0510201703

پہلے وہابی کا موقف پیش کرتے ہیں

زبیر علی زئی شاگرد۔ ( ابو محمد خرم شہزاد 👇 کی تحقیق )

… ضعیف حدیث …

وہ شخص مومن نہیں جس کا ہمسایہ بھوکا ہو سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں ، میں نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا وہ شخص مومن نہیں جو شکم سیر ہو کر کھائے جبکہ اس کا قریبی ہمسایہ بھوکا ہو. ( الادب المفرد للبخاری : 112 ، المعجم الکبیر للطبرانی : 175/3 ، المستدرک الحاکم : 167/4 ، شعب الایمان للبیھقی : 3389 ، تاریخ بغداد للخطیب : 392/10 ،

(اسنادضعیف). درج بالا حدیث میں سفیان ثوری ” عن ” سے روایت کر رہا ہے اور یہ مدلس ہے کسی کتاب میں سماع کی صراحت نہیں ہے نیز دوسرا راوی عبداللہ بن المساور مجھول ہے ۔۔ لہٰذا حدیث ضعیف ہے اس حدیث کے تمام شواہد ضعیف ہیں.

امام سفیان ثوریؒ کو درج ذیل محدثین نے مدلس قرار دیا ہے. 

1- جرح و تعدیل کے امام یحییٰ بن معینؒ متوفی :200ھ:-

کہتے ہیں,سفیان امیر المومنین فی الحدیث ,۔ لم یکن احد اعلم بحدیث ابی اسحاق من الثوری وکان یدلس ولم احد اعلم بحدیث الا عمش من الثوری.

2- امام ابن حبانؒ متوفی 354ھ:-کہتے ہیں,واما المدلسون الذین ھم ثقات وعدول فانالا نحتبح با خبارھم الا ما بینو السماع فیما رووا مثل الثوری و اضرابھم من الا المتقنین ….

وہ مدلس راوی جو ثقہ اور عادل ہے ہم ان کی صرف ان مرویات سے ہی حجت پکڑتے ہیں جن میں وہ سماع کی تصریح کریں مثلاً سفیان ثوری وغیرہ جو کہ زبردست ثقہ امام تھے. 

3- امام یحییٰ بن سعید القطانؒ متوفی 198ھ :-کہتے ہیں,ما کتبت عن سفیان شینا الا قال حدثنی او حدثنا الا حدیثین ….

میں نے سفیان ثوری سے صرف وہ ہی لکھا ہے جس میں وہ حدثنی اور حدثنا کہتے ہیں. 

4- امیر المومنین فی الحدیث امام بخاریؒ متوفی 256ھ :۔کہتے ہیں,اعلم الناس بالثوری یحیی بن سعید الا نہ عرف صحیح حدیثہ من تدلیسہ. 

وغیرہ ۔

1۔ کتاب الجرح والتعدیل 211/4اسناد صحیح. 

2- صحیح ابن حبان 150/1.

3-کتاب 

العلل و معرفتہ الرجال 242/1,ت318,اسناد صحیح.

4-الکامل فی ضعفاء الرجال لا بن عدی 187/1,اسناد صحیح.

میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا کہ جو شخص میرے نام سے وہ بات بیان کرے جو میں نے نہیں کہی تو وہ اپنا ٹھکانا جہنم میں بنا لے۔ 

محمد بن ابو محمد خرم شہزاد 

یہ تحقیق الشیخ ابو محمد خرم شہزاد صاحب کی ہے.

وہابی زبیر کے شاگرد نے امام سفیان ثوری کو مطلق مدلس قرار دے کر اسکی عن والی روایت کو ضیعف کرنے کی کوشیش کی اور عبداللہ بن المساور کو مجھول کہا۔ 

۱۔ عبداللہ بن المساور کو مجھول کہنا صحیح نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

کیوں امام المزی نے اسکا تعارف میں یہ کہا ہے کہ اس نے عبد الله بْن عَبَّاس، عَبد اللَّهِ بْن الزُّبَيْر روایت کیا ۔ اور محدثین نے اسکو تابعی کہا ہے ۔ جب ایک راوی دو یا دو سے زیادہ سے روایت کرے تو معروف ہو جاتا ہے 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

۲۔ امام ابن حبان نے اپنی کتاب الثقات میں عبداللہ بن المساور کا زکر کیا ہے اور اس اسکا تین راویوں سے روایت کرنا لکھا ہے وہ کہتے ہیں :3767 – عَبْد اللَّه بن مساور يَرْوِي عَن بن عَبَّاس وابْن الزُّبَيْر روى عَنهُ عبد الْملك بن أبي بشر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سفیان ثوری کے مدلس کا جواب

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

: ’’تدلیس کے اعتبار سے محدثین نے رواۃ حدیث کے مختلف طبقات بنائے ہیں،بعض طبقات کی روایات کو صحت حدیث کے منافی جبکہ دوسرے بعض کی روایات کو مقبول قرار دیاہے۔امام سفیان بن سعید الثوری رحمہ اللہ کو محدثین کی ایک جماعت جن میں امام ابوسعید العلائی،علامہ ابن حجر،محدث ابن العجمی شامل ہیں، نے”طبقہ ثانیہ“ میں شمار کیا ہے۔(جامع التحصیل فی احکام المراسیل :ص۱۱۳؛ طبقات المدلسین :ص۶۴؛ التعلق الامین علی کتاب التبیین لاسماء المدلسین :ص۹۲؛ تسمیۃ مشایخ وذکرالمدلسین:ص۱۲۳؛ کتاب المدلسین الامام الحافظ ابی زرعۃاحمدبن عبدالرحیم بن العرابی:ص۶)​

سفیان ثوری طبقہ ثانیہ کا مدلس ہے تو اسکی عن والی روایت اسکی صیحت کے منافی نہیں ۔ امام ابن حجر عسقلانی نے اسکو طبقہ ثانیہ کا مدلس قرار دیا ہے ۔ اسی طراح امام بخاری و مسلم نے سیکڑوں احادیث سفیان ثوری سے عن کے ساتھ اپنی کتب صحین میں زکر کی وہابیہ کو چاہئے آج سے بخاری و مسلم کو بھی ضعیف کہنا شروع کر دیں۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خود زبیر علی زئی صاحب کے”شیخ“ بدیع الدین شاہ راشدی نے بھی امام سفیان ثوری رحمہ اللہ کو اول درجے کے مدلسین میں شمار کیا ہے۔ بدیع الدین شاہ راشدی صاحب لکھتے ہیں: ’’یہ کہ سفیان ثوری اول درجے کے مدلسین میں سے ہیں اور بقاعدہ محدثین ان کی تدلیس مقبول ہوگی اگرچہ سماع کی تصریح نہ کریں‘‘۔ (اہل حدیث کے امتیازی مسائل:ص۳۴)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اور محدثین نے اس بات کی تصریح کی ہے کہ طبقہ ثانیہ کے مدلس کی روایت مقبول ہے، اس کی تدلیس صحت حدیث کے منافی نہیں۔ (التدلیس والمدلسون للغوری: ص۱۰۴؛ جامع التحصیل فی احکام المراسیل: ص۱۱۳؛ روایات المدلسین للعواد الخلف :ص۳۲)​

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نیزعصر حاضر میں الدکتور العواد الخلف اور سید عبدالماجد الغوری نے بھی امام سفیان ثوری رحمہ اللہ کو مرتبہ/طبقہ ثانیہ میں شمار کیا ہے۔ (روایات المدلسین للعواد الخلف :ص۱۷۰؛التدلیس والمدلسون للغوری :ص۱۰۴؛ التدلیس والمدلسون،شیخ حمادانصاری)​

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

امام مسلمؒ نے خود اپنی صحیح میں سفیان ثوریؒ کی عن والی روایات شامل کی ہیں جو اس بات کی دلیل ہے کہ امام سفیان ثوریؒ کی تدلیس صحت کے منافی نہیں۔

(دعا گو۔ اسد فرحان)