منکر حدیث عبداللہ چکڑالوی کے متعلق حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی پیشگوئی

برصغیر میں منکرینِ حدیث کا سربراہ اور قرآنی فرقے کا موجد عبداللہ چکڑالوی ہے۔ جو چکڑالہ ضلع میانوالی میں تقسیم ہند سے پہ کے پیدا ہوا۔ یہ حدیث رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا بالکلیہ انکار کرتا تھا۔اس فتنے کے بارے تاجدار کائنات صلی اللہ علیہ وسلم نے پہلے ہی پیشگوئی فرمادی تھی ۔

حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا مجھے کتاب دی گئی اور اس جیسی ایک اور چیز۔ قریب ھے کوئی پیٹ بھرا اپنے تکیے یا اپنے پلنگ پر ٹیک لگا کر کہے۔میرے اور تمھارے درمیان صرف یہ کتاب ھے۔ جو اس میں حلال ہے ہم حلال سمجھیں گے اور جو حرام ہے اسے حرام سمجھیں گے سن لو کہ وہ اسطرح نہیں ھے۔

( صحیح ابن حبان، جلد اول، صفحہ 153، ناشر پروگریسو بکس لاہور)

اس حدیث مبارکہ میں تین نشانیاں ایسی بیان کی گئی جس سے اس پیشگوئی کا مصداق عبداللہ چکڑالوی بنتا ھے۔

(1) حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ اس شخص کا پیٹ بھرا ہوگا۔

پیٹ بھرا ہوگا اس سے مراد دولت مندی ھے اور عبداللہ چکڑالوی کافی دولتمند تھا۔

(2) حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ وہ پلنگ پر ٹیک لگائی ہوے ہوگا۔

عبداللہ چکڑالوی دونوں ٹانگوں سے معذور تھا زیادہ تر چارپائی پر ٹیک لگا کر بیٹھتا تھا۔

(3) حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا اس شخص کا دعوے یہ ہوگا کہ جو کچھ قرآن میں حلال و حرام ہے ہم صرف اسے کو مانیں گے۔

عبداللہ چکڑالوی کا بھی یہی دعویٰ تھا کہ صرف قرآن حجت ھے اسی وجہ سے اس فرقے کو قرآنسٹ فرقہ بھی کہا جاتا ھے۔

اللہ سے دعا ھے کہ اللہ امت مسلمہ کو منکرین حدیث کے فتنے سے محفوظ فرمائے آمین

احمد رضا رضوی