باغِ فدک پر حضرت سیّدنا صدیقِ اکبر رضی اللہ عنہ کا اجتہاد بہتر تھا

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

محترم قارئینِ کرام : استاذی المکرّم آلِ نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلّم اولادِ علی رضی اللہ عنہ غزالی زماں حضرت علامہ سیّد احمد سعید شاہ صاحب کاظمی رحمۃ اللہ علیہ اپنی کتاب ‘مشکلات الحدیث ‘ میں فرماتے ہیں کہ : باغ فدک کے معاملے میں سیدنا صدیق اکبر رضی اللہ عنہ کا اجتہاد سیدہ فاطمہ رضی اللہ عنہا کے اجتہاد سے بہتر تھا ۔ (مشکلات الحدیث مسلہ فَدَک صفحہ نمبر 207 مطبوعہ ورلڈ ویو پبلیشرز اردو بازار لاہور،چشتی)

اس سے واضح طور پر یہ سمجھ میں آیا کہ مسلہ فَدَک اجتہادی معاملہ تھا ۔ لہٰذا جو اس معاملے میں اجتہاد نہیں مانتے ان کی تردید غزالی زماں حضرت علامہ سیّد احمد سعید شاہ صاحب کاظمی رحمۃ اللہ علیہ کی زبانِ مبارک سے ہو گئی ۔ یاد رہے جب دو شخصیات کے درمیان اجتہاد ہوتا ہے تو اہل سنت کا نظریہ ہے کہ ایک شخص صواب پر ہوتا ہے اور ایک خطا (اجتہادی) پر ۔ دونوں کو صواب پر ماننا یہ معتزلہ کا نظریہ ہے ۔ لہٰذا مذکورہ حوالے سے اجتہاد ثابت ہوا اور جب اجتہاد ثابت ہو گیا تو ایک کا اجتہادی خطا پر ہونا لازم آئے گا ۔ اور اس اجتہادی خطا پر اجر ہے نہ کہ گناہ فافہم ۔ اور اس معاملے میں کون اجتہادی خطا پر ہے یہ مذکورہ عبارت کے اس جملے سے واضح ہے “سیدنا صدیق اکبر رضی اللہ عنہ کا اجتہاد , سیدہ طیّبہ فاطمۃ الزہرا رضی اللہ عنہا کے اجتہاد سے بہتر تھا ۔

درج ذیل چند سوالات کا علمی اور بحوالہ جواب درکار ہے

سوال نمبر 1 : کیا صحابہ کرام و اہلبیتِ اطہار رضی اللہ عنہم کو معصوم عنِ الخطا ہیں ؟ اگر معصوم عنِ الخطا ہیں تو دلائل سے واضح کریں ۔

سوال نمبر 2 : کیا خطائے اجتہادی صحابہ کرام و اہلبیتِ اطہار رضی اللہ عنہم سے ممکن نہیں ؟ عدم امکان پر دلائل پیش کریں ۔

سوال نمبر 3 : جو خطائے اجتہادی کی نسبت صحابہ کرام و اہلبیتِ اطہار رضی اللہ عنہم طرف کرے ، ان پر کیا حکم لگتا ہے ؟ ۔ دلیل سے واضح کریں ۔

سوال نمبر 4 : اگر آیت تطہیر سے عصمت ثابت ہے تو کیا خطائے اجتہادی ، عصمت کے متضاد ہے ؟ ۔ اگر متضاد ہے تو جن محدثین و مفسرین نے انبیائے کرام علیہم السّلام کی طرف یہ نسبت کی اب پر کیا حکم لگتا ہے ؟ ۔ جو کہ بالاتفاق معصوم ہیں ۔

سوال نمبر 5 : محفوظ عن الخطا کا یہ مطلب کہ ان سے خطا ہو ہی نہیں سکتی ۔

یہ دلائل سے ثابت کریں ؟

سوال نمبر 6 : کیا آج تک کس محدث و فقہی نے فتوی لگایا ؟ کہ اگر کسی نے صحابہ کرام و اہلبیتِ اطہار رضی اللہ عنہم میں کسی کی طرف کسی نے خطا ء اجتہادی کا وقوع کہا تو وہ گستاخ یا بے ادب ہو گیا ؟

سوال نمبر 7 : اگر لفظ خطا استعمال کیا گیا بے ادبی ، گستاخی وغیرہ ہے تو کیا یہ حکم صرف ایک مخصوص فرد کےلیے ہئ یا جس جس جس نے بھی استعمال کیا ان سب کے لیے ہے ؟

سوال نمبر 8 : آج تک جس جس نے بھی لفظ خطائے اجتہادی کتب میں یا تقریر میں استعمال کیا ان پر علمائے اہلسنت نے کہاں اور کیا فتوی لگایا ہے اس فتویٰ کو عوام کے سامنے لایا جائے ؟ ۔ تا کہ عوام کو مسلہ کی حقیقت معلوم ہو ۔

ان کا جواب دیں اگر دلائل سے ثابت نہ کر سکیں یہ باتیں تو ہم سمجھیں گے کہ آپ واقعی یتیم العلم اور حسد و بغض میں مبتلا ہیں اور آپ کا مقصد صرف و صرف افتراق و انتشار و تعصب اور فسادفی الارض ہے اور شیعیت کے تلوے چاٹنے کے علاوہ کچھ نہیں ۔