چند محدثات عورتیں

🥀

فن اسماء الرجال میں ہمیشہ مرد محدثین کا تذکرہ کثرت سے سنتے ہیں بلکے ایسا لگتا ہے جیسا یہ علم مردوں کے ساتھ ہی مختص ہے فی زمانہ بھی جرح و تعدیل کے اس علم میں مرد ہی سامنے ہیں یہی وجہ ہے کہ عورتیں اس فن سے لگاؤ نہیں رکھتی ہیں گویا اس فن سے انکو دور دور تک گویا واسط ہی نہیں ہے

جبکے ہم اگر کتب کا مطالعہ کریں تو ایک فہرست محدثین عورتوں کی ہے اور بڑے بڑے ائمہ محدثین نے ان سے علم حدیث اخذ کیا اور انہوں نے بقاعدہ اپنی سند سے احادیث بیان فرمائی ہیں اور وہ علم حدیث میں اپنے زمانے میں یکتا تھیں میں ذیل میں چند ان عورتوں کے فقط نام ذکر کرتا ہوں

(1)حَبِيبَةُ بِنْتُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ إِبْرَاهِيمَ بْنِ أَحْمَدَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ إِسْمَاعِيلَ بْنِ مَنْصُورٍ الْمَقْدِسِيِّ، أُمُّ عَبْدِ الرَّحْمَنِ ابْنَةُ الزَّيْنِ.

(2)فَاطِمَةُ بِنْتُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ بْنِ عِوَضِ بْنِ رَاجِحِ بْنِ بِلالٍ الْمَقْدِسِيُّ، أُمُّ عَلِيٍّ الصَّالِحِيَّةُ.

(3)فَاطِمَةُ بِنْتُ أَبِي بَكْرِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ طَرْخَانَ بْنِ أَبِي الْحَسَنِ بْنِ رَدَّادٍ الدِّمَشْقِيِّ ثُمَّ الصَّالِحِيِّ، أُمُّ أَحْمَدَ بِنْتُ الشَّيْخِ زَيْنِ الدِّينِ

(4)فَاطِمَةُ بِنْتُ إِبْرَاهِيمَ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ ابْنِ الشَّيْخِ أَبِي عُمَرَ مُحَمَّدِ بْنِ أَحْمَدَ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ قُدَامَةَ الْمَقْدِسِيِّ الصَّالِحِيِّ، أُمُّ إِبْرَاهِيمَ بِنْتُ الشَّيْخِ عِزِّ الدِّينِ ابْنِ الْخَطِيبِ شَرَفِ الدِّينِ أَبِي بَكْرٍ.

(5)عَائِشَةُ بِنْتُ مُحَمَّدِ بْنِ مُسْلِمِ بْنِ سَلامَةَ بْنِ الْبَهَاءِ الْحَرَّانِيِّ، أُمُّ مُحَمَّدٍ الصَّالِحِيَّةُ أُخْتُ الْمُحَدِّثِ مَحَاسِنَ.

(6)ضَيْفَةُ بِنْتُ أَبِي بَكْرِ بْنِ حَمْزَةَ بْنِ مَحْفُوظٍ الصَّحْرَاوِيُّ، أُمُّ عَبْدِ الرَّحْمَنِ الصَّالِحِيَّةُ

(7)صَفِيَّةُ بِنْتُ أَحْمَدَ بْنِ أَحْمَدَ بْنِ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ أَحْمَدَ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ قُدَامَةَ الْمَقْدِسِيُّ، أُمُّ أَحْمَدَ بِنْتُ الشَّيْخِ شَرَفِ الدِّينِ أَبِي الْعَبَّاسِ وَهُوَ سِبْطُ الشَّيْخِ مُوَفَّقِ الدِّينِ ابْنِ قُدَامَةَ

(8)سَفَرَى بِنْتُ يَعْقُوبَ بْنِ إِسْمَاعِيلَ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ الدِّمَشْقِيَّةُ، أُمُّ مُحَمَّدٍ ابْنَةُ عِزِّ الدِّينِ ابْنِ شَرَفِ الدِّينِ ابْنِ الْقَاضِي جَمَالِ الدِّينِ، الْمَعْرُوفُ جَدُّهَا بِابْنِ قَاضِي الْيَمَنِ

(9)زَيْنَبُ بِنْتُ يَحْيَى بْنِ عَبْدِ الْعَزِيزِ بْنِ عَبْدِ السَّلامِ بْنِ أَبِي الْقَاسِمِ بْنِ الْحَسَنِ بْنِ محمد بن المهذب السلمي الدِّمَشْقِيُّ، أُمُّ عُمَرَ بِنْتُ الْخَطِيبِ بَدْرِ الدِّينِ أَبِي زَكَرِيَّا ابْنِ الشَّيْخِ الْعَلامَةِ عِزِّ الدِّينِ أَبِي مُحَمَّدٍ.

(10)زَيْنَبُ بِنْتُ إِسْمَاعِيلَ بْنِ إِبْرَاهِيمَ بْنِ سَالِمِ بْنِ سعد بن ركاب الأنصاري الدِّمَشْقِيَّةُ، أُمُّ عَبْدِ اللَّهِ وَأُمُّ مُحَمَّدٍ بِنْتُ الْمُحَدِّثِ نَجْمِ الدِّينِ ابْنِ الْخَبَّازِ

(11)زَهْرَةُ بِنْتُ الشَّيْخِ الْمُحَدِّثِ جَمَالِ الدِّينِ عُمَرَ بْنِ حُسَيْنِ بْنِ أَبِي بَكْرٍ الْخُتَنِيِّ الْحَنَفِيِّ

(12)زَيْنَبُ بِنْتُ أَحْمَدَ بْنِ عَبْدِ الرَّحِيمِ بْنِ عَبْدِ الْوَاحِدِ بْنِ أَحْمَدَ ابن عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ إِسْمَاعِيلَ بْنِ مَنْصُورٍ الْمَقْدِسِيُّ، أُمُّ عَبْدِ اللَّهِ

(13)زَاهِدَةُ بِنْتُ أَبِي بَكْرِ بْنِ حَمْزَةَ بْنِ مَحْفُوظٍ الصَّحْرَاوِيِّ، أُمُّ أَبِي بَكْرٍ الصَّالِحِيَّةُ

(14)آمِنَةُ بِنْتُ إِبْرَاهِيمَ بْنِ عَلِيِّ بْنِ أَحْمَدَ بْنِ فَضْلِ بْنِ الْوَاسِطِيِّ، أُمُّ مُحَمَّدٍ ابْنَةُ الإِمَامِ الزَّاهِدِ تَقِيِّ الدِّينِ أَبِي إِسْحَاقَ

(15)أسماء بنت محمد بن سالم بن الحسن بن هبة الله بن محفوظ بن صصري الربعي التغلبي، أم محمد ابنة عماد الدين ابن أمين الدين الدمشقية.

(16)أَسْمَاءُ بِنْتُ مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمِ بْنِ الْحَسَنِ بْنِ هِبَةِ اللَّهِ بْنِ مَحْفُوظِ بْنِ صَصَرَى الرَّبَعِيِّ التَّغْلِبِيِّ، أُمُّ مُحَمَّدٍ ابْنَةُ عماد الدين ابن أَمِينِ الدِّينِ الدِّمَشْقِيَّةُ.

(17)عَائِشَةُ بِنْتُ مُحَمَّدِ بْنِ مُسْلِمِ بْنِ سَلامَةَ بْنِ الْبَهَاءِ الْحَرَّانِيِّ، أُمُّ مُحَمَّدٍ الصَّالِحِيَّةُ أُخْتُ الْمُحَدِّثِ مَحَاسِنَ

امام تاج الدین سبکی رحمۃ اللہ علیہ انکی سند سے مروی حدیث کچھ یوں بیان کرتے ہیں

أَخْبَرَتْنَا الشَّيْخَةُ الصَّالِحَةُ الْمُسْنِدَةُ أُمُّ عَلِيٍّ فَاطِمَةُ بِنْتُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ بْنِ عِوَضِ الْمَقْدِسِيِّ إِجَازَةً وَالزَّاهِدُ الْعَابِدُ أَبُو عَبْدِ اللَّهِ مُحَمَّدُ بْنُ أَحْمَدَ بْنِ تَمَّامٍ الصَّالِحِيُّ سَمَاعًا، قَالَتْ فَاطِمَةُ: أَخْبَرَنَا خَطِيبُ مَرْدَا أَبُو عَبْدِ اللَّهِ مُحَمَّدُ بْنُ إِسْمَاعِيلَ بْنِ أَحْمَدَ بْنِ أَبِي الْفَتْحِ الْمَقْدِسِيُّ قِرَاءَةً عَلَيْهِ….۔الخ

(معجم الشيوخ للسبكي ص 610 دارالکتب العلمیة بيروت)

اسکے علاوہ بھی کثیر محدثین عورتوں کی فہرست موجود ہے اس فن میں محض مردوں کو نہیں عورتوں کو بھی آنا چاہیے اس فن کی چاشنی ہی الگ ہے

اللہ ان نیک صالحہ عورتوں کے صدقے ہمارے مغفرت فرمائے

✍🏻وقار رضا القادری