کے طلبا ۔

اس فہرست میں شیخ الاسلام کی تقریرو ں سے کتاب بنانے والے نقل نویس، کتاب کو تحقیقی رنگ دینے والے محققین، تحقیق میں تخریج کا رنگ بھرنے والے ریسرچ اسکالرز، کتاب کو ادبی رنگ دینے والے ارباب ادب، کتابوں کی کمپوزنگ کرنے والے ٹائپسٹ اور کتابوں کو دوسری زبانوں میں ڈھالنے والے مترجمین سب شامل ہیں یعنی یہ پوری ٹیم ہے، 1987 سے 2018 تک کی تیس سال سالہ مدت ہے اور نتیجتاً شیخ الاسلام ڈاکٹر طاہر القادری صاحب کے نام سے چھپی ہوئی سیکڑوں کتابیں ہیں۔ 

آدمی کتنا بھی جھوٹا ہو، کبھی نہ کبھی کسی بہانے سچ زبان پر آ ہی جاتا ہے، منہاج القرآن کے تیار کردہ اس ویکی پیڈیا پیج پر بھی اس طرح کئی جگہ خواہی نخواہی سچ کی آمیزش ہو ہی گئی ہے، جس کے زیر و بم سے یہ اعتراف ہوتا ہے کہ ڈاکٹر طاہر القادری کی تصانیف میں مندرجہ بالا لوگوں کی محنتیں شامل ہیں۔ اب ذرا سچائی کو دبے لفظوں میں محسوس کیجیے ایک جگہ لکھا ہے:

تینوں حضرات خصوصاً ریاض حسین چودھری نے سیرۃ الرسول کے تاریخی پراجیکٹ پر حضرت شیخ الاسلام کی نگرانی میں نہایت جاں فشانی سے کام کیا۔(ایضا)

ایک جگہ "شعبہ تحقیق و تدوین” کے تعارف میں لکھا ہے:

اس شعبہ میں زیادہ تر منہاج یونیورسٹی لاہور کے کالج آف شریعہ اینڈ اسلامک اسٹڈیز (COSIS) کے فضلا علوم اسلامیہ میں تخصص کی بنا پرکل وقتی خدمات سرانجام دے رہے ہیں۔ (ایضا)

ایک جگہ یوں حقیقت نوک قلم پر آ گئی ہے:

منہاج یونیورسٹی کے فارغ التحصیل منہاجینز نے قائد تحریک کا دست و بازو بنتے ہوئے اس شعبہ میں شبانہ روز محنت کی۔ آج شعبہ تحقیق و تدوین کا خواتین و حضرات پر مشتمل مستعد ریسرچ اسٹاف حضرت شیخ الاسلام مدظلہ العالی کا عظیم انقلابی پیغام اعلی معیاری مطبوعات اور انٹرنیٹ کے ذریعے عام لوگوں تک پہنچانے کے لیے شب و روز پوری دل جمعی اور تن دہی سے مصروف عمل ہے۔ FMRi کے زیراہتمام شائع ہونے والی کتب میں تحقیق و تخریج کا معیار ملک بھر کے کسی بھی اشاعتی ادارے کے مقابلے میں معیاری، وقیع اور محققہ ہوتا ہے۔ اس شعبہ کی اعلی کارکردگی کی بدولت تحریک منہاج القرآن کی علمی خدمات کو ملک کے علمی حلقوں میں انتہائی قدر و منزلت کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے۔ (ایضا)

بلکہ حال یہ ہے کہ مردوں کے شانہ بشانہ شیخ الاسلام کی تصانیف کی تعداد بڑھانے کے لیے خدمت دین کے پاکیزہ جذبات کے ساتھ پردہ نشین عورتیں بھی اپنی صلاحیتوں کے مطابق یہ کام کرتی ہیں، دیکھیے:

منہاج یونیورسٹی لاہور کے کالج برائے خواتین کی فاضلات اور دیگر محققات بھی دینی جذبے اور پوری لگن سے اس شعبے میں شب و روز مصروف عمل ہیں۔ اس حوالے سے فریدہ سجاد، مصباح کبیر اور نازیہ عبدالستار و دیگر فاضلات خدمات سرانجام دے رہی ہیں۔ جب کہ رافعہ علی، آسیہ سیف قادری اور کوثر رشید بھی اس ٹیم کا حصہ رہی ہیں۔ خواتین اسکالرز کی کاوشوں سے حضرت شیخ الاسلام کی زیر نگرانی چند کتب بھی شائع ہو چکی ہیں۔

اسی پر بس نہیں بلکہ شیخ الاسلام کا استحصالی ذہن چوں کہ ایڈوانس کام کرتا ہے اس لیے تنخواہ یافتہ ملازمین کے علاوہ مذہب و مذہبیات کی راگ الاپنے والے شیخ الاسلام فاصلاتی طور پر بھی بڑے طبقے سے یہ کام لیتے ہیں اور نہ صرف پاکستان بلکہ دنیا بھر سے لوگ شیخ الاسلام کی تصانیف بڑھانے میں ان کی علمی ہوتی ہے:

” اس شعبہ میں مستقل بنیادوں پر کام کرنے والے محققین کے علاوہ فاصلاتی اسکالرز کو بھی welcome کیا جاتا ہے۔ وہ افراد جو اپنی مصروفیات کے باعث باقاعدگی سے انسٹی ٹیوٹ میں نہیں آسکتے وہ بھی اپنی تحقیقی خدمات کے ذریعے اس عظیم کام میں شرکت کی سعادت حاصل کرتے ہیں۔ ملک پاکستان سے باہر قیام پذیر افراد بھی اعزازی طور پر تحقیقی خدمات سرانجام دیتے رہتے ہیں۔ نیز منہاج یونیورسٹی کے کالج آف شریعہ کے اساتذہ کرام بھی اس شعبہ کے مختلف تحقیقی امور میں خدمات سرانجام دیتے رہتے ہیں، جن میں پروفیسر محمد نواز ظفر، مفتی عبدالقیوم خان ہزاروی، محمد الیاس اعظمی، ممتاز الحسن باروی، شبیر احمد جامی و دیگر شامل ہیں”۔ (ایضا) 

ان تمام سچی باتوں سے یہ حقیقت کھل کر سامنے آ گئی کہ شیخ الاسلام کی تصانیف میں 70 سے زیادہ آن ریکارڈ نام زد اسٹاف کے علاوہ ان کے مختلف اداروں کے ذمہ داران، دنیا بھر کے جذبہ دین رکھنے والے محققین و مترجمین اور حضرات و خواتین کی یکساں محنتیں شامل ہیں لیکن دنیا میں ان تمام لوگوں کی محنتیں جن کے نام کی ڈکار بنتی ہیں وہ ہیں مجدد رواں صدی، سفیر امن، شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہر القادری جو علمی سنجیدگی کا رونا روتے ہوئے بھی تمام تر علمی دیانتوں کو بالائے طاق رکھ کر مصنف اعظم بنے بیٹھے ہیں اور دنیا کا معیار دیکھیے کہ دنیا انھیں مصنف مان بھی رہی ہے۔ لیکن اس میں کوئی شک نہیں کہ آج کی دنیا بھلے انھیں مصنف اور ان کی کتابوں کو تصنیف سمجھے ، کل کا مؤرخ انھیں ضرور علمی خائن اور صدی کا سب سے بڑا سرقہ باز لکھنے پر مجبور ہوگا۔ 

اب ذرا یہ بھی دیکھیے دنیا بھر کے دوروں پر رہنے والے شیخ الاسلام کے پیچھے بے چارے زر خرید کس طرح دن رات خون پسینہ ایک کرتے ہیں۔ فرید ملت ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کاایک شعبہ ہے "ریسرچ ریویو کمیٹی”۔ اس کا تعارف دیکھیے اور سر دھنیے کہ ہم شیخ الاسلام کو جس وقت دہلی، حیدر آباد اور بمبئی میں لائیو سن رہے ہوتے ہیں، ٹھیک اسی وقت شیخ الاسلام لاہور کے ایک گوشے میں ایک ساتھ کئی کتابیں تصنیف کر رہے ہوتے ہیں:

"ان ممالک میں دعوتی و تنظیمی امور کی نگرانی کے لیے حضرت شیخ الاسلام وقتاً فوقتاً دورہ جات کرتے ہیں۔ نیز مختلف ممالک میں حکومتی و ذیلی سطحوں پر منعقد ہونے والی کانفرنسز اور سیمینارز میں بھی شرکت کرتے ہیں۔ لہٰذا حضرت شیخ الاسلام کی پاکستان میں عدم موجودگی کے دوران میں تحقیقی امور کی نگرانی کے لیے 2006ء میں ریسرچ ریویو کمیٹی کا قیام عمل میں لایا گیا۔ اس کمیٹی کے سربراہ ناظم اعلی تحریک منہاج القرآن ڈاکٹر رحیق احمد عباسی ہیں، جب کہ دیگر اراکین یہ ہیں: (1) ڈاکٹر طاہر حمید تنولی، (2) ڈاکٹر علی اکبر الازہری، (3) پروفیسر محمد نصر اللہ معینی، (4) ڈاکٹر ظہور اللہ الازہری، (5) محمد افضل قادری، (6)محمد فاروق رانا، (7) فیض اللہ بغدادی۔

ریسرچ ریویو کمیٹی کے ذمہ تمام اسکالرز سے ریسرچ پراجیکٹس کی رپورٹس لینا، انہیں ہدایات دینا اور ان کا فالو اپ کرنا ہوتا ہے۔ کمیٹی کی پندرہ روزہ میٹنگ منعقد ہوتی ہے، جس میں پراجیکٹس پر ہونے والی پیش رفت کا جائزہ لیا جاتا ہے۔ بعد ازاں کمیٹی کی سفارشات حضرت شیخ الاسلام کو بذریعہ ای میل ارسال کی جاتی ہیں جو ان کی توثیق کے بعد لاگو کر دی جاتی ہیں”۔ (ایضا)

شیخ الاسلام کی کرامت کہیے کہ ان کی تقریریں چند دنوں بعد تحریر بن جاتی ہیں، یہ کرامت جس مصدر سے صادر ہوتی ہے، اس کی شکل لاہور میں "مرکزی لائبریری” کی ہے۔لائبریری کا تعارف پڑھیے:

"لائبریری کے وسیع و عریض ہال، جہاں تشنگان علم کے لیے حضرت شیخ الاسلام کے لیکچرز، سیمینارز، اور دیگر پروگرام منعقد ہوتے رہتے ہیں”۔(ایضا)

ہم پہلے "فرید ملت ریسرچ انسٹی ٹیوٹ ” کے مقاصد میں پڑھ چکے ہیں: "قائد تحریک کے مختلف دینی، سماجی، اقتصادی، سیاسی و سائنسی، اور اخلاقی و روحانی موضوعات پر فکر انگیز ایمان افروز خطابات کو کتابی صورت میں مرتب کروانا۔”

ان دونوں کو ملائیے تو نتیجہ سامنے ہے: شیخ الاسلام کے ہزاروں خطبات امت کی ضرورت نہیں، بارہا تھونپے ہوئے بھی ہیں تاکہ جہاں خطبات کی تعداد میں قابل قدر اضافہ ہو، وہیں دھڑلے سے تصانیف بھی بڑھتی چلی جائیں۔ آخر شعبہ خطاطی اور کمپوزنگ میں بھی تو پیسے خرچ ہوتے ہیں۔ 

اور اب اس میں کوئی شبہ نہ رہ جائے کہ شیخ الاسلام کی تصانیف در اصل ان کی تقریریں ہیں اور تقریریں بھی ایسی جو انھیں ایک مخصوص شعبہ تیار کر کے دیتا ہے، "شعبہ نقل نویسی” کے نام سے تابوت کی یہ آخری کیل دیکھیے:

"حضرت شیخ الاسلام کے کم و بیش پانچ ہزار خطابات اور لیکچرز اسلام کے ہر موضوع جیسے قرآن و حدیث، سیرۃ الرسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم، فقہ و اصول فقہ، روحانیات، تصوف، عقائد، اخلاقیات، فلسفہ، فکریات، الٰہیات، سیاست (قومی و بین الاقوامی)، عمرانیات، معاشیات، ثقافت، میڈیکل سائنسز، حیاتیات، فلکیات، امبریالوجی اور پیراسائیکالوجی وغیرہ پر موجود ہیں، جوکہ ملک پاکستان اور بیرونی دنیا میں وقتاً فوقتاً دیے جاتے ہیں۔ یہ لیکچرز دنیا بھر میں منہاج القرآن کی لائبریریوں میں سمعی و بصری شکل میں موجود ہیں۔ انسٹی ٹیوٹ کے ناقل علامہ حافظ حکیم محمد یونس مجددی کی سربراہی میں شعبہ نقل نویسی اس علمی ذخیرے کو تحریری قالب میں ڈھالنے کا فریضہ سرانجام دیتا ہے۔ فوری حوالہ کے لیے لیکچرز کے اہم نکات و اقتباسات اخذ کیے جاتے ہیں۔ یہ شعبہ لیکچرز کو ترتیب و تدوین کے لیے تیار کرتا ہے، بعد ازاں شعبہ تحقیق و تدوین اپنے موضوعات کی تیاری میں ان نقل شدہ خطابات کو استعمال میں لاتا ہے”۔(ایضا)

امید ہے اگر کوئی انصاف پسند منہاجی اس شعبے کا یہ تعارف پڑھے گا اور اس کا دماغ اس کا ساتھ دے رہا ہوگا تو وہ ضرور اس فیصلے پر مجبور ہوگا کہ شیخ الاسلام کے ٹائٹل سے شائع ہونے والی کتابیں در اصل ان کے خطابات کی تحریری شکل ہیں جن کو کتابی اور پھر ادبی رنگ دینے کے لیے لاہور میں ایک زر خریدشعبہ رات دن اپنی صلاحیتیں کھپا رہا ہے۔ 

اب ذرا ایک اور مبارک شعبہ کا تعارف دیکھیے جس کا نام ہے ” شعبہ ادبیات”۔

"یہ شعبہ انسٹی ٹیوٹ میں ہونے والے تحقیقی کام کی ادبی حوالے سے نوک پلک درست کرتا ہے۔ انسٹی ٹیوٹ کے زیراہتمام شائع ہونے والی کتب کی عبارت آرائی اور لغوی درستگی اسی شعبہ کی ذمہ داری ہے۔ شعبہ ادبیات میں نامور نعت گو شاعر ریاض حسین چودھری کی ریٹائرمنٹ کے بعد معروف نعت گو شاعر و ادیب ضیاء اللہ نیر بطور انچارج شعبہ ذمے داری سر انجام دے رہے ہیں، جب کہ محمد وسیم الشحمی بھی اس شعبے میں اپنے جوہر دکھا رہے ہیں”۔(ایضا)

کتنا دل پذیر لفظ ہے ” ادبی حوالے سے نوک پلک درست کرنا "یعنی حال یہ ہے کہ شیخ الاسلام کی کتابوں میں کوئی رنگ چھوٹنا نہیں چاہیے، اپنے قاری کی نظر میں شیخ الاسلام جتنے بڑے محقق ہوں، اتنے ہی بڑے ادیب بھی ہوں، بھلے اس کے لیے مستقل ڈیپارٹمنٹ قائم کرنا پڑے۔ 

قارئین! اگر ایمانی رمق ہے تو دل پر ہاتھ رکھ کر بتائیں جو شخص اس قدر صلاحیتوں کا استحصال کرتا ہو اور آج سے نہیں بلکہ پچھلے تیس سالوں سے، اگر وہ سیکڑوں نہیں بلکہ ہزاروں کتابیں بھی مارکیٹ میں لا دے تو کیا کوئی کمال کی بات ہے؟ 

ایمان کی تو یہ ہے کہ فرید ملت ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے لیے جتنی بڑی ٹیم کام کر رہی ہے، اس تعداد کے تناظر میں دیکھا جائے تو ڈاکٹر طاہر القادری کی تصانیف کی تعداد ہنوز بہت کم ہے کیوں کہ جس ویکی پیڈیا پیج کی ہم بات کر رہے ہیں ، اس کے مطابق شیخ الاسلام کی تصانیف کی تعداد تین سو چالیس ہے۔ ہم مانتے ہیں کہ یہ تعداد دم بہ دم بڑھ رہی ہے لیکن بڑھتے ہوئے بھی سن 2018 کے اختتام تک ایک ہزار تک نہیں پہنچ سکی۔ کوئی تسلیم کرے یا نہ کرے یہ صلاحیتوں کے استحصال کی بے برکتی ہی کہی جائے گی کہ اتنی بڑی ٹیم کی محنت پر دن دہاڑے اپنا نام چسپاں کرنے والے شیخ الاسلام کی تصانیف کی تعداد تیس سالوں میں بھی سیکڑوں میں محدود ہیں۔ دیکھیے شیخ الاسلام کی اس چوری اور سینہ زوری کو کتنے خوب صورت لہجے میں پیش کیا گیا ہے: 

بحمد اﷲ تعالیٰ تمام شعبہ جات کے باہمی اشتراک اور تعاون سے اس وقت تک FMRi کے زیراہتمام قائد تحریک شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہر القادری کی مختلف موضوعات پر تین سو چالیس کتب تحقیق و تدوین کے مراحل سے گزر کر اردو، عربی اور انگریزی زبان میں منظر عام پر آچکی ہیں، جب کہ اردو کتب کے عربی، انگریزی و دیگر زبانوں میں تراجم کا کام بھی اس کے ساتھ ساتھ جاری ہے۔ علاوہ ازیں دنیا بھر میں پھیلے ہوئے تحریکی نیٹ ورک سے وابستہ کارکنان اپنی مقامی زبانوں میں بھی یہ کتب شائع کرانے میں مصروف ہیں۔(ایضا) 

اس موقع پر اس انسٹی ٹیوٹ کی ایک کرامت یہ بھی دیکھیے کہ جو انسٹی ٹیوٹ اپنے دعوے کے مطابق محققین کی تربیت کر رہا ہے، آج تک ان تربیت یافتہ محققین کی اپنی تصانیف کیوں نہیں نظر آتیں؟ کیا یہ اس بات کا ثبوت نہیں کہ ان کی تمام تر تربیتیں اور تحقیقات ڈاکٹر طاہر القادری کی تصانیف کے لیے ہیں اور انھی کے گرد گھوم رہی ہیں ورنہ اب تک ایسے تربیت یافتہ محققین کو عالمی محققین میں شمار ہونا چاہیے تھا لیکن ایسا کیسے ہو وہ بے چارے تو تیلی کے بیل کی طرح اپنی تمام علمی تحقیقات بلکہ صلاحیتیں بھی شیخ الاسلام کے ہاتھوں بیچ چکے ہیں۔ 

عجیب بات دیکھیے کہ فہرست میں درج چند لوگوں کی ان کے اپنے نام سے چھپی جو دو چند کتابیں ہیں بھی وہ شیخ الاسلام کی مدح سرائی میں قلابے ملانے والی ہیں یا پھر بالکل عام نوعیت کی جن کی کوئی علمی یا تحقیقی حیثیت نہ تسلیم کی جا سکے۔ 

پاکیزہ چوری کے چند اور رخ:۔

(ب) 70 سے زیادہ با صلاحیت افراد کی محنتیں 30 سال سے اپنے نام کرکے اپنی تصانیف کی تعداد بڑھانے کے علاوہ ڈاکٹر طاہر القادری کی تصانیف کا ایک اور سارقانہ رخ بھی ہے اور وہ ہے بے جا طوالت۔ ہوتا یہ ہے کہ ڈاکٹر صاحب کی تصانیف میں تکرار، غیر ضروری مباحث اور کاپی پیسٹ خوب ہوتا ہے ۔ اسی طرح ایک کتاب کو دوسری کتاب میں ضم کرنے کا کاروبار بھی یہاں دھڑلے سے ہوتا ہے جیسے بدعت پر ایک مستقل رسالہ موجود ہے، لیکن شیخ الاسلام کی کئی تصانیف میں ٹھیک بدعت کے وہی مباحث جوں کے توں کاپی پیسٹ ہوتے ہیں اور وہ بھی وہاں جہاں اتنی زیادہ بدعت کی تفصیل کی ضرورت نہیں ہوتی۔ اس کی تصدیق ہر وہ شخص کرے گا جس نے ڈاکٹر صاحب کی کتابوں کا تنقیدی مطالعہ کیا ہے۔ 

(ج)ڈاکٹر طاہر القادری کے نام سے منسوب خاصی کتابیں ایسی ہیں جو عربی کتابوں کا ترجمہ ہیں اور ڈاکٹر صاحب نے ترجمہ وغیرہ کو کاکچھ بھی ذکر کیے بنا اردو میں انھیں دھڑلے سے اپنی تصنیف بنا کر پیش کیا ہے۔محترم ارسلان اسمعی اپنے فیس بک پیج کے ذریعہ ایسی تصانیف کی نقاب کشائی کرتے رہتے ہیں، اس دعوے کی دلیل کے لیے ان کا پیج وزٹ کرنا چاہیے۔ 

(د)طاہری تصانیف میں بے جا ضخامت وہ نمایاں پہلو ہے جس کا منہاج القرآن کی مطبوعات کا مطالعہ کرنے والا ہر شخص کھلے دل سے اعتراف کرے گا۔ سب جانتے ہیں کہ بڑے حوالے کے بعد چھوٹی کتابوں کے حوالے کی ضرورت نہیں رہ جاتی لیکن ڈاکٹر طاہر القادری کی کتابوں میں کبھی کبھی ایسا لگتا ہے جیسے مکتبہ شاملہ میں نظر آنے والے بیشتر حوالوں کا زبر دستی انبار لگا دیا جاتا ہے مثال کے طور پر ” المنھاج السوی” سمیت منہاج القرآن سے شائع شدہ دیگر کتب حدیث دیکھی جا سکتی ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ڈاکٹر صاحب کی تصانیف میں کئی بار صفحات کے صفحات صرف حوالوں کی نذر ہو جاتے ہیں اور اس طرح صفحات کی تعداد اور کتاب کی ضخامت بڑھتی چلی جاتی ہے۔ 

(ھ) تضادات کی کثرت بھی ڈاکٹر طاہر القادری کی کتابوں کا ایسا پہلو ہے جسے دور سے پہچانا جا سکتا ہے۔ اور یہ بیماری ہر اس شخص کے بیانا ت یا تصانیف میں پائی جاتی ہے جس کے اندر سچائی کا عنصرکم ہو اور اسے اتفاق کہا جائے کہ ڈاکٹر صاحب کے اندر یہ عنصر کم ہے۔ 

اسی طرح تقریر و تحریر میں تضاد بھی ڈاکٹر صاحب کا وہ عیب ہے جسے ایک اندھا بھی پکڑ سکتا ہے۔ بہت ممکن ہے ایسا اس لیے ہو کہ بارہا ڈاکٹر صاحب کو خود نہیں معلوم ہوتا وہ اپنی کتاب میں کیا لکھ چکے ہیں کیوں کہ در اصل کتاب کسی اور نے لکھی ہوتی ہے۔ 

الغرض! ڈاکٹر طاہر القادری صاحب کی تصانیف میں جہاں کھلے عام سرقہ ہے، وہیں بے جا طوالت، تکرار مباحث، زبر دستی کتابوں کی ضخامت بڑھانے کی کوشش اور علمی تضادات وغیرہ جیسے دیگر علمی سقم بھی ہیں۔ اور سچ یہ ہے کہ ایسا شخص علمی طور پر خائن ہے جو کھلے بندوں دیانتوں کا خون کر رہا ہے اور پچھلے 30 سالوں سے غریب با صلاحیت افراد کی غربتوں کا چند ٹکوں کے بدلے استحصال کر رہا ہے۔ اگر ایسا شخص بھی مجدد اور شیخ الاسلام ہو سکتا ہے تو اس کا سیدھا سا مطلب ہے قیامت بالکل قریب ہو چکی ہے اور مذہبی فہم اتنا کم زور ہو چکا ہے کہ مذہب کے نام پر کسی کو بھی گم راہ کیا جا سکتا ہے۔اللہ تعالی خیر فرمائے۔

ڈاکٹر طاہر اور وقار ملت

ڈاکٹر طاہر اور وقار ملت

وقار ملت، حضرت علامہ مفتی محمد وقارالدین قادری رضوی علیہ الرحمہ کی بارگاہ میں سوال کیا گیا کہ ایک شخص نے خواب دیکھا جس میں حضور اکرم ﷺ نے اس سے فرمایا کہ تم اگر پاکستان میں میرے میزبان بن جاؤ تو مَیں پاکستان میں کچھ دنوں کے لیے رُک سکتا ہوں- اُس شخص نے ایک رسالے میں یہی خواب بیان کرتے ہوئے کہا کہ حضور ﷺ نے پاکستان میں مجھے اپنا مستقل میزبان مقرر کر دیا ہے- اس جملے پر کچھ لوگ اعتراض کرتے ہیں اور اِسے شان رسالت میں توہین بتاتے ہیں لہذا آپ سے درخواست ہے کہ شریعت کی روشنی میں فتوی صادر فرمائیں کہ کیا شخص مذکور کسی شرعی جرم کا مرتکب ہوا ہے یا نہیں؟

وقار ملت علیہ الرحمہ جواب میں لکھتے ہیں کہ طاہر القادری کا یہ خواب نواے وقت لاہور، تکبیر اور دیگر مختلف رسائل میں چھپا ہے- حقیقت یہ ہے کہ خواب انسان کے اختیار میں نہیں اور انسان خواب میں عجیب و غریب امور بھی دیکھتا ہے مگر کسی خواب کو اپنی فضیلت کے لیے چھاپنا اور بیان کرنا، یہ انسان کا اختیاری فعل ہے لہذا طاہر القادری کا خواب بیان کرتے ہوئے یہ کہنا کہ حضور ﷺ نے پاکستان میں مجھے اپنا مستقل میزبان مقرر کر دیا ہے اور واپسی کے ٹکٹ کا بھی مطالبہ کیا ہے اور بہت سی باتیں بیان کیں جن میں حضور ﷺ کے محتاج ہونے اور طاہر القادری سے مدد طلب کرنے اور ایک امتی کے مقابلے میں نبی ﷺ کی محتاجی کا اظہار ہوتا ہے لہذا یہ توہینِ نبی ﷺ ہے اور توہین کرنے والوں کی جو سزا ہے طاہر القادری اس سزا کا مستحق ہے-

(ملخصاً: وقار الفتاوی، ج1، ص324، 325)

وقار ملت علیہ الرحمہ سے دوسرے مقام پر سوال کیا گیا کہ پروفیسر طاہر القادری مسلک اہل سنت و جماعت سے تعلق رکھتے ہیں یا نہیں؟ اور ہمیں ان کے بارے میں کیا رائے رکھنی چاہیے؟ ان کے بارے میں ایک رسالے میں پڑھا ہے کہ یہ دیوبندیوں کے پیچھے نماز کو جائز سمجھتے ہیں اور ان سے جو اختلافات ہیں اسے فروعی گردانتے ہیں تو اس کا واضح مطلب ہے کہ یہ گستاخان رسول ﷺ کو کافر نہیں سمجھتے اور یہ کہ ان کے نزدیک احترام رسول ﷺ بھی فروعی مسئلہ ہے، تو کیا یہ شخص "مَن شك فی کفره و عذابه فقد کفر” (جو ان گستاخان رسول کے کفر اور عذاب میں شک کرے وہ کافر ہے) کے تحت آئے گا یا نہیں؟

آپ علیہ الرحمہ جواب میں لکھتے ہیں کہ پروفیسر طاہر القادری کا کہنا یہی ہے کہ یہ اختلافات فروعی ہیں- مورخہ 28 ستمبر 1987ء کے جنگ اخبار میں یہ خبر چھپی ہے کہ انھوں نے ہوٹل میں عورتوں سے خطاب کیا؛ ایک خاتون نے جب ان سے سوال کیا کہ جب اسلام اتحاد کا درس دیتا ہے تو پھر اتنے فرقے کیوں؟

اس پر پروفیسر طاہر القادری صاحب نے جواب دیا کہ تمام فرقوں کی بنیاد ایک ہے، صرف جدا جدا طریقہ ہے اس لیے اتحاد متاثر نہیں ہوتا اور انھوں نے اپنے انٹرویو میں پہلے بھی کہا تھا کہ ان کے یہاں دو مدرس دیوبندی اور ایک شیعہ ہے لہذا اسی سے اندازہ کر لیجیے کہ ان کے خیال میں اور "ندوہ” والوں کے خیال و اعتقاد میں کیا فرق ہے-

(وقار الفتاوی، ج1، ص325، 326)

وقار ملت علیہ الرحمہ سے ایک اور مقام پر سوال کیا گیا کہ زید کہتا ہے کہ ڈاکٹر طاہر القادری ایک سچے عاشق رسول ہیں اور اخلاص کے ساتھ دین کی خدمت کرنے والے ہیں- مجھے طاہر القادری کی اس بات (کہ دیوبندیوں کے پیچھے نماز جائز ہے) کے علاوہ تمام باتوں سے اتفاق ہے اور میں ان کے کاموں سے مطمئن ہوں اور انھیں بدمذہبوں کا چاہنے والا نہیں سمجھتا لہذا یہ ارشاد فرمائیں کہ:

(1) کیا زید کے پیچھے نماز پڑھنا درست ہے؟

(2) زید کے اور اہل سنت کے عقائد میں جو فرق ہے اسے واضح فرما دیں-

وقار ملت علیہ الرحمہ فرماتے ہیں کہ اس زمانے میں اسلام کا دعوی کرنے والے مختلف گروہ ہیں اور ہر ایک یہی دعوی کرتا ہے کہ میں عاشق رسول ہوں مگر کسی شخص کے اسٹیج پر (دیے گئے) بیانات سے اس کے عقائد کا پتا نہیں لگایا جا سکتا ہے- کسی شخص کے عقیدے اور مذہب کا پتا اس کی تحریروں سے چلتا ہے- طاہر القادری بہت زمانے سے اپنے مختلف انٹرویوز میں یہ کہتا رہا ہے کہ شیعہ، دیوبندی، غیر مقلد اور بریلوی چاروں مذاہب میں فروعی اختلافات ہیں! ان میں اصولی اختلاف نہیں-

اس کا مطلب یہ ہوا کہ حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالی عنھا پر تہمت لگانا، حضرت ابو بکر و عمر رضی اللہ تعالی عنھما کو خلیفۂ بر حق نہ جاننا، ان کی خلافت کا انکار کرنا، قرآن کریم کو بیاض عثمانی سمجھنا، یہ تمام باتیں پروفیسر صاحب کی نظر میں فروعی ہیں حالانکہ خلافت ابو بکر کے حق ہونے پر صحابۂ کرام کا اجماع ہے اور اجماع صحابہ کا منکر کافر ہے- حضرت عائشہ صدیقہ پر تہمت لگانے والا قرآن کا منکر ہے اور قرآن کو بیاض عثمانی کہنے والا بھی کافر ہے-

طاہر القادری نے اپنے اس عقیدے کی کھل کر تائید کر دی ہے- منہاج القرآن جو ان کا اپنا رسالہ ہے اس کے دسمبر 1990ء کے شمارے میں چھپا ہے:

موجودہ نازک حالات میں اہل تشیع کو کافر قرار دینے والے اور بھولے بھالے مسلمانوں میں اس کا پروپا گنڈا کرنے والے بعض خود پرست انتہا پسند مولوی صاحبان تو ہو سکتے ہیں اہل سنت و جماعت ہرگز نہیں ہو سکتے-

اس کے چند سطور بعد لکھا ہے:

اس حقیقت باہرہ اور برہان قاطعہ کے باوجود اہل تشیع کو بالمجموع کافر سمجھنا، کہنا یا قرار دینا مطلقاً باطل ہے، بالکل اسی نہج پر کوئی فرقہ یا کوئی فرد اہل سنت کو کافر سمجھے، کہے یا قرار دے وہ بھی قطعی طور پر باطل ہوگا-

در حقیقت حنفی، دیوبندی، بریلوی، شیعہ، مالکی، حنبلی، شافعی اور اہل حدیث سب کے سب مسلمان ہیں- ان فرقوں میں فروعی اختلافات تو بہر طور موجود ہیں مگر بنیادی اختلاف کوئی نہیں-

دیوبندیوں کی توہین نبی پر مشتمل وہ کتابیں جن پر علماے حرم، شام و مصر نے حکم تکفیر کیا اور یہ لکھا:

"مَن شك فی کفره و عذابه فقد کفر”

جو اس میں شک کرے وہ بھی کافر ہے (حسام الحرمين)

وہ کتابیں اب تک اسی طرح چھپ رہی ہیں- پروفیسر صاحب کہ نزدیک یہ بھی فروعی اختلافات ہیں-

ان چند مثالوں سے یہ ظاہر ہو گیا کہ پروفیسر صاحب کا ایک نیا مذہب ہے اور ان کے مذہب کے مطابق ان باطل فرقوں اور اہل سنت میں کوئی فرق نہیں ہے وہ سب کو مسلمان سمجھتے ہیں اور ان کے پیچھے نماز بھی جائز سمجھتے ہیں-

زید کا قول اگر ناواقفی کی بنا پر ہے تو اسے سمجھنا چاہیے اور ان کو عاشق رسول کے بجائے اسلام کا برباد کرنے والا کہنا چاہیے- اگر زید جان بوجھ کر ایسا کہتا ہے تو اس کا بھی وہی حکم ہے جو علماے حرمین نے بیان کیا ہے لہذا اس کی امامت باطل و ناجائز ہے- مسلمانوں کو اس سے اجتناب کرنا چاہیے-

(وقار الفتاوی، ج1، ص326 تا 328)

عبد مصطفی

چکڑالوی فرقہ (منکرین حدیث ) کے عقائد و نظریات

چکڑالوی فرقہ (منکرین حدیث ) کے عقائد و نظریات

منکرینِ حدیث کو چکڑالوی فرقہ اور پرویزی فرقہ بھی کہا جاتا ہے چکڑالوی اس لئے کہا جاتاہے کہ اس فرقے کا بانی عبداللہ چکڑالوی ہے ۔

چکڑالوی پہلے غیر مقلّد تھے }

سر سید احمد خان ،غیر مقلّد مولوی چراغ اور عبداللہ چکڑالوی ہم خیال تھے ان تینوں انسانوں نے اسلام میں تحریف کا سلسلہ شروع کیا اور اہلِ تجدّد اور اہل قرآن کے نام سے مو سوم ہونے لگے ۔ غلام احمد پرویز جس کی وجہ سے پر ویزی بھی کہا جاتا ہے پرویز بھی پہلے غیر مقلد تھا ۔

بحرالعلوم علامہ محمد زاہد الکوثری التُرکی فرماتے ہیں کہ تعجب ہے کہ بہت سے چکڑالوی یعنی حدیث کے نہ ماننے والے غیر مقلّد تھے پھر کوئی رافضی ہوگیا اور کوئی قادیانی ہوگیا ۔

(بحوالہ :ترجمہ :مولانا محمد شہاب الدین نوری )

سب سے پہلے عبداللہ چکڑالوی نے انکار حدیث کا فتنہ بر پاکیا مگر یہ فتنہ چند روز میں اپنی موت خود مر گیا ۔حافظ اسلم جیراج پوری نے دوبارہ اس فتنے کو ہوادی اور بجھی ہوئی آگ کو دوبارہ سلگا یا پھر اس کے غلام احمد پرویز بٹالوی نگراں’’ رسالہ طلوعِ اسلام ‘‘نے اس آتش کدہ کی تولیت قبول کرکے رسول دشمنی پر کمر باندھ لی ۔

منکرینِ حدیث (اپنے آپ کو اہلِ قرآن کہلانے والے )

منکرینِ حدیث فرقے کے چند باطل عقائد}

پرویزی فرقے کا پیشوا غلام احمد پرویز اپنے رسالے’’ طلوع اسلام ‘‘میں اپنے باطل نظر یا ت یوں لکھتا ہے ۔

1)…منکر ینِ حدیث ایک جدید اسلام کے بانی ہیں ۔

(بحوالہ :رسالہ طلوع اسلام ص 16،اگست ،ستمبر 1952؁ء )

2)…مرکز ملّت کو ان میں (جزیات نماز میں )تغیّر و تبدل کا حق ہوگا ۔

(بحوالہ :طلوع اسلام ص46ماہ جون 1950؁ء )

3)…میرا دعوٰی تو صرف اتنا ہے کہ فرض صرف دو نماز یں ہیں جن کے اوقات بھی دو ہیں باقی سب نوافل ۔(بحوالہ :طلوع اسلام ص 58ماہِ اگست 1950؁ء )

4)…پھر آج کل مسلمان دو نماز یں پڑھ کر کیوں مسلمان نہیں ہوسکتا ۔

(بحوالہ :لاہوری طلوعِ اسلام ص61، اگست 1950؁ء )

5)…روایات (احادیثِ نبویہ ﷺ)محض تاریخ ہے ۔(بحوالہ :طلوع اسلام ص49ماہِ جولائی 1950؁ء )

6)…پرویز کھتا ہے کہ رسول اللہ ﷺکی سنّت اور احادیث مبارکہ دین میں حجت نہیں ۔رسول اللہ ﷺ کے اقوال کو رواج دیکر جو دین میں حجّت ٹہرایا گیا ہے یہ دراصل قرآن مجید کی خلاف عجمی سازش ہے ۔

7)…حج ایک بین الملّی کانفرنس ہے اور حج کی قربانی کا مقصد بین الملّی کانفرنس میں شرکت کرنے والوں کیلئے خورد نوش کا سامان فراہم کرنا ہے ۔مکّہ معظمہ میں حج کی قربانی کے سوا اضحیہ (عید کی قربانی )

کا کوئی ثبوت نہیں ۔(معاذاللہ )(بحوالہ :رسالہ قربانی از ادارہ طلوع اسلام )

8)…بقرعید کی صبح بارہ بجے تک قوم کا کس قدر روپیہ نالیوں میں بہہ جاتا ہے ۔

(ادارہ طلوع اسلام ص 1ستمبر 1950؁ء )

9)…حدیث کا پورا سلسلہ ایک عجمی سازش تھی اور جس کو شریعت کہا جاتا ہے وہ بادشاہوں کی پیدا کردہ ہے ۔ (معاذاللہ )(بحوالہ :طلوع اسلام ص 17ماہِ اکتوبر1952؁ء )

قارئین !آپ نے منکرین حدیث جو اپنے آپکو اہلِ قرآن کہتے ہیں اُن کے باطل عقائد آپ نے ملاحظہ کئے دشمنانِ رسول ﷺکا مقصد صرف انکار حدیث نہیں بلکہ یہ لوگ درحقیقت اسلام کے سارے نظام کو مخدوش ہر حکم سے آزاد رہنا چاہتے ہیں نمازوں کے اوقات خمسہ ،تعدا درکعات ،

فرائض و واجبات کی تفصیل ،صوم و صلوٰۃ کے مفصّل احکام ،مناسک حج و قربانی ،ازدوا جی معاملات ان تمام امور کی تفصیل حدیث ہی سے ثابت ہے ۔

یہ اپنے آپ کو اہلِ قرآن کہتے ہیں آجکل ٹیلی ویثر ن پر’’ نجم شیراز گروپ‘‘ جو کہ ساری رات کلبوں میں بینڈ باجے بجاتے ہیں گانے گاتے ہیں اور دن میں قرآن کی تفسیر یں بیان کرتے ہیں اور کہتے پھرتے ہیں کہ حدیث کی کیا ضرورت صرف اور صرف قرآن کو تھام لو ان کی ایک ویب سائٹ بھی ہے جو الرحمٰن الرحیم ڈاٹ کام کے نام سے ہے اسکے ذریعہ بھی یہ قوم کو بر گشتہ کر رہے ہیں چہرے پر داڑھی ایسی جیسے داڑھی کا مذاق،جسم پر انگریزوں والا لباس پینٹ اور شرٹ ،ہاتھوں میں بینڈ باجے ،زبان پر گانا اور کہتے ہیں کہ ہم تو قرآن سکھائیں گے پہلے اپنا حلیہ تو بدلو پھر مقدّس قرآن کی بات کرنا ۔

یہ چکڑالوی بھی کہلاتے ہیں ،پرویزی بھی کہلاتے ہیں ،منکرین حدیث بھی کہلاتے ہیں ،نام نہاد اہلِ قرآن بھی کہلاتے ہیں ان کے وہی عقائد ہیں جو پیچھے بیا ن کیے گئے لہٰذا قوم اس زہر آلود فتنے سے بچے اور اپنا ایمان خراب نہ کرے ۔