یحیی بن سعید قطان

نام و نسب:۔ نام ، یحیی۔ کنیت ، ابو سعید۔ والد کا نام ، سعید بن فروخ ہے ۔ تیمی بصری ہیںاور قطان سے مشہور ہیں ۔

تعلیم و تربیت:۔ ابتدائی تعلیم کے بعد امام اعظم ابو حنیفہ کی خدمت میں حاضر ہوئے ،حدیث و فقہ کی تعلیم حاصل کی ، اور تدوین فقہ کی مجلس میں رکن رکین کی حیثیت کے حامل رہے،نقد رجال حدیث میں خوب نام کمایا اور مشہور نقادان رجال کے استاد ہوئے۔

آپ کے درس حدیث کا وقت عصر سے مغرب تک تھا، نماز عصر کے بعد منارہ مسجد سے تکیہ لگا کر بیٹھ جاتے اور سامنے امام احمد بن حنبل ، علی بن مدینی، یحیی بن معین ، اور عمرو بن خالد جیسے ا ئمہ فن کھڑے ہو کر درس حدیث لیتے ، مغرب تک نہ وہ کسی سے بیٹھنے کو کہتے اور نہکسی کی جرأت ہوتی۔

فن رجال میں سب سے پہلے انہوں نے لکھا، پھر انکے تلامذہ نے ، اور پھر انکے تلامذہ امام بخاری و امام مسلم و غیرہ نے قلم اٹھا یا۔

ائمہ حدیث کا قول ہے کہ جسکو یحیی قطان چھوڑ دینگے اسکو ہم بھی چھوڑ دیں گے۔ اس فضل و کمال کے با وجود ہمیشہ امام اعظم کی شاگردی پر فخر فرماتے ۔

امام احمد فرما تے ہیں :۔

میں نے یحیی بن سعید قطان کا مثل نہیں دیکھا۔

علی بن مدینی فرماتے ہیں :۔

فن رجال میں یحیی قطان جیسا میں نے کوئی نہ دیکھا،

بندار کہتے ہیں:۔

میں بیس سال تک آپکی خدمت میں آتا جاتا رہا، میں نے کبھی آپکو گناہ کرتےنہیں دیکھا۔۔

کثیر محدثین آپکی مدح و ستائش میں رطب اللسان ہیں اور آپکو ثقہ ، ثبت حجت، اور

مامون کہتے ہیں ۔

اساتذہ:۔ امام اعظم ابو حنیفہ ،سلیمان تیمی، حمید الطویل ، اسمعیل بن ابی خالد، عبید اللہ بن عمرو، ہشام بن عروہ ، بہز بن حکیم، امام مالک، امام اوزاعی، امام شعبہ، امام سفیان ثوری، عثمانبن غیاث، فضیل بن غزوان، قرہ بن خالد، وغیرہم۔

وصال:۔ اٹہتر (۷۸)برس کی عمر پاکر ۱۹۸ ھ میں وصال ہوا۔(تہذیب التہذیب۔انوار امام اعظم)