مالِ غنیمت اور لوٹ مار میں فرق

مالِ غنیمت اور لوٹ مار میں فرق

جب کوئی ملک کسی جنگ میں فتح حاصل کرتا ہے، تو جو مال حکومت کے ہاتھ آتا ہے (شریعت اس کو مالِ غنیمت کہتی ہے )اس پر خوشی منائی جاتی ہے، اور وہ بھی سرکاری سطح پر…اس کو لوٹ مار نہیں کہا جاتا……….

پہلے قرآن پڑھیے !

مال غنیمت کو اللہ اور اس کے رسول کا مال کہا گیا، اور اس کی تقسیم بھی اللہ اور اس کے رسول کے حکم کی پابند کر دی گئی………….

سورۃ الانفال : آیت 1

يَسْــــَٔـلُوْنَكَ عَنِ الْاَنْفَالِ ۭقُلِ الْاَنْفَالُ لِلّٰهِ وَالرَّسُوْلِ ۚ……

ترجمہ تبیان القرآن :

(اے رسولِ مکرم ! ) یہ آپ سے انفال (اموالِ غنیمت کے متعلق سوال کرتے ہیں، آپ کہیے کہ انفال (اموالِ غنیمت ) کا اللہ اور اس کا رسول مالک ہے….

اور پھر پاکستان کی تاریخ دیکھ لیجئے !

آ ج ہم بڑے فخر سے ستمبر 1965 ء کی جنگ کے واقعات اپنی نئی نسل کو سناتے ہیں، اور اپنی مسلح افواج کی بہادری کے کارناموں سے آگاہ کر تے ہیں۔ اور جنگ کے دوران میں قبضے میں لئے جانے والے دشمن کے ناکارہ’’ شرمن ‘‘ٹینک اور بھارتی ٹینک ’’فخرِ ہند‘‘ اور دشمن کے تباہ شُدہ ہوائی جہازوں کے بڑے بڑے حصے پاکستان کی چھاؤنیوں کے چوراہوں، اور چوکوں میں چبوتروں پر رکھے گئے ہیں…..

اور یہ کارنامہ سرانجام دینے والے درجنوں سپاہیوں کو ستارہ امتیاز، نشان حیدر سے نوازا گیا، کیا وہ سب مال

” لوٹ مار” ہے …..؟ نہیں نہیں

لوٹ مار کرنے والوں کو ” ستارہ امتیاز” یا "نشان حیدر” نہیں دیا جاتا……..

بلکہ ان کو جیلوں میں ٹھونس دیا جاتا ہے…..

اگر "مال غنیمت”، اور” لوٹ مار” کو ایک ہی مان لیں تو سارے چوروں کو آزاد کر دینا چاہیے……

اور جس حیدرکرار رضی اللہ تعالی عنہ کی وجہ سے” نشان حیدر” دے رہے ہو ان ہی پاکیزہ ہستیوں کو” لوٹ مار” کرنے والا کہتے ہو….

بات عجیب سی نہیں لگتی………………………

ہم ملک و ملت کے لیے کام کرنے والے کو "نشان حیدر” دیتے ہیں ہیں، مگر میرا رب صحابہ کرام کو بھی ” نشان امتیاز” دیتا ہے…

اور وہ بھی اپنی لاریب کتاب قرآن میں

رَضِیَ اللّٰہُ عَنۡہُمۡ وَ رَضُوۡا عَنۡہُ ؕ

اللہ تعا لٰی ان سے راضی ہوا اور یہ اس سے راضی ہوئے..

اور دوسری بات!

اگر کسی رائٹر، یا مصنف، نے غنیمت لوٹنے والا کہا ہے” لوٹ مار” کرنے والا اس نے بھی نہیں کہا……….

جس نے جو بھی لکھا لیکن "لوٹ مار” کسی ایک نے بھی نہیں لکھا صرف” لوٹ” مثبت معنوں میں بھی استعمال ہوتا ہے

مثال کے طور پر

آج تو آپ نے دل ہی” لوٹ” لیا….

آج بڑے مزے "لوٹ” رہے ہو ……..

فلاں کے نکاح پر ہم نے بھی چھوہارے "لوٹے” ……

تم نے تو آج محفل ہی "لوٹ” لی…….

عقل مند کے اشارہ کافی ہوتا ہے……..

محمد یعقوب نقشبندی اٹلی

جواب دیجئے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.